تپِش سے میری، وقفِ کش مکش، ہر تارِ بستر ہے – میرزا اسد الله بیگ غالب

تپِش سے میری، وقفِ کش مکش، ہر تارِ بستر ہے تپِش سے میری، وقفِ کش مکش، ہر تارِ بستر ہے مِرا سر رنجِ بالیں ہے،…

Read More..

خطر ہے رشتۂ اُلفت رگِ گردن نہ ہو جائے – میرزا اسد الله بیگ غالب

خطر ہے رشتۂ اُلفت رگِ گردن نہ ہو جائے خطر ہے رشتۂ اُلفت رگِ گردن نہ ہو جائے غرورِ دوستی آفت ہے، تُو دُشمن نہ…

Read More..

زخم پر چھڑکیں کہاں طفلانِ بے پروا نمک – میرزا اسد الله بیگ غالب

زخم پر چھڑکیں کہاں طفلانِ بے پروا نمک زخم پر چھڑکیں کہاں طفلانِ بے پروا نمک کیا مزا ہوتا، اگر پتھر میں بھی ہوتا نمک…

Read More..

عشرتِ قطره ہے دریا میں فنا ہو جانا – میرزا اسد الله بیگ غالب

عشرتِ قطره ہے دریا میں فنا ہو جانا عشرتِ قطره ہے دریا میں فنا ہو جانا درد کا حد سے گزرنا ہے دوا ہو جانا…

Read More..

کی وفا ہم سے تو غیر اِس کو جفا کہتے ہیں – میرزا اسد الله بیگ غالب

کی وفا ہم سے تو غیر اِس کو جفا کہتے ہیں کی وفا ہم سے تو غیر اِس کو جفا کہتے ہیں ہوتی آئی ہے…

Read More..

مستی، بہ ذوقِ غفلتِ ساقی ہلاک ہے – میرزا اسد الله بیگ غالب

مستی، بہ ذوقِ غفلتِ ساقی ہلاک ہے مستی، بہ ذوقِ غفلتِ ساقی ہلاک ہے موجِ شراب یک مژہ خوابناک ہے جُز زخمِ تیغِ ناز، نہیں…

Read More..

ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے – میرزا اسد الله بیگ غالب

ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے تمہیں کہو کہ…

Read More..

یوں بعدِ ضبطِ اشک پھروں گرد یار کے – میرزا اسد الله بیگ غالب

یوں بعدِ ضبطِ اشک پھروں گرد یار کے یوں بعدِ ضبطِ اشک پھروں گرد یار کے پانی پیے کسو پہ کوئی جیسے وار کے سیماب…

Read More..

بساطِ عجز میں تھا ایک دل یک قطره خوں وه بھی – میرزا اسد الله بیگ غالب

بساطِ عجز میں تھا ایک دل یک قطره خوں وه بھی بساطِ عجز میں تھا ایک دل یک قطره خوں وه بھی سو رہتا ہے…

Read More..

جس بزم میں تو ناز سے گفتار میں آوے – میرزا اسد الله بیگ غالب

جس بزم میں تو ناز سے گفتار میں آوے جس بزم میں تو ناز سے گفتار میں آوے جاں کالبدِ صورتِ دیوار میں آوے سائے…

Read More..

دہر میں نقشِ وفا وجہ تسلی نہ ہوا – میرزا اسد الله بیگ غالب

دہر میں نقشِ وفا وجہ تسلی نہ ہوا دہر میں نقشِ وفا وجہ تسلی نہ ہوا ہے یہ وه لفظ کہ شرمندہ معنی نہ ہوا…

Read More..

شب کہ ذوقِ گفتگو سے تیری دل بیتاب تھا – میرزا اسد الله بیگ غالب

شب کہ ذوقِ گفتگو سے تیری دل بیتاب تھا شب کہ ذوقِ گفتگو سے تیری دل بیتاب تھا شوخئِ وحشت سے افسانہ فسونِ خواب تھا…

Read More..

