علامه اقبال برای جوانان

ترانۂ ملّی – علامه محمد اقبال

ترانۂ ملّی – علامه محمد اقبال

ترانۂ ملّی The Anthem of the Islamic Community چِین و عرب ہمارا، ہندوستاں ہمارا China and Arabia are ours; India is ours. مسلم ہیں ہم، وطن ہے سارا جہاں ہمارا We are Muslims, the whole world is ours. توحید کی امانت سینوں میں ہے ہمارے God’s unity is held in trust in our breasts. آساں نہیں مٹانا نام و ... »

ترانۂ ہندی – علامه محمد اقبال

ترانۂ ہندی – علامه محمد اقبال

ترانۂ ہندی The Indian Anthem سارے جہاں سے اچھّا ہندوستاں ہمارا The best land in the world is our India; ہم بُلبلیں ہیں اس کی، یہ گُلِستاں ہمارا We are its nightingales; this is our garden. غربت میں ہوں اگر ہم، رہتا ہے دل وطن میں If we are in exile, our heart resides in our homeland. سمجھو وہیں ہمیں ... »

مجنوں نے شہر چھوڑا تو صحرا بھی چھوڑ دے – علامه محمد اقبال

مجنوں نے شہر چھوڑا تو صحرا بھی چھوڑ دے – علامه محمد اقبال

مجنوں نے شہر چھوڑا تو صحرا بھی چھوڑ دے Majnun abandoned habitation, you should abandon wilderness also نظّارے کی ہوس ہو تو لیلیٰ بھی چھوڑ دے If there be ambition for Sight, you should abandon Layla also واعظ! کمالِ ترک سے مِلتی ہے یاں مراد O preacher! Perfection of abandonment attains the objective ... »

لینن – علامه محمد اقبال

لینن – علامه محمد اقبال

لینن Lenin(خدا کے حضور میں) (Before God) اے انفُس و آفاق میں پیدا ترے آیات All space and all that breathes bear witness; truth حق یہ ہے کہ ہے زندہ و پائندہ تِری ذات It is indeed; Thou art, and dost remain. میں کیسے سمجھتا کہ تو ہے یا کہ نہیں ہے How could I know that God was or was not, ہر دم متغّیر ... »

حضورِ رسالت مآبؐ میں – علامه محمد اقبال

حضورِ رسالت مآبؐ میں – علامه محمد اقبال

حضورِ رسالت مآبؐ میں Before the Prophet’s Throne گراں جو مجھ پہ یہ ہنگامۂ زمانہ ہُوا Sick of this world and all this world’s tumult جہاں سے باندھ کے رختِ سفر روانہ ہُوا I who had lived fettered to dawn and sunset, قیودِ شام و سحَر میں بسر تو کی لیکن Yet never fathomed the planet’s hoary laws, نظامِ ... »

جاوید کے نام – علامه محمد اقبال

جاوید کے نام – علامه محمد اقبال

جاوید کے نام To Javid(لندن میں اُس کے ہاتھ کا لِکھّا ہُوا پہلا خط آنے پر) (On receiving his first letter in London) دیارِ عشق میں اپنا مقام پیدا کر Build in love’s empire your hearth and your home; نیا زمانہ، نئے صبح و شام پیدا کر Build Time anew, a new dawn, a new eve! خدا اگر دل فطرت شناس دے تجھ ک... »

محبّت – علامه محمد اقبال

محبّت – علامه محمد اقبال

محبّت Love عروسِ شب کی زُلفیں تھیں ابھی ناآشنا خَم سے As yet the tresses of the bride of night were not familiar with their graceful curls; ستارے آسماں کے بے خبر تھے لذّتِ رم سے And the stars of heaven had tasted not the bliss of whistling motion through the depths of space. قمر اپنے لباسِ نَو میں ب... »

وِصال – علامه محمد اقبال

وِصال – علامه محمد اقبال

وِصال The Union جُستجو جس گُل کی تڑپاتی تھی اے بُلبل مجھے O Nightingale! The rose whose search made me flounced خوبیِ قسمت سے آخر مِل گیا وہ گُل مجھے By dint of good luck that rose I have finally found خود تڑپتا تھا، چمن والوں کو تڑپاتا تھا میں I used to flounce myself, I used to make others flounce... »

شمع – علامه محمد اقبال

شمع – علامه محمد اقبال

شمع The Candle بزمِ جہاں میں مَیں بھی ہُوں اے شمع! دردمند O Candle! I am also an afflicted person in the world assembly فریاد در گرہ صفَتِ دانۂ سپند Constant complaint is my lot in the manner of the rue دی عشق نے حرارتِ سوزِ درُوں تجھے Love gave the warmth of internal pathos to you اور گُل فروشِ اشک... »

