حسنِ بے پروا گرفتارِ خود آرائ نہ ہو – میرزا اسد الله بیگ غالب

حسنِ بے پروا گرفتارِ خود آرائ نہ ہو حسنِ بے پروا گرفتارِ خود آرائ نہ ہو گر کمیں گاهِ نظر میں دل تماشائ نہ ہو…

Read More..

ہم زباں آیا نظر فکرِ سخن میں تو مجھے – میرزا اسد الله بیگ غالب

ہم زباں آیا نظر فکرِ سخن میں تو مجھے ہم زباں آیا نظر فکرِ سخن میں تو مجھے مردمک ہے طوطئِ آئینۂ زانو مجھے یادِ…

Read More..

کس کی برقِ شوخئ رفتار کا دلداده ہے – میرزا اسد الله بیگ غالب

کس کی برقِ شوخئ رفتار کا دلداده ہے کس کی برقِ شوخئ رفتار کا دلداده ہے ذرّه ذرّه اس جہاں کا اضطراب آماده ہے ہے…

Read More..

بسکہ ہیں بدمستِ بشکن بشکنِ میخانہ ہم – میرزا اسد الله بیگ غالب

بسکہ ہیں بدمستِ بشکن بشکنِ میخانہ ہم بسکہ ہیں بدمستِ بشکن بشکنِ میخانہ ہم موئے شیشہ کو سمجھتے ہیں خطِ پیمانہ ہم غم نہیں ہوتا…

Read More..

یونہی افزائشِ وحشت کےجو ساماں ہوں گے – میرزا اسد الله بیگ غالب

یونہی افزائشِ وحشت کےجو ساماں ہوں گے یونہی افزائشِ وحشت کےجو ساماں ہوں گے دل کے سب زخم بھی ہم شکلِ گریباں ہوں گے وجہِ…

Read More..

ضبط سے مطلب بجز وارستگی دیگر نہیں – میرزا اسد الله بیگ غالب

ضبط سے مطلب بجز وارستگی دیگر نہیں ضبط سے مطلب بجز وارستگی دیگر نہیں دامنِ تمثال آبِ آئنہ سے تر نہیں ہوتے ہیں بے قدر…

Read More..

بسکہ حیرت سے زپا افتادہ زنہار ہے – میرزا اسد الله بیگ غالب

بسکہ حیرت سے زپا افتادہ زنہار ہے بسکہ حیرت سے زپا افتادہ زنہار ہے ناخنِ انگشت تبخالِ لبِ بیمار ہے زلف سے شب درمیاں دادن…

Read More..

ہم سے خوبانِ جہاں پہلو تہی کرتے رہے – میرزا اسد الله بیگ غالب

ہم سے خوبانِ جہاں پہلو تہی کرتے رہے ہم سے خوبانِ جہاں پہلو تہی کرتے رہے ہم ہمیشہ مشقِ از خود رفتگی کرتے رہے کثرت…

Read More..

کرم ہی کچھ سببِ لطف و التفات نہیں – میرزا اسد الله بیگ غالب

کرم ہی کچھ سببِ لطف و التفات نہیں کرم ہی کچھ سببِ لطف و التفات نہیں انہیں ہنساکے رلانا بھی کوئ بات نہیں کہاں سے…

Read More..

بدتر از ویرانہ ہے فصلِ خزاں میں صحنِ باغ – میرزا اسد الله بیگ غالب

بدتر از ویرانہ ہے فصلِ خزاں میں صحنِ باغ بدتر از ویرانہ ہے فصلِ خزاں میں صحنِ باغ خانۂ بلبل بغیر از خندہ گل بے…

Read More..

وفا جفا کی طلب گار ہوتی آئ ہے – میرزا اسد الله بیگ غالب

وفا جفا کی طلب گار ہوتی آئ ہے وفا جفا کی طلب گار ہوتی آئ ہے ازل کے دن سے یہ اے یار ہوتی آئ…

Read More..

صاف ہے ازبسکہ عکسِ گل سے گلزارِ چمن – میرزا اسد الله بیگ غالب

صاف ہے ازبسکہ عکسِ گل سے گلزارِ چمن صاف ہے ازبسکہ عکسِ گل سے گلزارِ چمن جانشینِ جوہرِ آئینہ ہے خارِ چمن ہے نزاکت بس…

Read More..

آفت آہنگ ہے کچھ نالۂ بلبل ورنہ – میرزا اسد الله بیگ غالب

آفت آہنگ ہے کچھ نالۂ بلبل ورنہ آفت آہنگ ہے کچھ نالۂ بلبل ورنہ پھول ہنس ہنس کے گلستاں میں فنا ہوجاتا کاش ناقدر نہ…

Read More..

وضعِ نیرنگئ آفاق نے مارا ہم کو – میرزا اسد الله بیگ غالب

وضعِ نیرنگئ آفاق نے مارا ہم کو وضعِ نیرنگئ آفاق نے مارا ہم کو ہوگئے سب ستم و جَور گوارا ہم کو دشتِ وحشت میں…

Read More..

