پھر سے آ کر کوئی احسان – زین شکیل

پھر سے آ کر کوئی احسان جتاتے جانا
ہو سکے گر تو ہمیں تم بھی بھلاتے جانا
اب یہ دروازہ کھلا دیکھ کے لوگ آئیں گے
تم ناں! جاتے ہوئے زنجیر لگاتے جانا
تم نہ سمجھو گے مگر یہ تو سمجھ جائیں گے
میری ہر بات پرندوں کو سناتے جانا
زندگی میں مجھے ناراض کیے رکھا ہے
میری میت کو ہی رو رو کے مناتے جانا
زین رُک رُک کے جو دیکھا بھی تو حاصل نا وصول
اب کسی موڑ پہ رُکنا نہیں! جاتے جانا!
زین شکیل
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.