خطاب بہ جوانانِ اسلام – علامه محمد اقبال

خطاب بہ جوانانِ اسلام – علامه محمد اقبال

خطاب بہ جوانانِ اسلام Address to the Muslim Youth کبھی اے نوجواں مسلم! تدبّر بھی کِیا تُو نے Have ever you pondered, O Muslim youth, on deep and serious things? وہ کیا گردُوں تھا تُو جس کا ہے اک ٹُوٹا ہوا تارا What is this world in which this you is only a broken star? تجھے اس قوم نے پالا ہے آغوشِ م... »

پَروانہ اور جُگنو – علامه محمد اقبال

پَروانہ اور جُگنو – علامه محمد اقبال

پَروانہ اور جُگنو The Moth and the Fireflyپروانہ The Moth پروانے کی منزل سے بہت دُور ہے جُگنو The firefly is so far removed From the status of the moth! کیوں آتشِ بے سوز پہ مغرور ہے جُگنو Why is it so proud Of a fire that cannot burn?جُگنو The Firefly اللہ کا سَو شکر کہ پروانہ نہیں مَیں God be thank... »

غزلیات – علامه محمد اقبال

غزلیات – علامه محمد اقبال

غزلیات Ghazals٭ * گُلزارِ ہست و بود نہ بیگانہ وار دیکھ Do not look at the garden of existence like a stranger ہے دیکھنے کی چیز اسے بار بار دیکھ It is a thing worth looking at, look at it repeatedly آیا ہے تُو جہاں میں مثالِ شرار دیکھ You have come into the world like a spark, beware دَم دے نہ جائے ہ... »

شیکسپیئر – علامه محمد اقبال

شیکسپیئر – علامه محمد اقبال

شیکسپیئر Shakespeare شفَقِ صبح کو دریا کا خرام آئینہ The flowing river mirrors the red glow of dawn, نغمۂ شام کو خاموشیِ شام آئینہ The quiet of the evening mirrors the evening song, برگِ گُل آئنۂ عارضِ زیبائے بہار The rose‑leaf mirrors spring’s beautiful cheek; شاہدِ مے کے لیے حجلۂ جام آئینہ The cha... »

جنگِ یرموک کا ایک واقعہ – علامه محمد اقبال

جنگِ یرموک کا ایک واقعہ – علامه محمد اقبال

جنگِ یرموک کا ایک واقعہ An Incident of the Battle of Yarmuk صف بستہ تھے عرب کے جوانانِ تیغ بند The armed Arab youth were arrayed for battle تھی منتظر حِنا کی عروسِ زمینِ شام The bride of Syria’s land was waiting for myrtle اک نوجوان صُورتِ سیماب مُضطرب A young man who was restless like mercury آ کر ... »

کنارِ راوی – علامه محمد اقبال

کنارِ راوی – علامه محمد اقبال

کنارِ راوی On the Bank of the Ravi سکُوتِ شام میں محوِ سرود ہے راوی Raft in its music, in evening’s hush, the Ravi; نہ پُوچھ مجھ سے جو ہے کیفیت مرے دل کی But how it is with this heart, do not ask— پیام سجدے کا یہ زیروبم ہُوا مجھ کو Hearing in these soft cadences a prayer-call, جہاں تمام سوادِ حرم ہُ... »

فاطمہ بنت عبداللہ – علامه محمد اقبال

فاطمہ بنت عبداللہ – علامه محمد اقبال

فاطمہ بنت عبداللہ Fatima Bint ‘Abdullahعرب لڑکی جو طرابلس کی جنگ میں غازیوں کو پانی پِلاتی ہوئی شہید ہُوئی An Arab Girl who was martyred while Serving Water to the Fighters against Infidels in the Battle of Tripoli۱۹۱۲ء (1912) فاطمہ! تُو آبرُوئے اُمّتِ مرحوم ہے Fatima, you are the pride of the Commu... »

ذوق و شوق – علامه محمد اقبال

ذوق و شوق – علامه محمد اقبال

ذوق و شوق Ecstasy(ان اشعار میں سے اکثر فلسطین میں لِکھّے گئے) (Most of these verses were written in Palestine) ’دریغ آمدم زاں ہمہ بوستاں I could not go to my friends empty-handed تہی دست رفتن سوئے دوستاں‘ From an orchard! قلب و نظر کی زندگی دشت میں صُبح کا سماں Life to passion and ecstasy—sunrise in... »

