پردہ – علامه محمد اقبال

پردہ
Veil
بہت رنگ بدلے سِپہرِ بریں نے
Great change the lofty spheres have met,
خدایا یہ دُنیا جہاں تھی، وہیں ہے
O God! the world has not budged as yet.
تفاوُت نہ دیکھا زن و شو میں مَیں نے
In man and wife is no contrast,
وہ خَلوت نشیں ہے، یہ خَلوت نشیں ہے
They like seclusion and hold it fast.
ابھی تک ہے پردے میں اولادِ آدم
The sons of Adam still wear the mask,
کسی کی خودی آشکارا نہیں ہے
But self hasn’t peeped out of the casque.پردہ
Veil
بہت رنگ بدلے سِپہرِ بریں نے
Great change the lofty spheres have met,
خدایا یہ دُنیا جہاں تھی، وہیں ہے
O God! the world has not budged as yet.
تفاوُت نہ دیکھا زن و شو میں مَیں نے
In man and wife is no contrast,
وہ خَلوت نشیں ہے، یہ خَلوت نشیں ہے
They like seclusion and hold it fast.
ابھی تک ہے پردے میں اولادِ آدم
The sons of Adam still wear the mask,
کسی کی خودی آشکارا نہیں ہے
But self hasn’t peeped out of the casque.
RumiBalkhi.Com
:: ADVERTISEMENTS ::
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.