پرندے کی فر یاد – علامه محمد اقبال

پرندے کی فر یاد
The Bird’s Complaintبچوں کے لیے
(For Children)
آتا ہے یاد مجھ کو گزرا ہوا زمانا
I am constantly reminded of the bygone times
وہ باغ کی بہاریں، وہ سب کا چہچہانا
Those garden’s springs, those chorus of chimes
آزادیاں کہاں وہ اب اپنے گھونسلے کی
Gone are the freedoms of our own nests
اپنی خوشی سے آنا، اپنی خوشی سے جانا
Where we could come and go at our own pleasure
لگتی ہے چوٹ دل پر، آتا ہے یاد جس دم
My heart aches the moment I think
شبنم کے آنسوؤں پر کلیوں کا مُسکرانا
Of the buds’ smile at the dew’s tears
وہ پیاری پیاری صورت، وہ کامنی سی مورت
That beautiful figure, that Kamini’s form
آباد جس کے دم سے تھا میرا آشیانا
Which source of happiness in my nest did form
آتی نہیں صدائیں اُس کی مرے قفس میں
I do not hear those lovely sounds in my cage now
ہوتی مری رہائی اے کاش میرے بس میں!
May it happen that my freedom be in my own hands now!
کیا بد نصیب ہوں مَیں گھر کو ترس رہا ہوں
How unfortunate I am, tantalized for my abode I am
ساتھی تو ہیں وطن میں، مَیں قید میں پڑا ہوں
My companions are in the home‑land, in the prison I am
آئی بہار، کلیاں پھُولوں کی ہنس رہی ہیں
Spring has arrived, the flower buds are laughing
مَیں اس اندھیرے گھر میں قسمت کو رو رہا ہوں
On my misfortune in this dark house I am wailing
اس قید کا الٰہی! دُکھڑا کسے سُناؤں
O God, To whom should I relate my tale of woe?
ڈر ہے یہیں قفسں میں مَیں غم سے مر نہ جاؤں
I fear lest I die in this cage with this woe!
جب سے چمن چھُٹا ہے، یہ حال ہو گیا ہے
Since separation from the garden the condition of my heart is such
دل غم کو کھا رہا ہے، غم دل کو کھا رہا ہے
My heart is waxing the grief, my grief is waxing the heart
گانا اسے سمجھ کر خوش ہوں نہ سُننے والے
O Listeners, considering this music do not be happy
دُکھّے ہوئے دلوں کی فریاد یہ صدا ہے
This call is the wailing of my wounded heart
آزاد مجھ کو کر دے، او قید کرنے والے!
O the one who confined me make me free
مَیں بے زباں ہوں قیدی، تو چھوڑ کر دُعا لے
A silent prisoner I am, earn my blessings freeپرندے کی فر یاد
The Bird’s Complaintبچوں کے لیے
(For Children)
آتا ہے یاد مجھ کو گزرا ہوا زمانا
I am constantly reminded of the bygone times
وہ باغ کی بہاریں، وہ سب کا چہچہانا
Those garden’s springs, those chorus of chimes
آزادیاں کہاں وہ اب اپنے گھونسلے کی
Gone are the freedoms of our own nests
اپنی خوشی سے آنا، اپنی خوشی سے جانا
Where we could come and go at our own pleasure
لگتی ہے چوٹ دل پر، آتا ہے یاد جس دم
My heart aches the moment I think
شبنم کے آنسوؤں پر کلیوں کا مُسکرانا
Of the buds’ smile at the dew’s tears
وہ پیاری پیاری صورت، وہ کامنی سی مورت
That beautiful figure, that Kamini’s form
آباد جس کے دم سے تھا میرا آشیانا
Which source of happiness in my nest did form
آتی نہیں صدائیں اُس کی مرے قفس میں
I do not hear those lovely sounds in my cage now
ہوتی مری رہائی اے کاش میرے بس میں!
May it happen that my freedom be in my own hands now!
کیا بد نصیب ہوں مَیں گھر کو ترس رہا ہوں
How unfortunate I am, tantalized for my abode I am
ساتھی تو ہیں وطن میں، مَیں قید میں پڑا ہوں
My companions are in the home‑land, in the prison I am
آئی بہار، کلیاں پھُولوں کی ہنس رہی ہیں
Spring has arrived, the flower buds are laughing
مَیں اس اندھیرے گھر میں قسمت کو رو رہا ہوں
On my misfortune in this dark house I am wailing
اس قید کا الٰہی! دُکھڑا کسے سُناؤں
O God, To whom should I relate my tale of woe?
ڈر ہے یہیں قفسں میں مَیں غم سے مر نہ جاؤں
I fear lest I die in this cage with this woe!
جب سے چمن چھُٹا ہے، یہ حال ہو گیا ہے
Since separation from the garden the condition of my heart is such
دل غم کو کھا رہا ہے، غم دل کو کھا رہا ہے
My heart is waxing the grief, my grief is waxing the heart
گانا اسے سمجھ کر خوش ہوں نہ سُننے والے
O Listeners, considering this music do not be happy
دُکھّے ہوئے دلوں کی فریاد یہ صدا ہے
This call is the wailing of my wounded heart
آزاد مجھ کو کر دے، او قید کرنے والے!
O the one who confined me make me free
مَیں بے زباں ہوں قیدی، تو چھوڑ کر دُعا لے
A silent prisoner I am, earn my blessings free
RumiBalkhi.Com
:: ADVERTISEMENTS ::
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.