وطنیّت – علامه محمد اقبال

وطنیّت – علامه محمد اقبال

وطنیّت Patriotism(یعنی وطن بحیثیّت ایک سیاسی تصوّر کے) As a Political Concept اس دور میں مے اور ہے، جام اور ہے جم اور In this age the wine, the cup, even Jam is different ساقی نے بِنا کی روِشِ لُطف و ستم اور The cup-bearer started different ways of grace and tyranny مسلم نے بھی تعمیر کِیا اپنا حرم ا... »

مارچ ۱۹۰۷ء – علامه محمد اقبال

مارچ ۱۹۰۷ء – علامه محمد اقبال

مارچ ۱۹۰۷ء March, 1907 زمانہ آیا ہے بے حجابی کا، عام دیدارِ یار ہو گا Time has come for openness, Beloved’s Sight will be common سکُوت تھا پردہ دار جس کا، وہ راز اب آشکار ہوگا The secret which silence had concealed, will be unveiled now گزر گیا اب وہ دَور ساقی کہ چھُپ کے پیتے تھے پینے والے O Cup‑bea... »

طلبۂ علی گڑھ کالج کے نام – علامه محمد اقبال

طلبۂ علی گڑھ کالج کے نام – علامه محمد اقبال

طلبۂ علی گڑھ کالج کے نام Addressed To the Students of Aligarh College اَوروں کا ہے پیام اور، میرا پیام اور ہے The message of others is different, my message is different عشق کے درد مند کا طرزِ کلام اور ہے The style of address of the one afflicted with Love is different طائرِ زیرِ دام کے نالے تو سُن ... »

بسم اللہ الرحمن الرحیم – علامه محمد اقبال

بسم اللہ الرحمن الرحیم – علامه محمد اقبال

بسم اللہ الرحمن الرحیم In the name of Allah, the Most Gracious and the Most Mercifulدُعا A Prayer(مسجدِ قُرطُبہ میں لِکھّی گئی) (Written in the Mosque of Cordoba) ہے یہی میری نماز، ہے یہی میرا وضو My invocations are sincere and true, میری نواؤں میں ہے میرے جگر کا لہُو They form my ablutions and pray... »

ہندوستانی بچوں کا قومی گیت – علامه محمد اقبال

ہندوستانی بچوں کا قومی گیت – علامه محمد اقبال

ہندوستانی بچوں کا قومی گیت The National Anthem For the Indian Children چشتیؒ نے جس زمیں میں پیغامِ حق سُنایا The land in which Chishti delivered the message of God نانک نے جس چمن میں وحدت کا گیت گایا The garden in which Nanak sang the song of Tawhid of God تاتاریوں نے جس کو اپنا وطن بنایا The land w... »

محبت – علامه محمد اقبال

محبت – علامه محمد اقبال

محبت Love شہیدِ محبّت نہ کافر نہ غازی The martyrs of Love are not Muslim nor Paynim, محبّت کی رسمیں نہ تُرکی نہ تازی The manners of Love are not Arab nor Turk! وہ کچھ اور شے ہے، محبّت نہیں ہے Some passion far other than Love was the power سِکھاتی ہے جو غزنوی کو ایازی That taught Ghazni’s high ruler ... »

تصویرِ درد – علامه محمد اقبال

تصویرِ درد – علامه محمد اقبال

تصویرِ درد The Portrait of Anguish نہیں منّت کشِ تابِ شنیدن داستاں میری My story is not indebted to the patience of being heard خموشی گفتگو ہے، بے زبانی ہے زباں میری My silence is my talk, my speechlessness is my speech یہ دستورِ زباں بندی ہے کیسا تیری محفل میں Why does this custom of silencing exis... »

پیوستہ رہ شجر سے، امیدِ بہار رکھ! – علامه محمد اقبال

پیوستہ رہ شجر سے، امیدِ بہار رکھ! – علامه محمد اقبال

پیوستہ رہ شجر سے، امیدِ بہار رکھ! Remain Attached To the Tree Keep Spring’s Expectation ڈالی گئی جو فصلِ خزاں میں شَجر سے ٹُوٹ The branch of the tree which got separated in autumn مُمکن نہیں ہری ہو سحابِ بہار سے Is not possible to green up with the cloud of spring ہے لازوال عہدِ خزاں اُس کے واسطے Th... »

