درد سے میرا دامن بھر دے یا اللّہ – قتیل شفائی

درد سے میرا دامن بھر دے یا اللّہ پھر چاہے دیوانہ کر دے یا اللّہ میں نے تجھ سے چاند ستارے کب مانگے روشن دل…

Read More..

کیا ہے جسے پیار ہم نے زندگی کی طرح – قتیل شفائی

کیا ہے جسے پیار ہم نے زندگی کی طرح وہ آشنا بھی ملا ہم سے اجنبی کی طرح بڑھا کے پیاس میری اس نے ہاتھ…

Read More..

اپنے ہونٹوں پر سجانا چاہتا ہوں – قتیل شفائی

اپنے ہونٹوں پر سجانا چاہتا ہوں آ تجھے گنگنانا چاہتا ہوں کوئی آنسو تیرے دامن پر گر کر بوند کو موتی بنانا چاہتا ہوں تھک…

Read More..

اپنے ہاتھوں کی لکیروں میں بسا لے مجھ کو – قتیل شفائی

اپنے ہاتھوں کی لکیروں میں بسا لے مجھ کو میں ہوں تیرا نصیب اپنا بنا لے مجھ کو مجھ سے تو پوچھنے آیا ہے وفا…

Read More..

مل کر جدا ہوئے تو نہ سویا کریں گے ہم – قتیل شفائی

مل کر جدا ہوئے تو نہ سویا کریں گے ہم اک دوسرے کی یاد میں رویا کریں گے ہم آنسو چھلک چھلک کے ستائیں گے…

Read More..

پہلے تو اپنے دل کے راز جان جائیے – قتیل شفائی

پہلے تو اپنے دل کے راز جان جائیے پھر جو نگاہِ یار کہے مان جائیے پہلے مزاج راہ گزر جان جائیے پھر گردِ راہ جو…

Read More..

یوں چُپ رہنا ٹھیک نہیں کوئی میٹھی بات کرو – قتیل شفائی

یوں چُپ رہنا ٹھیک نہیں کوئی میٹھی بات کرو مور چکور پیپہا کوئل سب کو مات کرو ساون تو من بگیا سے بن برسے بیت…

Read More..

دل کو غمِ حیات گوارہ ہے ان دنوں – قتیل شفائی

دل کو غمِ حیات گوارہ ہے ان دنوں پہلے جو درد تھا وہی چارہ ہے ان دنوں یہ دل ذرا سا دل تیری یادوں میں…

Read More..

بے چین بہاروں میں کیا کیا ہے جان کی خوشبو آتی ہے – قتیل شفائی

بے چین بہاروں میں کیا کیا ہے جان کی خوشبو آتی ہے جو پھول مہکتا ہے اس سے طوفان کی خوشبو آتی ہے کل رات…

Read More..

انگڑائی پر انگڑائی لیتی ہے رات جدائی کی – قتیل شفائی

انگڑائی پر انگڑائی لیتی ہے رات جدائی کی تم کیا سمجھو تم کیا جانو بات میری تنہائی کی کون سیاہی گھول رہا تھا وقت کے…

Read More..

جو بھی غنچہ تیرے ہونٹوں پر کھلا کرتا ہے – قتیل شفائی

جو بھی غنچہ تیرے ہونٹوں پر کھلا کرتا ہے وہ میری تنگی داماں کا گلہ کرتا ہے دیر سے آج میرا سر ہے تیرے زانوں…

Read More..

چراغ دل کے جلائو کہ عید کا دن ہے – قتیل شفائی

چراغ دل کے جلائو کہ عید کا دن ہے ترانے جھوم کے گائو کہ عید کا دن ہے غموں کو دل سے بھلائو کہ عید…

Read More..

چمپئی رنگ اور سیاہ آنکھیں – ماه رخ زیدی

چمپئی رنگ اور سیاہ آنکھیں کر نہ ڈالیں ہمیں تباہ آنکھیں چھوڑ دیں کاروبارِ دنیا پھر ہم کو دے دیں اگر پناہ آنکھیں مل گئیں…

Read More..

جاگتے جاگتے رات ڈھل جائیگی – ماه رخ زیدی

جاگتے جاگتے رات ڈھل جائیگی زندگی ایک دن رُخ بدل جائیگی پیار کے چند لمحوں میں کیا خبر تھی بات سوچوں سے آگے نکل جائیگی…

Read More..

ایک دریا تھا اور کنارہ تھا – ماه رخ زیدی

ایک دریا تھا اور کنارہ تھا میرا گائوں بہت ہی پیارا تھا چھت ٹپکتی تھی بارشوں میں کبھی گھر تھا کچا مگر ہمارا تھا ہاتھ…

Read More..

