شرط – عاطف سعید

شرط یہ تم جانتی ہو میں ضدی بہت ہوں انا بھی ہے مجھ میں میں سنتا ہوں دل کی (فقط اپنے دل …

مشورہ – عاطف سعید

مشورہ سنو! تم سوچ سکتی ہو، جدائی کے عذابوں پر کہ تم نادان ہو نہ جانتی ہو اس جدائی کو، سنو! تم …

وعدہ – عاطف سعید

وعدہ مرا وعدہ یہ ہے تم سے! تمہیں اتنا میں چاہوں گا کہ دنیا میں کہیں پر بھی محبت کے حوالے سے …

عادتیں – عاطف سعید

عادتیں لاکھ چاہو بدل نہیں سکتیں زندگی سے نکل نہیں سکتیں عادتیں بھی عجیب ہوتی ہیں

تضاد – عاطف سعید

تضاد مجھے اکثر یہ کہتی تھی کہ اتنی بار کہتے ہو، ’’مجھے تم سے محبت ہے‘‘ کہ اب سنتی ہوں یہ تم …

فرق – عاطف سعید

فرق بچھڑنے اور جدائی میں ذرا سا فرق ہوتا ہے جدا ہو کر کسی سے پھر کبھی کوئی نہیں ملتا بچھڑ جائیں …

مصالحت – عاطف سعید

مصالحت مجھ سے کہتی ہو کہ تم اپنی محبت لے لو یہ مجھے خون رلاتی ہے بہت راتوں میں جن کو سننے …

دو شعر – عاطف سعید

دو شعر کیا بتلاؤں ان لمحوں میں کتنا تم کو سوچا تھا جھیل کنارے جس دم میں نے چاند نکلتے دیکھا تھا …

جیت – عاطف سعید

جیت تم سے ملنے کا وعدہ تھا جی کرتا تھا جیسے مجھ کو تڑپاتی ہو ویسے ہی تم کو تڑپاؤں تم سے …

جشن – عاطف سعید

جشن کتنی مدت بعد تمہاری یاد آئی ہے یوں لگتا ہے جیسے دل یہ رک جائے گا یوں لگتا ہے جیسے آنکھیں! …

معجزہ – عاطف سعید

معجزہ مجھے معجزوں پر یقیں تو نہیں ہے مگر پھر بھی آنکھوں میں سپنے سجائے تری راہگذر سے میں دن میں کئی …

چار شعر – عاطف سعید

چار شعر دل کے رشتے تو خاص ہوتے ہیں دور رہ کر بھی پاس ہوتے ہیں ہر گھڑی ان کو اُوڑھ رکھتا …

خود فریبی – عاطف سعید

خود فریبی ابھی تک تو ہم خود فریبی کی دھند میں یوں ہاتھوں کو تھامے جدائی کے خدشوں کو دل سے نکالے …

مرے بے خبر – عاطف سعید

مرے بے خبر مرے ہمنشیں، میرے ہمسفر تجھے کیا پتا، تجھے کیا خبر مرے لب پہ ٹھہری ہوئی تھی جو وہ ہزار …