علامه اقبال برای جوانان

ترانۂ ملّی – علامه محمد اقبال

ترانۂ ملّی – علامه محمد اقبال

ترانۂ ملّی The Anthem of the Islamic Community چِین و عرب ہمارا، ہندوستاں ہمارا China and Arabia are ours; India is ours. مسلم ہیں ہم، وطن ہے سارا جہاں ہمارا We are Muslims, the whole world is ours. توحید کی امانت سینوں میں ہے ہمارے God’s unity is held in trust in our breasts. آساں نہیں مٹانا نام و نشاں ہمارا It is not easy to erase our name and sign. دنیا کے بُت‌کدوں میں پہلا وہ گھر خدا کا Among the idol temples of the world the first is that house of God; ہم اُس کے پاسباں ہیں، وہ پاسباں ہمارا We are its keepers; it is our keeper. تیغوں کے سائے میں ہم پل کر جواں ہوئے ہیں Brought up in the sha... »

ترانۂ ہندی – علامه محمد اقبال

ترانۂ ہندی – علامه محمد اقبال

ترانۂ ہندی The Indian Anthem سارے جہاں سے اچھّا ہندوستاں ہمارا The best land in the world is our India; ہم بُلبلیں ہیں اس کی، یہ گُلِستاں ہمارا We are its nightingales; this is our garden. غربت میں ہوں اگر ہم، رہتا ہے دل وطن میں If we are in exile, our heart resides in our homeland. سمجھو وہیں ہمیں بھی، دل ہو جہاں ہمارا Understand that we are also where our heart is. پربت وہ سب سے اونچا، ہمسایہ آسماں کا That is the highest mountain, the neighbour of the sky; وہ سنتری ہمارا، وہ پاسباں ہمارا It is our sentry; it is our watchman. گودی میں کھیلتی ہیں اس کی ہزاروں ندیاں In its lap play thousands of... »

مجنوں نے شہر چھوڑا تو صحرا بھی چھوڑ دے – علامه محمد اقبال

مجنوں نے شہر چھوڑا تو صحرا بھی چھوڑ دے – علامه محمد اقبال

مجنوں نے شہر چھوڑا تو صحرا بھی چھوڑ دے Majnun abandoned habitation, you should abandon wilderness also نظّارے کی ہوس ہو تو لیلیٰ بھی چھوڑ دے If there be ambition for Sight, you should abandon Layla also واعظ! کمالِ ترک سے مِلتی ہے یاں مراد O preacher! Perfection of abandonment attains the objective دنیا جو چھوڑ دی ہے تو عقبیٰ بھی چھوڑ دے As you have abandoned the world, abandon the Hereafter also تقلید کی روِش سے تو بہتر ہے خودکُشی Suicide is better than the way of taqlid رستہ بھی ڈھُونڈ، خِضر کا سودا بھی چھوڑ دے Seek your own path, abandon the love of Khizr also مانندِ خامہ تیری زباں پر ہے حر... »

لینن – علامه محمد اقبال

لینن – علامه محمد اقبال

لینن Lenin(خدا کے حضور میں) (Before God) اے انفُس و آفاق میں پیدا ترے آیات All space and all that breathes bear witness; truth حق یہ ہے کہ ہے زندہ و پائندہ تِری ذات It is indeed; Thou art, and dost remain. میں کیسے سمجھتا کہ تو ہے یا کہ نہیں ہے How could I know that God was or was not, ہر دم متغّیر تھے خرد کے نظریّات Where Reason’s reckonings shifted hour by hour? محرم نہیں فطرت کے سرودِ اَزلی سے The peerer at planets, the counter-up of plants, بِینائے کواکب ہو کہ دانائے نباتات Heard nothing there of Nature’s infinite music; آج آنکھ نے دیکھا تو وہ عالم ہُوا ثابت To-day I witnessing... »