غنچۂ ناشگفتہ کو دور سے مت دکھا، کہ یُوں – میرزا اسد الله بیگ غالب

غنچۂ ناشگفتہ کو دور سے مت دکھا، کہ یُوں غنچۂ ناشگفتہ کو دور سے مت دکھا، کہ یُوں بوسے کو پُوچھتا ہوں مَیں، منہ سےمجھے…

Read More..

گلشن میں بند وبست بہ رنگِ دگر ہے آج – میرزا اسد الله بیگ غالب

گلشن میں بند وبست بہ رنگِ دگر ہے آج گلشن میں بند وبست بہ رنگِ دگر ہے آج قمری کا طوق حلقۂ بیرونِ در ہے…

Read More..

میں ہوں مشتاقِ جفا، مجھ پہ جفا اور سہی – میرزا اسد الله بیگ غالب

میں ہوں مشتاقِ جفا، مجھ پہ جفا اور سہی میں ہوں مشتاقِ جفا، مجھ پہ جفا اور سہی تم ہو بیداد سے خوش، اس سے…

Read More..

ہوں میں بھی تماشائیِ نیرنگِ تمنا – میرزا اسد الله بیگ غالب

ہوں میں بھی تماشائیِ نیرنگِ تمنا ہوں میں بھی تماشائیِ نیرنگِ تمنا مطلب نہیں کچھ اس سے کہ مطلب ہی بر آوے

Read More..

آمدِ سیلابِ طوفانِ صدائے آب ہے – میرزا اسد الله بیگ غالب

آمدِ سیلابِ طوفانِ صدائے آب ہے آمدِ سیلابِ طوفانِ صدائے آب ہے نقشِ پا جو کان میں رکھتا ہے انگلی جاده سے بزم مے وحشت…

Read More..

بیمِ رقیب سے نہیں کرتے وداعِ ہوش – میرزا اسد الله بیگ غالب

بیمِ رقیب سے نہیں کرتے وداعِ ہوش بیمِ رقیب سے نہیں کرتے وداعِ ہوش مجبور یاں تلک ہوئے اے اختیار، حیف! جلتا ہے دل کہ…

Read More..

چشمِ خوباں خامشی میں بھی نوا پرداز ہے – میرزا اسد الله بیگ غالب

چشمِ خوباں خامشی میں بھی نوا پرداز ہے چشمِ خوباں خامشی میں بھی نوا پرداز ہے سرمہ تو کہوے کہ دودِ شعلہ آواز ہے پیکرِ…

Read More..

ذکر اس پری وش کا، اور پھر بیاں اپنا – میرزا اسد الله بیگ غالب

ذکر اس پری وش کا، اور پھر بیاں اپنا ذکر اس پری وش کا، اور پھر بیاں اپنا بن گیا رقیب آخر۔ تھا جو رازداں…

Read More..

صفائے حیرت آئینہ ہے سامانِ زنگ آخر – میرزا اسد الله بیگ غالب

صفائے حیرت آئینہ ہے سامانِ زنگ آخر صفائے حیرت آئینہ ہے سامانِ زنگ آخر تغیر ” آبِ برجا مانده” کا پاتا ہے رنگ آخر نہ…

Read More..

کس کا جنونِ دید تمنّا شکار تھا؟ – میرزا اسد الله بیگ غالب

کس کا جنونِ دید تمنّا شکار تھا؟ کس کا جنونِ دید تمنّا شکار تھا؟ آئینہ خانہ وادئِ جوہر غبار تھا کس کا خیال آئینۂ انتظار…

Read More..

لطفِ نظّارہ قاتِل دمِ بسمل آئے – میرزا اسد الله بیگ غالب

لطفِ نظّارہ قاتِل دمِ بسمل آئے لطفِ نظّارہ قاتِل دمِ بسمل آئے جان جائے تو بلا سے، پہ کہیں دِل آئے ان کو کیا علم…

Read More..

نہ تھا کچھ تو خدا تھا، کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا – میرزا اسد الله بیگ غالب

نہ تھا کچھ تو خدا تھا، کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا نہ تھا کچھ تو خدا تھا، کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا ڈُبویا…

Read More..

