چھین کر مجھ سے پھر بیان – زین شکیل

چھین کر مجھ سے پھر بیان مِرا
لے گئے ہو کہاں نشان مِرا
میرے کمرے کو مضطرب پا کر
رونے لگتا ہے یہ مکان مِرا
وہ جہاں آنکھ سے ہوا اوجھل
بس وہیں رہ گیا ہے دھیان مِرا
ہجر اُس کا بڑے سلیقے سے
لینے آیا ہے امتحان مِرا
کیا بتاؤں کہ کس قدر ناراض
مجھ سے رہتا ہے خاندان مِرا
زین شکیل
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.