حضورِ رسالت مآبؐ میں – علامه محمد اقبال

حضورِ رسالت مآبؐ میں – علامه محمد اقبال

حضورِ رسالت مآبؐ میں Before the Prophet’s Throne گراں جو مجھ پہ یہ ہنگامۂ زمانہ ہُوا Sick of this world and all this world’s tumult جہاں سے باندھ کے رختِ سفر روانہ ہُوا I who had lived fettered to dawn and sunset, قیودِ شام و سحَر میں بسر تو کی لیکن Yet never fathomed the planet’s hoary laws, نظامِ کُہنۂ عالم سے آشنا نہ ہُوا Taking provisions for my way set out فرشتے بزمِ رسالتؐ میں لے گئے مجھ کو From earth, and angels led me where the Prophet حضورِ آیۂ رحمتؐ میں لے گئے مجھ کو Holds audience, and before the mercy-seat. کہا حضورؐ نے، اے عندلیبِ باغِ حجاز! ‘Nightingale of the gardens of Hijaz! e... »

جاوید کے نام – علامه محمد اقبال

جاوید کے نام – علامه محمد اقبال

جاوید کے نام To Javid(لندن میں اُس کے ہاتھ کا لِکھّا ہُوا پہلا خط آنے پر) (On receiving his first letter in London) دیارِ عشق میں اپنا مقام پیدا کر Build in love’s empire your hearth and your home; نیا زمانہ، نئے صبح و شام پیدا کر Build Time anew, a new dawn, a new eve! خدا اگر دل فطرت شناس دے تجھ کو Your speech, if God give you the friendship of Nature, سکُوتِ لالہ و گُل سے کلام پیدا کر From the rose and tulip’s long silence weave. اُٹھا نہ شیشہ گرانِ فرنگ کے احساں No gifts of the Franks’ clever glass-bowers ask! سفالِ ہند سے مِینا و جام پیدا کر From India’s own clay mould your cup and your f... »

محبّت – علامه محمد اقبال

محبّت – علامه محمد اقبال

محبّت Love عروسِ شب کی زُلفیں تھیں ابھی ناآشنا خَم سے As yet the tresses of the bride of night were not familiar with their graceful curls; ستارے آسماں کے بے خبر تھے لذّتِ رم سے And the stars of heaven had tasted not the bliss of whistling motion through the depths of space. قمر اپنے لباسِ نَو میں بیگانہ سا لگتا تھا The moon in her new robes looked rather strange نہ تھا واقف ابھی گردش کے آئینِ مسلّم سے And knew not revolution’s ceaseless law. ابھی امکاں کے ظُلمت خانے سے اُبھری ہی تھی دنیا From the dark house of possibilities the world had just emerged to spin along, مذاقِ زندگی پوشیدہ تھا پہنا... »

وِصال – علامه محمد اقبال

وِصال – علامه محمد اقبال

وِصال The Union جُستجو جس گُل کی تڑپاتی تھی اے بُلبل مجھے O Nightingale! The rose whose search made me flounced خوبیِ قسمت سے آخر مِل گیا وہ گُل مجھے By dint of good luck that rose I have finally found خود تڑپتا تھا، چمن والوں کو تڑپاتا تھا میں I used to flounce myself, I used to make others flounced تجھ کو جب رنگیں نوا پاتا تھا، شرماتا تھا میں I used to feel shy when I found you singing beautifully میرے پہلو میں دلِ مضطر نہ تھا، سیماب تھا A mere restless heart was not in my bosom, it was mercury ارتکابِ جُرمِ الفت کے لیے بے تاب تھا I was impatient for fulfillment of the Longing of Love نامراد... »

شمع – علامه محمد اقبال

شمع – علامه محمد اقبال

شمع The Candle بزمِ جہاں میں مَیں بھی ہُوں اے شمع! دردمند O Candle! I am also an afflicted person in the world assembly فریاد در گرہ صفَتِ دانۂ سپند Constant complaint is my lot in the manner of the rue دی عشق نے حرارتِ سوزِ درُوں تجھے Love gave the warmth of internal pathos to you اور گُل فروشِ اشکِ شفَق گوں کِیا مجھے It made me the florist selling blood‑mixed tears ہو شمعِ بزمِ عیش کہ شمع مزار تُو Whether you be the candle of a celebrating assembly or one at the grave ہر حال اشکِ غم سے رہی ہمکنار تُو In every condition associated with the tears of sorrow you remain یک بِیں تری نظر صفتِ عاشقا... »