واں پہنچ کر جو غش آتا پئے ہم ہے ہم کو – میرزا اسد الله بیگ غالب

واں پہنچ کر جو غش آتا پئے ہم ہے ہم کو واں پہنچ کر جو غش آتا پئے ہم ہے ہم کو صد ره آہنگِ…

Read More..

ابنِ مریم ہوا کرے کوئی – میرزا اسد الله بیگ غالب

ابنِ مریم ہوا کرے کوئی ابنِ مریم ہوا کرے کوئی میرے دکھ کی دوا کرے کوئی شرع و آئین پر مدار سہی ایسے قاتل کا…

Read More..

تجھ سے مقابلے کی کسے تاب ہے ولے – میرزا اسد الله بیگ غالب

تجھ سے مقابلے کی کسے تاب ہے ولے تجھ سے مقابلے کی کسے تاب ہے ولے میرا لہو بھی خوب ہے تیری حنا کے بعد

Read More..

خموشی میں تماشا ادا نکلتی ہے – میرزا اسد الله بیگ غالب

خموشی میں تماشا ادا نکلتی ہے خموشی میں تماشا ادا نکلتی ہے نگاه دل سے تری سُرمہ سا نکلتی ہے فشارِ تنگئ خلوت سے بنتی…

Read More..

زمانہ سخت کم آزار ہے، بہ جانِ اسدؔ – میرزا اسد الله بیگ غالب

زمانہ سخت کم آزار ہے، بہ جانِ اسدؔ زمانہ سخت کم آزار ہے، بہ جانِ اسدؔ وگرنہ ہم تو توقعّ زیاده رکھتے ہیں

Read More..

عشق تاثیر سے نومید نہیں – میرزا اسد الله بیگ غالب

عشق تاثیر سے نومید نہیں عشق تاثیر سے نومید نہیں جاں سپاری شجرِ بید نہیں سلطنت دست بَدَ ست آئی ہے جامِ مے خاتمِ جمشید…

Read More..

کیا تنگ ہم ستم زدگاں کا جہان ہے – میرزا اسد الله بیگ غالب

کیا تنگ ہم ستم زدگاں کا جہان ہے کیا تنگ ہم ستم زدگاں کا جہان ہے جس میں کہ ایک بیضۂ مور آسمان ہے ہے…

Read More..

معزولئ تپش ہوئی افرازِ انتظار – میرزا اسد الله بیگ غالب

معزولئ تپش ہوئی افرازِ انتظار معزولئ تپش ہوئی افرازِ انتظار چشمِ کشوده حلقۂ بیرونِ در ہے آج

Read More..

ہم پر جفا سے ترکِ وفا کا گماں نہیں – میرزا اسد الله بیگ غالب

ہم پر جفا سے ترکِ وفا کا گماں نہیں ہم پر جفا سے ترکِ وفا کا گماں نہیں اِک چھیڑ ہے وگرنہ مراد امتحاں نہیں…

Read More..

بس کہ فعّالِ ما یرید ہے آج – میرزا اسد الله بیگ غالب

بس کہ فعّالِ ما یرید ہے آج بس کہ فعّالِ ما یرید ہے آج ہر سلحشور انگلستاں کا گھر سے بازار میں نکلتے ہوئے زہره…

Read More..

بسکہ حیرت سے زپا افتادہ زنہار ہے – میرزا اسد الله بیگ غالب

بسکہ حیرت سے زپا افتادہ زنہار ہے بسکہ حیرت سے زپا افتادہ زنہار ہے ناخنِ انگشت تبخالِ لبِ بیمار ہے زلف سے شب درمیاں دادن…

Read More..

جس جا نسیم شانہ کشِ زلفِ یار ہے – میرزا اسد الله بیگ غالب

جس جا نسیم شانہ کشِ زلفِ یار ہے جس جا نسیم شانہ کشِ زلفِ یار ہے نافہ دماغِ آہوئے دشتِ تتار ہے کس کا سرا…

Read More..

