مردِ فرنگ – علامه محمد اقبال

مردِ فرنگ
The Frankish Man
ہزار بار حکیموں نے اس کو سُلجھایا
To solve this riddle thinkers have much tried,
مگر یہ مسئلۂ زن رہا وہیں کا وہیں
Their efforts all so far it has defied.
قصور زن کا نہیں ہے کچھ اس خرابی میں
No doubt, to woman’s faith and conduct clear,
گواہ اس کی شرافت پہ ہیں مہ و پرویں
The Pleiades and moon do witness bear.
فساد کا ہے فرنگی معاشرت میں ظہور
This vice in Frankish way of life we find,
کہ مرد سادہ ہے بیچارہ زن شناس نہیں
Men fools and blind, can’t read a woman’s mind.
مردِ فرنگ
The Frankish Man
ہزار بار حکیموں نے اس کو سُلجھایا
To solve this riddle thinkers have much tried,
مگر یہ مسئلۂ زن رہا وہیں کا وہیں
Their efforts all so far it has defied.
قصور زن کا نہیں ہے کچھ اس خرابی میں
No doubt, to woman’s faith and conduct clear,
گواہ اس کی شرافت پہ ہیں مہ و پرویں
The Pleiades and moon do witness bear.
فساد کا ہے فرنگی معاشرت میں ظہور
This vice in Frankish way of life we find,
کہ مرد سادہ ہے بیچارہ زن شناس نہیں
Men fools and blind, can’t read a woman’s mind.
RumiBalkhi.Com
:: ADVERTISEMENTS ::
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.