خطاب بہ جوانانِ اسلام – علامه محمد اقبال

خطاب بہ جوانانِ اسلام – علامه محمد اقبال

خطاب بہ جوانانِ اسلام Address to the Muslim Youth کبھی اے نوجواں مسلم! تدبّر بھی کِیا تُو نے Have ever you pondered, O Muslim youth, on deep and serious things? وہ کیا گردُوں تھا تُو جس کا ہے اک ٹُوٹا ہوا تارا What is this world in which this you is only a broken star? تجھے اس قوم نے پالا ہے آغوشِ محبّت میں You came of a stock that nourishes you in the close embracing of love, کُچل ڈالا تھا جس نے پاؤں میں تاجِ سرِ دارا A stock that trampled under foot Dara who wore the crown. تمدّن آفریں، خلاّقِ آئینِ جہاں داری Civilization’s grace they forged to a world-disposing law, وہ صحرائے عرب یعنی شتربا... »

پَروانہ اور جُگنو – علامه محمد اقبال

پَروانہ اور جُگنو – علامه محمد اقبال

پَروانہ اور جُگنو The Moth and the Fireflyپروانہ The Moth پروانے کی منزل سے بہت دُور ہے جُگنو The firefly is so far removed From the status of the moth! کیوں آتشِ بے سوز پہ مغرور ہے جُگنو Why is it so proud Of a fire that cannot burn?جُگنو The Firefly اللہ کا سَو شکر کہ پروانہ نہیں مَیں God be thanked a hundred times, That I am not a moth– دریُوزہ گرِ آتشِ بیگانہ نہیں مَیں That I am no beggar Of alien fire!پَروانہ اور جُگنو The Moth and the Fireflyپروانہ The Moth پروانے کی منزل سے بہت دُور ہے جُگنو The firefly is so far removed From the status of the moth! کیوں آتشِ بے سوز پہ مغرور ہے جُگنو Wh... »

غزلیات – علامه محمد اقبال

غزلیات – علامه محمد اقبال

غزلیات Ghazals٭ * گُلزارِ ہست و بود نہ بیگانہ وار دیکھ Do not look at the garden of existence like a stranger ہے دیکھنے کی چیز اسے بار بار دیکھ It is a thing worth looking at, look at it repeatedly آیا ہے تُو جہاں میں مثالِ شرار دیکھ You have come into the world like a spark, beware دَم دے نہ جائے ہستیِ نا پائدار دیکھ Lest your ephemeral life may end suddenly, beware مانا کہ تیری دید کے قابل نہیں ہوں میں Granted that I am not worthy of your Sight تُو میرا شوق دیکھ، مرا انتظار دیکھ You should look at my zeal, and look at my perseverance کھولی ہیں ذوقِ دید نے آنکھیں تری اگر If your eyes have bee... »

شیکسپیئر – علامه محمد اقبال

شیکسپیئر – علامه محمد اقبال

شیکسپیئر Shakespeare شفَقِ صبح کو دریا کا خرام آئینہ The flowing river mirrors the red glow of dawn, نغمۂ شام کو خاموشیِ شام آئینہ The quiet of the evening mirrors the evening song, برگِ گُل آئنۂ عارضِ زیبائے بہار The rose‑leaf mirrors spring’s beautiful cheek; شاہدِ مے کے لیے حجلۂ جام آئینہ The chamber of the cup mirrors the beauty of the wine; حُسن آئینۂ حق اور دل آئینۂ حُسن Beauty mirrors Truth, the heart mirrors Beauty; دلِ انساں کو ترا حُسنِ کلام آئینہ The beauty of your speech mirrors the heart of man. ہے ترے فکرِ فلک رس سے کمالِ ہستی Life finds perfection in your sky‑soaring thought. کی... »

