کنارِ راوی – علامه محمد اقبال

کنارِ راوی
On the Bank of the Ravi
سکُوتِ شام میں محوِ سرود ہے راوی
Raft in its music, in evening’s hush, the Ravi;
نہ پُوچھ مجھ سے جو ہے کیفیت مرے دل کی
But how it is with this heart, do not ask—
پیام سجدے کا یہ زیروبم ہُوا مجھ کو
Hearing in these soft cadences a prayer-call,
جہاں تمام سوادِ حرم ہُوا مجھ کو
Seeing all earth God’s precinct, here beside
سرِ کنارۂ آبِ رواں کھڑا ہوں میں
The margins of the onward-flowing waters
خبر نہیں مجھے لیکن کہاں کھڑا ہوں میں
Standing I scarcely know where I am standing.
شرابِ سُرخ سے رنگیں ہوا ہے دامنِ شام
With palsied hand the taverner of heaven
لیے ہے پیرِ فلک دستِ رعشہ دار میں جام
Has brought the cup: red wine stains evening’s skirt;
عَدم کو قافلۂ روز تیزگام چلا
Day’s heading caravan has made haste towards – Extinction: twilight smoulders like hot ash
شفَق نہیں ہے، یہ سورج کے پھُول ہیں گویا
Of the sun’s funeral pyre. In solitude
کھڑے ہیں دُور وہ عظمت فزائے تنہائی
Far off, magnificent, those towers stand, where
منارِ خواب گہِ شہسوارِ چغتائی
The flower of Mughal chivalry lies asleep;
فسانۂ ستمِ انقلاب ہے یہ محل
A legend of Time’s tyranny is that palace;
کوئی زمانِ سلَف کی کتاب ہے یہ محل
A book, the register of days gone by;
مقام کیا ہے، سرودِ خموش ہے گویا
No mansion, but a melody of silence—
شجر، یہ انجمنِ بے خروش ہے گویا
No trees, but an unspeaking parliament.
رواں ہے سینۂ دریا پہ اک سفینۂ تیز
Swiftly across the river’s bosom glides
ہُوا ہے موج سے ملاّح جس کا گرمِ ستیز
A boat, the oarsman wrestling with the waves,
سبک روی میں ہے مثلِ نگاہ یہ کشتی
A skiff light-motioned as a darting glance,
نِکل کے حلقہ حدّ نظر سے دُور گئی
Soon far beyond the eye’s carved boundary.
جہازِ زندگیِ آدمی رواں ہے یونہی
So glides the bark of mortal life, in the ocean
ابَد کے بحر میں پیدا یونہی، نہاں ہے یونہی
Of eternity so born, so vanishing,
شکست سے یہ کبھی آشنا نہیں ہوتا
Yet never knowing what is death; for it
نظر سے چھُپتا ہے لیکن فنا نہیں ہوتا
May disappear from sight, but cannot perish.
کنارِ راوی
On the Bank of the Ravi
سکُوتِ شام میں محوِ سرود ہے راوی
Raft in its music, in evening’s hush, the Ravi;
نہ پُوچھ مجھ سے جو ہے کیفیت مرے دل کی
But how it is with this heart, do not ask—
پیام سجدے کا یہ زیروبم ہُوا مجھ کو
Hearing in these soft cadences a prayer-call,
جہاں تمام سوادِ حرم ہُوا مجھ کو
Seeing all earth God’s precinct, here beside
سرِ کنارۂ آبِ رواں کھڑا ہوں میں
The margins of the onward-flowing waters
خبر نہیں مجھے لیکن کہاں کھڑا ہوں میں
Standing I scarcely know where I am standing.
شرابِ سُرخ سے رنگیں ہوا ہے دامنِ شام
With palsied hand the taverner of heaven
لیے ہے پیرِ فلک دستِ رعشہ دار میں جام
Has brought the cup: red wine stains evening’s skirt;
عَدم کو قافلۂ روز تیزگام چلا
Day’s heading caravan has made haste towards – Extinction: twilight smoulders like hot ash
شفَق نہیں ہے، یہ سورج کے پھُول ہیں گویا
Of the sun’s funeral pyre. In solitude
کھڑے ہیں دُور وہ عظمت فزائے تنہائی
Far off, magnificent, those towers stand, where
منارِ خواب گہِ شہسوارِ چغتائی
The flower of Mughal chivalry lies asleep;
فسانۂ ستمِ انقلاب ہے یہ محل
A legend of Time’s tyranny is that palace;
کوئی زمانِ سلَف کی کتاب ہے یہ محل
A book, the register of days gone by;
مقام کیا ہے، سرودِ خموش ہے گویا
No mansion, but a melody of silence—
شجر، یہ انجمنِ بے خروش ہے گویا
No trees, but an unspeaking parliament.
رواں ہے سینۂ دریا پہ اک سفینۂ تیز
Swiftly across the river’s bosom glides
ہُوا ہے موج سے ملاّح جس کا گرمِ ستیز
A boat, the oarsman wrestling with the waves,
سبک روی میں ہے مثلِ نگاہ یہ کشتی
A skiff light-motioned as a darting glance,
نِکل کے حلقہ حدّ نظر سے دُور گئی
Soon far beyond the eye’s carved boundary.
جہازِ زندگیِ آدمی رواں ہے یونہی
So glides the bark of mortal life, in the ocean
ابَد کے بحر میں پیدا یونہی، نہاں ہے یونہی
Of eternity so born, so vanishing,
شکست سے یہ کبھی آشنا نہیں ہوتا
Yet never knowing what is death; for it
نظر سے چھُپتا ہے لیکن فنا نہیں ہوتا
May disappear from sight, but cannot perish.
RumiBalkhi.Com
:: ADVERTISEMENTS ::
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.