ٹوٹ جانے کے واسطے – زین شکیل

ٹوٹ جانے کے واسطے لوگو
کافی ہوتا ہے ایک صدمہ بھی
پھر کسی کے لیے نہیں جیتا
جو بھی اک بار مر گیا تجھ پر
آخری باب لکھ دیا میں نے
ابتداؤں سے کچھ ذرا پہلے
تیری جانب نکل پڑا تھا میں
تھک گیا چین سے نہیں بیٹھا
آج بھی بے مراد لوٹ آئے
یہ مِرے خواب تیرے دَر جا کر
چاہے جیسی بھی ہے مگر دیکھو
ہے مری شاعری تمہارے نام
زین شکیل
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.