جنگِ یرموک کا ایک واقعہ – علامه محمد اقبال

جنگِ یرموک کا ایک واقعہ – علامه محمد اقبال

جنگِ یرموک کا ایک واقعہ An Incident of the Battle of Yarmuk صف بستہ تھے عرب کے جوانانِ تیغ بند The armed Arab youth were arrayed for battle تھی منتظر حِنا کی عروسِ زمینِ شام The bride of Syria’s land was waiting for myrtle اک نوجوان صُورتِ سیماب مُضطرب A young man who was restless like mercury آ کر ہُوا امیرِ عساکر سے ہم کلام Approaching the army’s general started saying اے بُوعبیدہ رُخصتِ پیکار دے مجھے “O Abu ‘Ubaidah grant me permission to fight لبریز ہو گیا مرے صبر و سکُوں کا جام The cup of my patience and calm is full بے تاب ہو رہا ہوں فراقِ رسُولؐ میں I am becoming impatient in the Holy P... »

کنارِ راوی – علامه محمد اقبال

کنارِ راوی – علامه محمد اقبال

کنارِ راوی On the Bank of the Ravi سکُوتِ شام میں محوِ سرود ہے راوی Raft in its music, in evening’s hush, the Ravi; نہ پُوچھ مجھ سے جو ہے کیفیت مرے دل کی But how it is with this heart, do not ask— پیام سجدے کا یہ زیروبم ہُوا مجھ کو Hearing in these soft cadences a prayer-call, جہاں تمام سوادِ حرم ہُوا مجھ کو Seeing all earth God’s precinct, here beside سرِ کنارۂ آبِ رواں کھڑا ہوں میں The margins of the onward-flowing waters خبر نہیں مجھے لیکن کہاں کھڑا ہوں میں Standing I scarcely know where I am standing. شرابِ سُرخ سے رنگیں ہوا ہے دامنِ شام With palsied hand the taverner of heaven لیے ہے پیرِ... »

فاطمہ بنت عبداللہ – علامه محمد اقبال

فاطمہ بنت عبداللہ – علامه محمد اقبال

فاطمہ بنت عبداللہ Fatima Bint ‘Abdullahعرب لڑکی جو طرابلس کی جنگ میں غازیوں کو پانی پِلاتی ہوئی شہید ہُوئی An Arab Girl who was martyred while Serving Water to the Fighters against Infidels in the Battle of Tripoli۱۹۱۲ء (1912) فاطمہ! تُو آبرُوئے اُمّتِ مرحوم ہے Fatima, you are the pride of the Community God bless it! ذرّہ ذرّہ تیری مُشتِ خاک کا معصوم ہے Your dust is holy, every particle of it. یہ سعادت، حُورِ صحرائی! تری قسمت میں تھی You, houri of the desert, were fated to win such merit! غازیانِ دیں کی سقّائی تری قسمت میں تھی To give the soldiers of Islam water to drink qas to be your good fo... »

ذوق و شوق – علامه محمد اقبال

ذوق و شوق – علامه محمد اقبال

ذوق و شوق Ecstasy(ان اشعار میں سے اکثر فلسطین میں لِکھّے گئے) (Most of these verses were written in Palestine) ’دریغ آمدم زاں ہمہ بوستاں I could not go to my friends empty-handed تہی دست رفتن سوئے دوستاں‘ From an orchard! قلب و نظر کی زندگی دشت میں صُبح کا سماں Life to passion and ecstasy—sunrise in the desert: چشمۂ آفتاب سے نُور کی ندّیاں رواں Luminous brooks are flowing from the fountain of the rising sun. حُسنِ اَزل کی ہے نمود، چاک ہے پردۂ وجود The veil of being is torn, Eternal Beauty reveals itself: دل کے لیے ہزار سُود ایک نگاہ کا زیاں The eye is dazzled but the soul is richly endowed. سُ... »