مجھ پہ کیوں اسطرح سے ہنستا ہے – ماه رخ زیدی

مجھ پہ کیوں اسطرح سے ہنستا ہے دل بڑی مشکلوں سے بستا ہے میرے گائوں کے گھر ہیں سب کچے ارے بادل کہاں برستا ہے…

Read More..

دوست ہی کیا سدا رہیں گے ہم – ماه رخ زیدی

دوست ہی کیا سدا رہیں گے ہم بات کچھ تو بڑھائیے صاحب ہو گیا جو لکھا تھا قسمت میں کاہے آنسو بہائیے صاحب پاس آ…

Read More..

گلابوں سے مہکی لڑی ہو گئی ہوں – ماه رخ زیدی

گلابوں سے مہکی لڑی ہو گئی ہوں محبت کی پہلی کڑی ہو گئی ہوں مجھے تو نے ایسی نگاہوں سے دیکھا کہ میں ایک پل…

Read More..

ہم جب بھی تنہا گھر گئے – ماه رخ زیدی

ہم جب بھی تنہا گھر گئے سائے سے اپنے ڈر گئے تیری جدائی سے صنم ہم جیتے جی ہی مر گئے سنتے ہی ذکر کربلا…

Read More..

محبت کی نہیں جاتی محبت ہو ہی جاتی ہے – ماه رخ زیدی

محبت کی نہیں جاتی محبت ہو ہی جاتی ہے دیارِ عشق میں کاٹی لمبی زندگی ہم نے ہزاروں عاشقوں سے دوبہ دو یہ گفتگو کی…

Read More..

مجھکو معصومیت کا صلہ مل گیا – ماه رخ زیدی

مجھکو معصومیت کا صلہ مل گیا وہ جو بچھڑا کوئی دوسرا مل گیا ہے مقدر بھی پتھر کی جیسے لکیر ہم نے چاہا تھا کیا…

Read More..

جو بھی جھوٹا تھا وہی خواب دکھایا خود کو – محمد علی خان

جو بھی جھوٹا تھا وہی خواب دکھایا خود کو بارہا میں نے بنایا ہے تماشا خود کو جو نامعلوم تھا پہلے اسے معلوم کیا پھر…

Read More..

اگر کچھ رابطہ باہر سے بنتا جا رہا ہے – محمد علی خان

اگر کچھ رابطہ باہر سے بنتا جا رہا ہے خلا اندر کا بھی تو اور بڑھتا جا رہا ہے نہ جانے کس جگہ جا کر…

Read More..

پتہ تبدیل ہوتا جا رہا ہے – محمد علی خان

پتہ تبدیل ہوتا جا رہا ہے ہر انچ اک میل ہوتا جا رہا ہے غروبِ شمس کا منظر ہے۔۔۔۔۔۔۔جیسے سمندر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جھیل ہوتا جا رہا ہے جسے…

Read More..

بکھرتے رنگوں جیسا ہو گیا ہوں، یہ سوچتا ہوں – محمد علی خان

بکھرتے رنگوں جیسا ہو گیا ہوں، یہ سوچتا ہوں میں کیا تھا، اور اب کیا ہو گیا ہوں، یہ سوچتا ہوں نہ جانے کس کا…

Read More..

دعا بھی دیتا ہے اور بددعا بھی دیتا ہے – محمد علی خان

دعا بھی دیتا ہے اور بددعا بھی دیتا ہے وہ کون ہے جو مجھے یوں سزا سی دیتا ہے میں اپنے آپ سے مخلص تو…

Read More..

مثلِ عمرِ خبرِ تو جب زندگی رہ جائیگی – محمد علی خان

مثلِ عمرِ خبرِ تو جب زندگی رہ جائیگی دیکھنا، مضمون میں پھر تشنگی رہ جائیگی باقی ساری شان سے رسمیں ادا ہونے کے بعد کیا…

Read More..

زمین کی چھت پہ پڑا آسمان ہوں تنہا – محمد علی خان

زمین کی چھت پہ پڑا آسمان ہوں تنہا عمارتوں میں گھرا اک مکان ہوں تنہا ادھورے چاند کی صورت دریدہ عکس بھی ہوں تہہ کھنڈر…

Read More..

میں سحرِ ناگہاں میں کھو گیا تھا – محمد علی خان

میں سحرِ ناگہاں میں کھو گیا تھا ذرا سی دیر پاگل ہو گیا تھا کہانی میں نصیحت بھی تھی لیکن وہ بچہ سنتے سنتے سو…

Read More..

کوئی پوچھے تو بتا دوں گا – محمد علی خان

کوئی پوچھے تو بتا دوں گا حال کیسا ہے سب سنا دوں گا مدتوں میں لکھا ہوا جیون ایک ہی سانس میں مٹا دوں گا…

Read More..