سکوت و خامشی اظہارِ حالِ بے زبانی ہے – میرزا اسد الله بیگ غالب

سکوت و خامشی اظہارِ حالِ بے زبانی ہے سکوت و خامشی اظہارِ حالِ بے زبانی ہے کمینِ درد میں پوشیده رازِ شادمانی ہے عیاں ہیں…

Read More..

اس جور و جفا پر بھی بدظن نہیں ہم تجھ سے – میرزا اسد الله بیگ غالب

اس جور و جفا پر بھی بدظن نہیں ہم تجھ سے اس جور و جفا پر بھی بدظن نہیں ہم تجھ سے کیا طرفہ تمنّا…

Read More..

یوں بعدِ ضبطِ اشک پھروں گرد یار کے – میرزا اسد الله بیگ غالب

یوں بعدِ ضبطِ اشک پھروں گرد یار کے یوں بعدِ ضبطِ اشک پھروں گرد یار کے پانی پیے کسو پہ کوئی جیسے وار کے سیاب…

Read More..

دعوئِ عشقِ بتاں سے بہ گلستاں گل و صبح – میرزا اسد الله بیگ غالب

دعوئِ عشقِ بتاں سے بہ گلستاں گل و صبح دعوئِ عشقِ بتاں سے بہ گلستاں گل و صبح ہیں رقیبانہ بہم دست و گریباں گل…

Read More..

بتائیں ہم تمہارے عارض و کاکُل کو کیا سمجھے – میرزا اسد الله بیگ غالب

بتائیں ہم تمہارے عارض و کاکُل کو کیا سمجھے بتائیں ہم تمہارے عارض و کاکُل کو کیا سمجھے اِسے ہم سانپ سمجھے اور اُسے من…

Read More..

نہ پوچھ حال اس انداز اس عتاب کے ساتھ – میرزا اسد الله بیگ غالب

نہ پوچھ حال اس انداز اس عتاب کے ساتھ نہ پوچھ حال اس انداز اس عتاب کے ساتھ لبوں پہ جان بھی آجائے گی جواب…

Read More..

درد ہو دل میں تو دوا کیجے – میرزا اسد الله بیگ غالب

درد ہو دل میں تو دوا کیجے درد ہو دل میں تو دوا کیجے دل ہی جب درد ہو تو کیا کیجے ہم کو فریاد…

Read More..

نیم رنگی جلوه ہے بزمِ تجلی رازِ دوست – میرزا اسد الله بیگ غالب

نیم رنگی جلوه ہے بزمِ تجلی رازِ دوست نیم رنگی جلوه ہے بزمِ تجلی رازِ دوست دودِ شمع کشتہ تھا شاید خطِ رخسارِ دوست چشم…

Read More..

خود جاں دے کے روح کو آزاد کیجئے – میرزا اسد الله بیگ غالب

خود جاں دے کے روح کو آزاد کیجئے خود جاں دے کے روح کو آزاد کیجئے تاکے خیالِ خاطرِ جلّاد کیجئے بھولے ہوئے جو غم…

Read More..

نسیمِ صبح جب کنعاں میں بوئے پیرَہن لائ – میرزا اسد الله بیگ غالب

نسیمِ صبح جب کنعاں میں بوئے پیرَہن لائ نسیمِ صبح جب کنعاں میں بوئے پیرَہن لائ پئے یعقوب ساتھ اپنے نویدِ جان و تن لائ…

Read More..

خزینہ دارِ محبت ہوئ ہوائے چمن – میرزا اسد الله بیگ غالب

خزینہ دارِ محبت ہوئ ہوائے چمن خزینہ دارِ محبت ہوئ ہوائے چمن بنائے خندہ عشرت ہے بر بِنائے چمن بہ ہرزه سنجئ گلچیں نہ کھا…

Read More..

نمائش پرده دارِ طرز بیدادِ تغافل ہے – میرزا اسد الله بیگ غالب

نمائش پرده دارِ طرز بیدادِ تغافل ہے نمائش پرده دارِ طرز بیدادِ تغافل ہے تسلّی جانِ بلبل کے لئے خندیدنِ گل ہے نمودِ عالَمِ اسباب…

Read More..

جوں شمع ہم اک سوختہ سامانِ وفا ہیں – میرزا اسد الله بیگ غالب

جوں شمع ہم اک سوختہ سامانِ وفا ہیں جوں شمع ہم اک سوختہ سامانِ وفا ہیں اُور اس کے سواکچھ نہیں معلوم کہ کیا ہیں…

Read More..

نالے دل کھول کے دو چار کروں یا نہ کروں – میرزا اسد الله بیگ غالب

نالے دل کھول کے دو چار کروں یا نہ کروں نالے دل کھول کے دو چار کروں یا نہ کروں یہ بھی اے چرخِ ستمگار!…

Read More..