وطنیّت – علامه محمد اقبال

وطنیّت – علامه محمد اقبال

وطنیّت Patriotism(یعنی وطن بحیثیّت ایک سیاسی تصوّر کے) As a Political Concept اس دور میں مے اور ہے، جام اور ہے جم اور In this age the wine, the cup, even Jam is different ساقی نے بِنا کی روِشِ لُطف و ستم اور The cup-bearer started different ways of grace and tyranny مسلم نے بھی تعمیر کِیا اپنا حرم اور The Muslim also constructed a different harem of his own تہذیب کے آزر نے ترشوائے صنم اور The Azar of civilization made different idols of his own ان تازہ خداؤں میں بڑا سب سے وطن ہے Country, is the biggest among these new gods! جو پیرہن اس کا ہے، وہ مذہب کا کفن ہے What is its shirt is the shroud o... »

مارچ ۱۹۰۷ء – علامه محمد اقبال

مارچ ۱۹۰۷ء – علامه محمد اقبال

مارچ ۱۹۰۷ء March, 1907 زمانہ آیا ہے بے حجابی کا، عام دیدارِ یار ہو گا Time has come for openness, Beloved’s Sight will be common سکُوت تھا پردہ دار جس کا، وہ راز اب آشکار ہوگا The secret which silence had concealed, will be unveiled now گزر گیا اب وہ دَور ساقی کہ چھُپ کے پیتے تھے پینے والے O Cup‑bearer! Time has gone when wine was taken secretly بنے گا سارا جہان مے‌خانہ ، ہر کوئی بادہ خوار ہو گا The whole world will be tavern, everyone will be drinking کبھی جو آوارۂ جُنوں تھے، وہ بستیوں میں پھر آ بسیں گے Those who once wandered insane, will return to habitations برہنہ پائی وہی رہے گی، مگر نیا ... »

طلبۂ علی گڑھ کالج کے نام – علامه محمد اقبال

طلبۂ علی گڑھ کالج کے نام – علامه محمد اقبال

طلبۂ علی گڑھ کالج کے نام Addressed To the Students of Aligarh College اَوروں کا ہے پیام اور، میرا پیام اور ہے The message of others is different, my message is different عشق کے درد مند کا طرزِ کلام اور ہے The style of address of the one afflicted with Love is different طائرِ زیرِ دام کے نالے تو سُن چُکے ہو تم You have heard the laments of the bird under the net یہ بھی سُنو کہ نالۂ طائرِ بام اور ہے Also listen to the laments of the bird on the roof tops which are different آتی تھی کوہ سے صدا رازِ حیات ہے سکُوں Call was coming from the mount, “Life’s secret is peace” کہتا تھا مورِ ناتواں لُطفِ خ... »

بسم اللہ الرحمن الرحیم – علامه محمد اقبال

بسم اللہ الرحمن الرحیم – علامه محمد اقبال

بسم اللہ الرحمن الرحیم In the name of Allah, the Most Gracious and the Most Mercifulدُعا A Prayer(مسجدِ قُرطُبہ میں لِکھّی گئی) (Written in the Mosque of Cordoba) ہے یہی میری نماز، ہے یہی میرا وضو My invocations are sincere and true, میری نواؤں میں ہے میرے جگر کا لہُو They form my ablutions and prayers due. صُحبتِ اہلِ صفا، نُور و حضور و سُرور One glance of guide such joy and warmth can grant, سر خوش و پُرسوز ہے لالہ لبِ آبُجو On marge of stream can bloom the tulip plant. راہِ محبّت میں ہے کون کسی کا رفیق One has no comrade on Love’s journey long ساتھ مرے رہ گئی ایک مری آرزو Save fervent zeal,... »