والدہ مرحومہ کی یاد میں – علامه محمد اقبال

والدہ مرحومہ کی یاد میں – علامه محمد اقبال

والدہ مرحومہ کی یاد میں In Memory of My Late Mother ذرّہ ذرّہ دہر کا زندانیِ تقدیر ہے Every atom of creation is a prisoner of fate; پردۂ مجبوری و بےچارگی تدبیر ہے Contrivance is the veil of constraint and helplessness. آسماں مجبور ہے، شمس و قمر مجبور ہیں The sky is compelled; the sun and the moon ar... »

طارق کی دُعا – علامه محمد اقبال

طارق کی دُعا – علامه محمد اقبال

طارق کی دُعا Tariq’s Prayer(اندلس کے میدانِ جنگ میں) (In the Battlefield of Andalusia) یہ غازی، یہ تیرے پُر اسرار بندے These warriors, victorious, these worshippers of Thine, جنھیں تُو نے بخشا ہے ذوقِ خدائی Whom Thou hast granted the will to win power in Thy name; دونیم ان کی ٹھوکر سے صحرا و دریا Wh... »

حُسن و عشق – علامه محمد اقبال

حُسن و عشق – علامه محمد اقبال

حُسن و عشق The Beauty and the Love جس طرح ڈُوبتی ہے کشتیِ سیمینِ قمر Just as the moon’s silver boat is drowned نورِ خورشید کے طوفان میں ہنگامِ سحَر In the storm of sun’s light at the break of dawn جیسے ہو جاتا ہے گُم نور کا لے کر آنچل Just as the moon-like lotus disappears چاندنی رات میں مہتاب کا ہم... »

نصیحت – علامه محمد اقبال

نصیحت – علامه محمد اقبال

نصیحت Counsel بچۂ شاہیں سے کہتا تھا عقابِ سالخورد An eagle full of years to a young hawk said— اے ترے شہپر پہ آساں رفعتِ چرخِ بریں Easy your royal wings through high heaven spread: ہے شباب اپنے لہُو کی آگ میں جلنے کا نام To burn in the fire of our own veins is youth! سخت کوشی سے ہے تلخِ زندگانی انگب... »

صِدّیقؓ – علامه محمد اقبال

صِدّیقؓ – علامه محمد اقبال

صِدّیقؓ Abu Bakr The Truthful اک دن رسُولِ پاکؐ نے اصحابؓ سے کہا One day the Holy Prophet said to his Companions, دیں مال راہِ حق میں جو ہوں تم میں مالدار ‘The rich among you should give in the way of God’. ارشاد سُن کے فرطِ طرب سے عمَرؓ اُٹھے On hearing that command, an overjoyed ‘Umar stood up; اُ... »

ستارہ کاپیغام – علامه محمد اقبال

ستارہ کاپیغام – علامه محمد اقبال

ستارہ کاپیغام The Star’s Message مجھے ڈرا نہیں سکتی فضا کی تاریکی I fear not the darkness of the night; مِری سرشت میں ہے پاکی و دُرخشانی My nature is bred in purity and light; تُو اے مسافرِ شب! خود چراغ بن اپنا Wayfarer of the night! Be a lamp to thyself; کر اپنی رات کو داغِ جگر سے نُورانی With thy ... »

ایک نوجوان کے نام – علامه محمد اقبال

ایک نوجوان کے نام – علامه محمد اقبال

ایک نوجوان کے نام To a Young Man ترے صوفے ہیں افرنگی، ترے قالیں ہیں ایرانیِ Thy sofas are from Europe, thy carpets from Iran; لہُو مجھ کو رُلاتی ہے جوانوں کی تن آسانی This slothful opulence evokes my sigh of pity. امارت کیا، شکوہِ خسروی بھی ہو تو کیا حاصل In vain if thou possessest Khusroe’s imperia... »

فرشتوں کا گیت – علامه محمد اقبال

فرشتوں کا گیت – علامه محمد اقبال

فرشتوں کا گیت Song of the Angles عقل ہے بے زمام ابھی، عشق ہے بے مقام ابھی As yet the Reason is unbridled, and Love is on the road: نقش گرِ اَزل! ترا نقش ہے نا تمام ابھی O Architect of Eternity! Your design is incomplete. خلقِ خدا کی گھات میں رِند و فقیہ و مِیر و پیر Drunkards, jurists, princes and p... »

ظاہر کی آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئی – علامه محمد اقبال

ظاہر کی آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئی – علامه محمد اقبال

ظاہر کی آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئی One should not see the Spectacle with the material eye ہو دیکھنا تو دیدۂ دل وا کرے کوئی If one wants to see Him he should open the insight’s eye منصُور کو ہُوا لبِ گویا پیامِ موت His talking lip was death’s message to Mansur اب کیا کسی کے عشق کا دعویٰ کرے کوئی How c... »