لینن – علامه محمد اقبال

لینن
Lenin(خدا کے حضور میں)
(Before God)
اے انفُس و آفاق میں پیدا ترے آیات
All space and all that breathes bear witness; truth
حق یہ ہے کہ ہے زندہ و پائندہ تِری ذات
It is indeed; Thou art, and dost remain.
میں کیسے سمجھتا کہ تو ہے یا کہ نہیں ہے
How could I know that God was or was not,
ہر دم متغّیر تھے خرد کے نظریّات
Where Reason’s reckonings shifted hour by hour?
محرم نہیں فطرت کے سرودِ اَزلی سے
The peerer at planets, the counter-up of plants,
بِینائے کواکب ہو کہ دانائے نباتات
Heard nothing there of Nature’s infinite music;
آج آنکھ نے دیکھا تو وہ عالم ہُوا ثابت
To-day I witnessing acknowledge realms
میں جس کو سمجھتا تھا کلیسا کے خرافات
That I once thought the mummery of the Church.
ہم بندِ شب و روز میں جکڑے ہُوئے بندے
We, manacled in the chains of day and night!
تُو خالقِ اعصار و نگارندۂ آنات!
Thou, moulder of all time’s atoms, builder of aeons!
اک بات اگر مجھ کو اجازت ہو تو پُوچھوں
Let me have leave to ask this question, one
حل کر نہ سکے جس کو حکیموں کے مقالات
Not answered by the subtleties of the schools,
جب تک میں جِیا خیمۂ افلاک کے نیچے
That while I lived under the sky-tent’s roof
کانٹے کی طرح دل میں کھٹکتی رہی یہ بات
Like a thorn rankled in my heart, and made
گفتار کے اسلوب پہ قابُو نہیں رہتا
Such chaos in my soul of all its thoughts
جب رُوح کے اندر متلاطم ہوں خیالات
I could not keep my tumbling words in bounds.
وہ کون سا آدم ہے کہ تُو جس کا ہے معبود
Oh, of what mortal race art Thou the God?
وہ آدمِ خاکی کہ جو ہے زیرِ سماوات؟
Those creatures formed of dust beneath these heavens?
مشرق کے خداوند سفیدانِ فرنگی
Europe’s pale cheeks are Asia’s pantheon,
مغرب کے خداوند درخشندہ فِلِزّات
And Europe’s pantheon her glittering metals.
یورپ میں بہت روشنیِ علم و ہُنر ہے
A blaze of art and science lights the West
حق یہ ہے کہ بے چشمۂ حیواں ہے یہ ظُلمات
With darkness that no Fountain of Life dispels;
رعنائیِ تعمیر میں، رونق میں، صفا میں
In high-reared grace, in glory and in grandeur,
گِرجوں سے کہیں بڑھ کے ہیں بنکوں کی عمارات
The towering Bank out-tops the cathedral roof;
ظاہر میں تجارت ہے، حقیقت میں جُوا ہے
What they call commerce is a game of dice
سُود ایک کا لاکھوں کے لیے مرگِ مفاجات
For one, profit, for millions swooping death.
یہ عِلم، یہ حِکمت، یہ تدبُّر، یہ حکومت
There science, philosophy, scholarship, government,
پیتے ہیں لہُو، دیتے ہیں تعلیمِ مساوات
Preach man’s equality and drink men’s blood;
بے کاری و عُریانی و مے خواری و اِفلاس
Naked debauch, and want, and unemployment—
کیا کم ہیں فرنگی مَدنِیّت کے فتوحات
Are these mean triumphs of the Frankish arts!
وہ قوم کہ فیضانِ سماوی سے ہو محروم
Denied celestial grace a nation goes
حد اُس کے کمالات کی ہے برق و بخارات
No further than electricity or steam;
ہے دل کے لیے موت مشینوں کی حکومت
Death to the heart, machines stand sovereign,
احساسِ مروّت کو کُچل دیتے ہیں آلات
Engines that crush all sense of human kindness.
آثار تو کچھ کچھ نظر آتے ہیں کہ آخر
–Yet signs are counted here and there that Fate,
تدبیر کو تقدیر کے شاطر نے کیا مات
The chess-player, has check-mated all their cunning.
میخانے کی بُنیاد میں آیا ہے تزَلزُل
The Tavern shakes, its warped foundations crack,
بیٹھے ہیں اسی فکر میں پِیرانِ خرابات
The Old Men of Europe sit there numb with fear;
چہروں پہ جو سُرخی نظر آتی ہے سرِ شام
What twilight flush is left those faces now
یا غازہ ہے یا ساغر و مِینا کی کرامات
Is paint and powder, or lent by flask and cup.
تو قادر و عادل ہے مگر تیرے جہاں میں
Omnipotent, righteous, Thou; but bitter the hours,
ہیں تلخ بہت بندۂ مزدور کے اوقات
Bitter the labourer’s chained hours in Thy world!
کب ڈُوبے گا سرمایہ پرستی کا سفینہ؟
When shall this galley of gold’s dominion flounder?
دُنیا ہے تری منتظرِ روزِ مکافات!