ہندوستانی بچوں کا قومی گیت – علامه محمد اقبال

ہندوستانی بچوں کا قومی گیت – علامه محمد اقبال

ہندوستانی بچوں کا قومی گیت The National Anthem For the Indian Children چشتیؒ نے جس زمیں میں پیغامِ حق سُنایا The land in which Chishti delivered the message of God نانک نے جس چمن میں وحدت کا گیت گایا The garden in which Nanak sang the song of Tawhid of God تاتاریوں نے جس کو اپنا وطن بنایا The land which the Tatars adopted as their homeland جس نے حجازیوں سے دشتِ عرب چھُڑایا For which people of Hijaz abandoned the Arabian wilderness میرا وطن وہی ہے، میرا وطن وہی ہے That same is my homeland, that same is my homeland یُونانیوں کو جس نے حیران کر دیا تھا Whose wisdom had left the Greeks bewildered س... »

محبت – علامه محمد اقبال

محبت – علامه محمد اقبال

محبت Love شہیدِ محبّت نہ کافر نہ غازی The martyrs of Love are not Muslim nor Paynim, محبّت کی رسمیں نہ تُرکی نہ تازی The manners of Love are not Arab nor Turk! وہ کچھ اور شے ہے، محبّت نہیں ہے Some passion far other than Love was the power سِکھاتی ہے جو غزنوی کو ایازی That taught Ghazni’s high ruler to dote on his slave. یہ جوہر اگر کار فرما نہیں ہے When the spirit of Love has no place on the throne, تو ہیں علم و حکمت فقط شیشہ بازی All wisdom and learning vain tricks and pretence! نہ محتاجِ سُلطاں، نہ مرعوبِ سُلطاں Paying court to no king, by no king held in awe, محبّت ہے آزادی و بے نیازی Love ... »

تصویرِ درد – علامه محمد اقبال

تصویرِ درد – علامه محمد اقبال

تصویرِ درد The Portrait of Anguish نہیں منّت کشِ تابِ شنیدن داستاں میری My story is not indebted to the patience of being heard خموشی گفتگو ہے، بے زبانی ہے زباں میری My silence is my talk, my speechlessness is my speech یہ دستورِ زباں بندی ہے کیسا تیری محفل میں Why does this custom of silencing exist in your assembly? یہاں تو بات کرنے کو ترستی ہے زباں میری My tongue is tantalized to talk in this assembly اُٹھائے کچھ وَرق لالے نے، کچھ نرگس نے، کچھ گُل نے Some leaves were picked up by the tulip, some by the narcissus, some by the rose چمن میں ہر طرف بِکھری ہُوئی ہے داستاں میری My story is scatte... »

پیوستہ رہ شجر سے، امیدِ بہار رکھ! – علامه محمد اقبال

پیوستہ رہ شجر سے، امیدِ بہار رکھ! – علامه محمد اقبال

پیوستہ رہ شجر سے، امیدِ بہار رکھ! Remain Attached To the Tree Keep Spring’s Expectation ڈالی گئی جو فصلِ خزاں میں شَجر سے ٹُوٹ The branch of the tree which got separated in autumn مُمکن نہیں ہری ہو سحابِ بہار سے Is not possible to green up with the cloud of spring ہے لازوال عہدِ خزاں اُس کے واسطے The autumn season for this branch is ever-lasting کچھ واسطہ نہیں ہے اُسے برگ و بار سے It has no connection with flourishing in the spring ہے تیرے گُلِستاں میں بھی فصلِ خزاں کا دَور Autumn season prevails in your rose garden also خالی ہے جیبِ گُل زرِ کامل عیار سے The pocket of the rose is devoid of goo... »

والدہ مرحومہ کی یاد میں – علامه محمد اقبال

والدہ مرحومہ کی یاد میں – علامه محمد اقبال

والدہ مرحومہ کی یاد میں In Memory of My Late Mother ذرّہ ذرّہ دہر کا زندانیِ تقدیر ہے Every atom of creation is a prisoner of fate; پردۂ مجبوری و بےچارگی تدبیر ہے Contrivance is the veil of constraint and helplessness. آسماں مجبور ہے، شمس و قمر مجبور ہیں The sky is compelled; the sun and the moon are compelled; انجمِ سیماب پا رفتار پر مجبور ہیں The fleet-footed stars are compelled in their course. ہے شکست انجام غنچے کا سبُو گلزار میں The cup of the bud in the garden is destined to be smashed; سبزہ و گُل بھی ہیں مجبورِ نمُو گلزار میں Verdure and flowers are also compelled to grow in the garden.... »