دَر دَر خود کو یوں نہ رولو – محمد علی خان

دَر دَر خود کو یوں نہ رولو کبھی تو چندا آنکھیں کھولو سب روئیں تو دم گھٹتا ہے سب سے تنہا ہو کے رو لو…

Read More..

اتنی مدت بعد ملے ہو! – محسن نقوی

اتنی مدت بعد ملے ہو! کن سوچوں میں گم پھرتے ہو؟ اتنے خائف کیوں رہتے ہو؟ ہر آہٹ سے ڈر جاتے ہو تیز ہوا نے…

Read More..

اُجڑے ہوئے لوگوں سے گریزاں نہ ہوا کر – محسن نقوی

اُجڑے ہوئے لوگوں سے گریزاں نہ ہوا کر حالات کی قبروں کے یہ کتبے بھی پڑھا کر کیا جانئے کیوں تیز ہوا سوچ میں گم…

Read More..

آندھی چلی تو دھوپ کی سانسیں الٹ گئیں – محسن نقوی

آندھی چلی تو دھوپ کی سانسیں الٹ گئیں عریاں شجر کے جسم سے شاخیں لپٹ گئیں دیکھا جو چاندنی میں گریبانِ شب کا رنگ کرنیں…

Read More..

بچھڑ کے مجھ سے کبھی تو نے یہ بھی سوچا ہے – محسن نقوی

بچھڑ کے مجھ سے کبھی تو نے یہ بھی سوچا ہے ادھورا چاند بھی کتنا اداس لگتا ہے یہ ختمِ وصل کا لمحہ ہے، رائیگاں…

Read More..

چمن میں جب بھی صبا کو گلاب پوچھتے ہیں – محسن نقوی

چمن میں جب بھی صبا کو گلاب پوچھتے ہیں تمہاری آنکھ کا احوال، خواب پوچھتے ہیں کہاں کہاں ہوئے روشن ہمارے بعد چراغ؟ ستارے دیدئہ…

Read More..

چاہت کا رنگ تھا نہ وفا کی لکیر تھی – محسن نقوی

چاہت کا رنگ تھا نہ وفا کی لکیر تھی قاتل کے ہاتھ میں تو حنا کی لکیر تھی خوش ہوں کہ وقتِ قتل مرا رنگ…

Read More..

چہرے پڑھتا، آنکھیں لکھتا رہتا ہوں – محسن نقوی

چہرے پڑھتا، آنکھیں لکھتا رہتا ہوں میں بھی کیسی باتیں لکھتا رہتا ہوں؟ سارے جسم درختوں جیسے لگتے ہیں اور بانہوں کو شاخیں لکھتا رہتا…

Read More..

خلوت میں کھلا ہم پہ کہ بیباک تھی وہ بھی – محسن نقوی

خلوت میں کھلا ہم پہ کہ بیباک تھی وہ بھی محتاط تھے ہم لوگ بھی، چالاک تھی وہ بھی افکار میں ہم لوگ بھی ٹھہرے…

Read More..

شامل مرا دشمن صفِ یاراں میں رہے گا – محسن نقوی

شامل مرا دشمن صفِ یاراں میں رہے گا یہ تیر بھی پیوست رگِ جاں میں رہے گا اک رسمِ جنوں اپنے مقدر میں رہے گی…

Read More..

کاش ہم کھل کے زندگی کرتے! – محسن نقوی

کاش ہم کھل کے زندگی کرتے! عمر گزری ہے خودکشی کرتے!! بجلیاں اس طرف نہیں آئیں ورنہ ہم گھر میں روشنی کرتے کون دشمن تری…

Read More..

فلک پر اک ستارہ رہ گیا ہے – محسن نقوی

فلک پر اک ستارہ رہ گیا ہے مرا ساتھی اکیلا رہ گیا ہے یہ کہہ کر پھر پلٹ آئیں ہوائیں! شجر پر ایک پتا رہ…

Read More..

شکستہ آئینوں کی کرچیاں اچھی نہیں لگتیں – محسن نقوی

شکستہ آئینوں کی کرچیاں اچھی نہیں لگتیں مجھے وعدوں کی خالی سیپیاں اچھی نہیں لگتیں گزشتہ رُت کے رنگوں کا اثر دیکھو کہ اب مجھ…

Read More..

معرکہ اب کے ہوا بھی تو پھر ایسا ہو گا – محسن نقوی

معرکہ اب کے ہوا بھی تو پھر ایسا ہو گا تیرے دریا پہ مری پیاس کا پہرہ ہو گا اس کی آنکھیں تیرے چہرے پہ…

Read More..

کھنڈر آنکھوں میں غم آباد کرنا – محسن نقوی

کھنڈر آنکھوں میں غم آباد کرنا کبھی فُرصت ملے تو یاد کرنا اذیت کی ہوس بجھنے لگی ہے کوئی تازہ ستم ایجاد کرنا کئی صدیاں…

Read More..