Thy world Thy day of wrath, Lord, stands and waits.لینن
Lenin(خدا کے حضور میں)
(Before God)
اے انفُس و آفاق میں پیدا ترے آیات
All space and all that breathes bear witness; truth
حق یہ ہے کہ ہے زندہ و پائندہ تِری ذات
It is indeed; Thou art, and dost remain.
میں کیسے سمجھتا کہ تو ہے یا کہ نہیں ہے
How could I know that God was or was not,
ہر دم متغّیر تھے خرد کے نظریّات
Where Reason’s reckonings shifted hour by hour?
محرم نہیں فطرت کے سرودِ اَزلی سے
The peerer at planets, the counter-up of plants,
بِینائے کواکب ہو کہ دانائے نباتات
Heard nothing there of Nature’s infinite music;
آج آنکھ نے دیکھا تو وہ عالم ہُوا ثابت
To-day I witnessing acknowledge realms
میں جس کو سمجھتا تھا کلیسا کے خرافات
That I once thought the mummery of the Church.
ہم بندِ شب و روز میں جکڑے ہُوئے بندے
We, manacled in the chains of day and night!
تُو خالقِ اعصار و نگارندۂ آنات!
Thou, moulder of all time’s atoms, builder of aeons!
اک بات اگر مجھ کو اجازت ہو تو پُوچھوں
Let me have leave to ask this question, one
حل کر نہ سکے جس کو حکیموں کے مقالات
Not answered by the subtleties of the schools,
جب تک میں جِیا خیمۂ افلاک کے نیچے
That while I lived under the sky-tent’s roof
کانٹے کی طرح دل میں کھٹکتی رہی یہ بات
Like a thorn rankled in my heart, and made
گفتار کے اسلوب پہ قابُو نہیں رہتا
Such chaos in my soul of all its thoughts
جب رُوح کے اندر متلاطم ہوں خیالات
I could not keep my tumbling words in bounds.
وہ کون سا آدم ہے کہ تُو جس کا ہے معبود
Oh, of what mortal race art Thou the God?
وہ آدمِ خاکی کہ جو ہے زیرِ سماوات؟
Those creatures formed of dust beneath these heavens?
مشرق کے خداوند سفیدانِ فرنگی
Europe’s pale cheeks are Asia’s pantheon,
مغرب کے خداوند درخشندہ فِلِزّات
And Europe’s pantheon her glittering metals.
یورپ میں بہت روشنیِ علم و ہُنر ہے
A blaze of art and science lights the West
حق یہ ہے کہ بے چشمۂ حیواں ہے یہ ظُلمات
With darkness that no Fountain of Life dispels;
رعنائیِ تعمیر میں، رونق میں، صفا میں
In high-reared grace, in glory and in grandeur,
گِرجوں سے کہیں بڑھ کے ہیں بنکوں کی عمارات
The towering Bank out-tops the cathedral roof;
ظاہر میں تجارت ہے، حقیقت میں جُوا ہے
What they call commerce is a game of dice
سُود ایک کا لاکھوں کے لیے مرگِ مفاجات
For one, profit, for millions swooping death.
یہ عِلم، یہ حِکمت، یہ تدبُّر، یہ حکومت
There science, philosophy, scholarship, government,
پیتے ہیں لہُو، دیتے ہیں تعلیمِ مساوات
Preach man’s equality and drink men’s blood;
بے کاری و عُریانی و مے خواری و اِفلاس
Naked debauch, and want, and unemployment—
کیا کم ہیں فرنگی مَدنِیّت کے فتوحات
Are these mean triumphs of the Frankish arts!
وہ قوم کہ فیضانِ سماوی سے ہو محروم
Denied celestial grace a nation goes
حد اُس کے کمالات کی ہے برق و بخارات
No further than electricity or steam;
ہے دل کے لیے موت مشینوں کی حکومت
Death to the heart, machines stand sovereign,
احساسِ مروّت کو کُچل دیتے ہیں آلات
Engines that crush all sense of human kindness.
آثار تو کچھ کچھ نظر آتے ہیں کہ آخر
–Yet signs are counted here and there that Fate,
تدبیر کو تقدیر کے شاطر نے کیا مات
The chess-player, has check-mated all their cunning.
میخانے کی بُنیاد میں آیا ہے تزَلزُل
The Tavern shakes, its warped foundations crack,
بیٹھے ہیں اسی فکر میں پِیرانِ خرابات
The Old Men of Europe sit there numb with fear;
چہروں پہ جو سُرخی نظر آتی ہے سرِ شام
What twilight flush is left those faces now
یا غازہ ہے یا ساغر و مِینا کی کرامات
Is paint and powder, or lent by flask and cup.
تو قادر و عادل ہے مگر تیرے جہاں میں
Omnipotent, righteous, Thou; but bitter the hours,
ہیں تلخ بہت بندۂ مزدور کے اوقات
Bitter the labourer’s chained hours in Thy world!
کب ڈُوبے گا سرمایہ پرستی کا سفینہ؟
When shall this galley of gold’s dominion flounder?
دُنیا ہے تری منتظرِ روزِ مکافات!
Thy world Thy day of wrath, Lord, stands and waits.
RumiBalkhi.Com
:: ADVERTISEMENTS ::
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.