طارق کی دُعا – علامه محمد اقبال

طارق کی دُعا – علامه محمد اقبال

طارق کی دُعا Tariq’s Prayer(اندلس کے میدانِ جنگ میں) (In the Battlefield of Andalusia) یہ غازی، یہ تیرے پُر اسرار بندے These warriors, victorious, these worshippers of Thine, جنھیں تُو نے بخشا ہے ذوقِ خدائی Whom Thou hast granted the will to win power in Thy name; دونیم ان کی ٹھوکر سے صحرا و دریا Who cleave rivers and woods in twain, سِمٹ کر پہاڑ ان کی ہیبت سے رائی Whose terror turns mountains into dust; دو عالم سے کرتی ہے بیگانہ دل کو They care not for the world; They care not for its pleasures; عجب چیز ہے لذّتِ آشنائی In their passion, in their zeal, In their love for Thee, O Lord, شہادت ہے ... »

حُسن و عشق – علامه محمد اقبال

حُسن و عشق – علامه محمد اقبال

حُسن و عشق The Beauty and the Love جس طرح ڈُوبتی ہے کشتیِ سیمینِ قمر Just as the moon’s silver boat is drowned نورِ خورشید کے طوفان میں ہنگامِ سحَر In the storm of sun’s light at the break of dawn جیسے ہو جاتا ہے گُم نور کا لے کر آنچل Just as the moon-like lotus disappears چاندنی رات میں مہتاب کا ہم رنگ کنول Behind the veil of light in the moon-lit night جلوۂ طُور میں جیسے یدِ بیضائے کلیم Just like the Kaleem’s radiant palm in the Tur’s effulgence موجۂ نگہتِ گُلزار میں غنچے کی شمیم And the flower bud’s fragrance in the wave of garden’s breeze ہے ترے سیلِ محبّت میں یونہی دل میرا Similar is my h... »

نصیحت – علامه محمد اقبال

نصیحت – علامه محمد اقبال

نصیحت Counsel بچۂ شاہیں سے کہتا تھا عقابِ سالخورد An eagle full of years to a young hawk said— اے ترے شہپر پہ آساں رفعتِ چرخِ بریں Easy your royal wings through high heaven spread: ہے شباب اپنے لہُو کی آگ میں جلنے کا نام To burn in the fire of our own veins is youth! سخت کوشی سے ہے تلخِ زندگانی انگبیں Strive, and in strife make honey of life’s gall; جو کبوتر پر جھپٹنے میں مزا ہے اے پِسَر! Maybe the blood of the pigeon you destroy, وہ مزا شاید کبوتر کے لہُو میں بھی نہیں My son, is not what makes your swooping joy! نصیحت Counsel بچۂ شاہیں سے کہتا تھا عقابِ سالخورد An eagle full of years to a you... »

صِدّیقؓ – علامه محمد اقبال

صِدّیقؓ – علامه محمد اقبال

صِدّیقؓ Abu Bakr The Truthful اک دن رسُولِ پاکؐ نے اصحابؓ سے کہا One day the Holy Prophet said to his Companions, دیں مال راہِ حق میں جو ہوں تم میں مالدار ‘The rich among you should give in the way of God’. ارشاد سُن کے فرطِ طرب سے عمَرؓ اُٹھے On hearing that command, an overjoyed ‘Umar stood up; اُس روز اُن کے پاس تھے درہم کئی ہزار That day he had thousands of dirhams. دل میں یہ کہہ رہے تھے کہ صِدّیقؓ سے ضرور Today, for sure, he said in his heart, بڑھ کر رکھے گا آج قدم میرا راہوار My horse will take the lead from Abu Bakr’s. لائے غَرضکہ مال رُسولِ امیںؐ کے پاس So he brought his wealth to the ... »