گُم صُم ہوا، آواز کا دریا تھا جو اک شخص – محسن نقوی

گُم صُم ہوا، آواز کا دریا تھا جو اک شخص پتھر بھی نہیں اب وہ، ستارا تھا جو اک شخص شاید وہ کوئی حرفِ دعا…

Read More..

کڑے سفر میں اگر راستہ بدلنا تھا – محسن نقوی

کڑے سفر میں اگر راستہ بدلنا تھا تو ابتدا میں مرے ساتھ ہی نہ چلنا تھا کچھ اس لیے بھی تو سورج زمیں پر اترا…

Read More..

متاع شامِ سفر بستیوں میں چھوڑ آئے – محسن نقوی

متاع شامِ سفر بستیوں میں چھوڑ آئے بجھے چراغ ہم اپنے گھروں میں چھوڑ آئے بچھڑ کے تجھ سے چلے ہم تو اب کے یوں…

Read More..

ہر ایک زخم کا چہرہ گلاب جیسا ہے – محسن نقوی

ہر ایک زخم کا چہرہ گلاب جیسا ہے مگر یہ جاگتا منظر بھی خواب جیسا ہے یہ تلخ تلخ سا لہجہ، یہ تیز تیز سی…

Read More..

وہ لڑکی بھی ایک عجیب پہیلی تھی – محسن نقوی

وہ لڑکی بھی ایک عجیب پہیلی تھی پیاسے ہونٹ تھے آنکھ سمندر جیسی تھی سورج اس کو دیکھ کے پیلا پڑتا تھا وہ سرما کی…

Read More..

وہ بظاہر جو زمانے سے خفا لگتا ہے – محسن نقوی

وہ بظاہر جو زمانے سے خفا لگتا ہے ہنس کے بولے بھی تو دنیا سے جدا لگتا ہے اور کچھ دیر نہ بجھنے دے اسے…

Read More..

ہر نفس رنج کا اشارہ ہے۔۔۔۔۔۔۔! – محسن نقوی

ہر نفس رنج کا اشارہ ہے۔۔۔۔۔۔۔! آدمی دُکھ کا استعارہ ہے ۔۔۔۔۔۔! مجھ کو اپنی حدوں میں رہنے دے میں سمندر ہوں تو کنارا ہے…

Read More..

میں دل پہ جبر کروں گا، تجھے بھلا دوں گا – محسن نقوی

میں دل پہ جبر کروں گا، تجھے بھلا دوں گا مروں گا خود بھی تجھے بھی کڑی سزا دوں گا یہ تیرگی مرے گھر کا…

Read More..

وہ دلاور جو سیہ شب کے شکاری نکلے – محسن نقوی

وہ دلاور جو سیہ شب کے شکاری نکلے وہ بھی چڑھتے ہوئے سورج کے پجاری نکلے سب کے ہونٹوں پہ مرے بعد ہیں باتیں میری!…

Read More..

اب کے تجدید وفا کا نہیں امکاں جاناں – احمد فراز

اب کے تجدید وفا کا نہیں امکاں جاناں یاد کیا تجھ کو دلائیں ترا پیماں جاناں یونہی موسم کی ادا دیکھ کے یاد آیا ہے…

Read More..

ابھی کچھ اور کرشمے غزل کے دیکھتے ہیں – احمد فراز

ابھی کچھ اور کرشمے غزل کے دیکھتے ہیں فراز اب ذرا لہجہ بدل کے دیکھتے ہیں جدائیاں تو مقدر ہیں پھر بھی جانِ سفر کچھ…

Read More..

اس سے پہلے کہ بے وفا ہو جائیں – احمد فراز

اس سے پہلے کہ بے وفا ہو جائیں کیوں نہ اے دوست ہم جدا ہو جائیں تو بھی ہیرے سے بن گیا پتھر ہم بھی…

Read More..

کب تک درد کے تحفے بانٹو خونِ جگر سوغات کرو – احمد فراز

کب تک درد کے تحفے بانٹو خونِ جگر سوغات کرو ”جالب ہن گل مک گئی اے” ھن جان نوں ہی خیرات کرو کیسے کیسے دشمنِ…

Read More..

سلسلے توڑ گیا وہ سبھی جاتے جاتے – احمد فراز

سلسلے توڑ گیا وہ سبھی جاتے جاتے ورنہ اتنے تو مراسم تھے کہ آتے جاتے شکوہ ظلمتِ شب سے تو کہیں بہتر تھا اپنے حصے…

Read More..

تجھ پر بھی نہ ہو گمان میرا – احمد فراز

تجھ پر بھی نہ ہو گمان میرا اتنا بھی کہا نہ مان میرا میں دکھتے ہوئے دلوں کا عیسیٰ اور جسم لہو لہان میرا کچھ…

Read More..