دھمکی میں مر گیا، جو نہ بابِ نبرد تھا – میرزا اسد الله بیگ غالب

دھمکی میں مر گیا، جو نہ بابِ نبرد تھا دھمکی میں مر گیا، جو نہ بابِ نبرد تھا “عشقِ نبرد پیشہ” طلبگارِ مرد تھا تھا…

Read More..

شب کہ ذوقِ گفتگو سے تیرے، دل بے تاب تھا – میرزا اسد الله بیگ غالب

شب کہ ذوقِ گفتگو سے تیرے، دل بے تاب تھا شب کہ ذوقِ گفتگو سے تیرے، دل بے تاب تھا شوخئِ وحشت سے افسانہ فسونِ…

Read More..

غیر لیں محفل میں بوسے جام کے – میرزا اسد الله بیگ غالب

غیر لیں محفل میں بوسے جام کے غیر لیں محفل میں بوسے جام کے ہم رہیں یوں تشنہ لب پیغام کے خستگی کا تم سے…

Read More..

گھر میں تھا کیا کہ ترا غم اسے غارت کرتا – میرزا اسد الله بیگ غالب

گھر میں تھا کیا کہ ترا غم اسے غارت کرتا گھر میں تھا کیا کہ ترا غم اسے غارت کرتا وه جو رکھتے تھے ہم…

Read More..

نالہ جُز حسنِ طلب، اے ستم ایجاد نہیں – میرزا اسد الله بیگ غالب

نالہ جُز حسنِ طلب، اے ستم ایجاد نہیں نالہ جُز حسنِ طلب، اے ستم ایجاد نہیں ہے تقاضائے جفا، شکوہ بیداد نہیں عشق و مزدوریِ…

Read More..

ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا – میرزا اسد الله بیگ غالب

ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا آپ آتے تھے، مگر کوئی عناں گیر بھی تھا…

Read More..

آمدِ خط سے ہوا ہے سرد جو بازارِ دوست – میرزا اسد الله بیگ غالب

آمدِ خط سے ہوا ہے سرد جو بازارِ دوست آمدِ خط سے ہوا ہے سرد جو بازارِ دوست دودِ شمعِ کشتہ تھا شاید خطِ رخسارِ…

Read More..

پا بہ دامن ہو رہا ہوں بسکہ میں صحرا نورد – میرزا اسد الله بیگ غالب

پا بہ دامن ہو رہا ہوں بسکہ میں صحرا نورد پا بہ دامن ہو رہا ہوں بسکہ میں صحرا نورد خارِ پا ہیں جوہرِ آئینۂ…

Read More..

حاصل سے ہاتھ دھو بیٹھ اے آرزو خرامی – میرزا اسد الله بیگ غالب

حاصل سے ہاتھ دھو بیٹھ اے آرزو خرامی حاصل سے ہاتھ دھو بیٹھ اے آرزو خرامی دل جوشِ گریہ میں ہے ڈوبی ہوئی اسامی اس…

Read More..

ذکر میرا بہ بدی بھی، اُسے منظور نہیں – میرزا اسد الله بیگ غالب

ذکر میرا بہ بدی بھی، اُسے منظور نہیں ذکر میرا بہ بدی بھی، اُسے منظور نہیں غیر کی بات بگڑ جائے تو کچھ دُور نہیں…

Read More..

صد جلوه رو بہ رو ہے جو مژگاں اٹھائیے – میرزا اسد الله بیگ غالب

صد جلوه رو بہ رو ہے جو مژگاں اٹھائیے صد جلوه رو بہ رو ہے جو مژگاں اٹھائیے طاقت کہاں کہ دید کا احساں اٹھائیے…

Read More..

کسی کو دے کے دل کوئی نوا سنجِ فغاں کیوں ہو – میرزا اسد الله بیگ غالب

کسی کو دے کے دل کوئی نوا سنجِ فغاں کیوں ہو کسی کو دے کے دل کوئی نوا سنجِ فغاں کیوں ہو نہ ہو جب…

Read More..