ستارہ کاپیغام – علامه محمد اقبال

ستارہ کاپیغام – علامه محمد اقبال

ستارہ کاپیغام The Star’s Message مجھے ڈرا نہیں سکتی فضا کی تاریکی I fear not the darkness of the night; مِری سرشت میں ہے پاکی و دُرخشانی My nature is bred in purity and light; تُو اے مسافرِ شب! خود چراغ بن اپنا Wayfarer of the night! Be a lamp to thyself; کر اپنی رات کو داغِ جگر سے نُورانی With thy passion’s flame, make thy darkness bright.ستارہ کاپیغام The Star’s Message مجھے ڈرا نہیں سکتی فضا کی تاریکی I fear not the darkness of the night; مِری سرشت میں ہے پاکی و دُرخشانی My nature is bred in purity and light; تُو اے مسافرِ شب! خود چراغ بن اپنا Wayfarer of the night! Be a lamp to thyself; کر... »

ایک نوجوان کے نام – علامه محمد اقبال

ایک نوجوان کے نام – علامه محمد اقبال

ایک نوجوان کے نام To a Young Man ترے صوفے ہیں افرنگی، ترے قالیں ہیں ایرانیِ Thy sofas are from Europe, thy carpets from Iran; لہُو مجھ کو رُلاتی ہے جوانوں کی تن آسانی This slothful opulence evokes my sigh of pity. امارت کیا، شکوہِ خسروی بھی ہو تو کیا حاصل In vain if thou possessest Khusroe’s imperial pomp, نہ زورِ حیدری تجھ میں، نہ استغنائے سلمانی If thou dost not possess prowess or contentment. نہ ڈھُونڈ اس چیز کو تہذیبِ حاضر کی تجلّی میں Seek not thy joy or greatness in the glitter of Western life, کہ پایا مَیں نے استغنا میں معراجِ مسلمانی For in contentment lies a Muslim’s joy and greatness... »

فرشتوں کا گیت – علامه محمد اقبال

فرشتوں کا گیت – علامه محمد اقبال

فرشتوں کا گیت Song of the Angles عقل ہے بے زمام ابھی، عشق ہے بے مقام ابھی As yet the Reason is unbridled, and Love is on the road: نقش گرِ اَزل! ترا نقش ہے نا تمام ابھی O Architect of Eternity! Your design is incomplete. خلقِ خدا کی گھات میں رِند و فقیہ و مِیر و پیر Drunkards, jurists, princes and priests all sit in ambush upon Your common folk: تیرے جہاں میں ہے وہی گردشِ صُبح و شام ابھی The days in Your world haven’t changed as yet. تیرے امیر مال مست، تیرے فقیر حال مست Your rich are too unmindful, Your poor too content— بندہ ہے کُوچہ گرد ابھی، خواجہ بلند بام ابھی The slave as yet frets in the... »

ظاہر کی آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئی – علامه محمد اقبال

ظاہر کی آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئی – علامه محمد اقبال

ظاہر کی آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئی One should not see the Spectacle with the material eye ہو دیکھنا تو دیدۂ دل وا کرے کوئی If one wants to see Him he should open the insight’s eye منصُور کو ہُوا لبِ گویا پیامِ موت His talking lip was death’s message to Mansur اب کیا کسی کے عشق کا دعویٰ کرے کوئی How can anybody dare to claim Someone’s Love now ہو دید کا جو شوق تو آنکھوں کو بند کر Close your eyes if you want taste for the Sight ہے دیکھنا یہی کہ نہ دیکھا کرے کوئی The real Seeing is that one should not try to see Him میں انتہائے عشق ہوں، تُو انتہائے حُسن I am the extreme Love, Thou art the extreme ... »