کوئی پَل تو مجھ سے – افتخار راغب

غزل
کوئی پَل تو مجھ سے جدا نہیں مجھے علم ہے
کوئی دِل میں تیرے سوا نہیں مجھے علم ہے
یہ دلیلِ ترکِ وفا نہیں مجھے علم ہے
مِرا خط ہی اُس کو ملا نہیں مجھے علم ہے
چلے اُس کا نام بگاڑنے چلو چُپ رہو
کہ وہ شخص اتنا برا نہیں مجھے علم ہے
تجھے پوجنا ہے تو پوج تو، مجھے چھوڑ دے
وہ بھی آدمی ہے خدا نہیں مجھے علم ہے
مِری جاں تو کتنی حسین ہے تجھے کیا پتا
تِرے ہاتھ پر یہ حنا نہیں مجھے علم ہے
تجھے کیا ہیں مجھ سے شکایتیں مجھے کیا خبر
مجھے تجھ سے کوئی گلہ نہیں مجھے علم ہے
نہیں مانتا دلِ تشنہ کام تو کیا کروں
تِری زلف کالی گھٹا نہیں مجھے علم ہے
میں جلوں گا ہجر کی آگ میں یوں ہی عمر بھر
مِری اور کوئی سزا نہیں مجھے علم ہے
شاعر: افتخار راغبؔ
کتاب: لفظوں میں احساس
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.