لو ہم مریضِ عشق کے بیماردار ہیں – میرزا اسد الله بیگ غالب

لو ہم مریضِ عشق کے بیماردار ہیں لو ہم مریضِ عشق کے بیماردار ہیں اچھاّ اگر نہ ہو تو مسیحا کا کیا علاج!

Read More..

نہ حیرت چشمِ ساقی کی، نہ صحبت دورِ ساغر کی – میرزا اسد الله بیگ غالب

نہ حیرت چشمِ ساقی کی، نہ صحبت دورِ ساغر کی نہ حیرت چشمِ ساقی کی، نہ صحبت دورِ ساغر کی مری محفل میں غالبؔ گردشِ…

Read More..

وسعتِ سعیِ کرم دیکھ کہ سر تا سرِ خاک – میرزا اسد الله بیگ غالب

وسعتِ سعیِ کرم دیکھ کہ سر تا سرِ خاک وسعتِ سعیِ کرم دیکھ کہ سر تا سرِ خاک گزرے ہے آبلہ پا ابرِ گہربار ہنوز…

Read More..

اپنا احوالِ دلِ زار کہوں یا نہ کہوں – میرزا اسد الله بیگ غالب

اپنا احوالِ دلِ زار کہوں یا نہ کہوں اپنا احوالِ دلِ زار کہوں یا نہ کہوں ہے حیا مانعِ اظہار۔ کہوں یا نہ کہوں نہیں…

Read More..

تسکیں کو ہم نہ روئیں جو ذوقِ نظر ملے – میرزا اسد الله بیگ غالب

تسکیں کو ہم نہ روئیں جو ذوقِ نظر ملے تسکیں کو ہم نہ روئیں جو ذوقِ نظر ملے حورانِ خلد میں تری صورت مگر ملے…

Read More..

خود پرستی سے رہے باہم دِگر نا آشنا – میرزا اسد الله بیگ غالب

خود پرستی سے رہے باہم دِگر نا آشنا خود پرستی سے رہے باہم دِگر نا آشنا بے کسی میری شریکِ آئینہ تیرا آشنا آتشِ موئے…

Read More..

زندانِ تحّمل ہیں مہمانِ تغافل ہیں – میرزا اسد الله بیگ غالب

زندانِ تحّمل ہیں مہمانِ تغافل ہیں زندانِ تحّمل ہیں مہمانِ تغافل ہیں بے فائده یاروں کو فرقِ غم و شادی ہے

Read More..

عشق سے طبیعت نے زیست کا مزا پایا – میرزا اسد الله بیگ غالب

عشق سے طبیعت نے زیست کا مزا پایا عشق سے طبیعت نے زیست کا مزا پایا درد کی دوا پائی، درد بے دوا پایا غنچہ…

Read More..

کیوں جل گیا نہ، تابِ رخِ یار دیکھ کر – میرزا اسد الله بیگ غالب

کیوں جل گیا نہ، تابِ رخِ یار دیکھ کر کیوں جل گیا نہ، تابِ رخِ یار دیکھ کر جلتا ہوں اپنی طاقتِ دیدار دیکھ کر…

Read More..

ملتی ہے خُوئے یار سے نار التہاب میں – میرزا اسد الله بیگ غالب

ملتی ہے خُوئے یار سے نار التہاب میں ملتی ہے خُوئے یار سے نار التہاب میں کافر ہوں گر نہ ملتی ہو راحت عزاب میں…

Read More..

ہر قدم دورئِ منزل ہے نمایاں مجھ سے – میرزا اسد الله بیگ غالب

ہر قدم دورئِ منزل ہے نمایاں مجھ سے ہر قدم دورئِ منزل ہے نمایاں مجھ سے میری رفتار سے بھاگے ہے، بیاباں مجھ سے درسِ…

Read More..

بزمِ شاہنشاه میں اشعار کا دفتر کھلا – میرزا اسد الله بیگ غالب

بزمِ شاہنشاه میں اشعار کا دفتر کھلا بزمِ شاہنشاه میں اشعار کا دفتر کھلا رکھیو یارب یہ درِ گنجینۂ گوہر کھلا شب ہوئی، پھر انجمِ…

Read More..