فاطمہ بنت عبداللہ – علامه محمد اقبال

فاطمہ بنت عبداللہ
Fatima Bint ‘Abdullahعرب لڑکی جو طرابلس کی جنگ میں غازیوں کو پانی پِلاتی ہوئی شہید ہُوئی
An Arab Girl who was martyred while Serving Water to the Fighters against Infidels in the Battle of Tripoli۱۹۱۲ء
(1912)
فاطمہ! تُو آبرُوئے اُمّتِ مرحوم ہے
Fatima, you are the pride of the Community God bless it!
ذرّہ ذرّہ تیری مُشتِ خاک کا معصوم ہے
Your dust is holy, every particle of it.
یہ سعادت، حُورِ صحرائی! تری قسمت میں تھی
You, houri of the desert, were fated to win such merit!
غازیانِ دیں کی سقّائی تری قسمت میں تھی
To give the soldiers of Islam water to drink qas to be your good fortune.
یہ جہاد اللہ کے رستے میں بے تیغ و سِپَر
A jihad in the way of God, waged without sword or shield!
ہے جسارت آفریں شوقِ شہادت کس قدر
What courage the love of martyrdom gives!
یہ کلی بھی اس گُلستانِ خزاں منظر میں تھی
that in our autumn‑stricken garden there were flower‑buds like this!
ایسی چنگاری بھی یا رب، اپنی خاکستر میں تھی!
that a spark like this, dear Lord, could be found in our ashes!
اپنے صحرا میں بہت آہُو ابھی پوشیدہ ہیں
In our desert many deer still hide!
بجلیاں برسے ہُوئے بادل میں بھی خوابیدہ ہیں!
And in the spent clouds many flashes of lightning still lie dormant!
فاطمہ! گو شبنم افشاں آنکھ تیرے غم میں ہے
Fatima, though our grieving eyes weep tears like dew over you,
نغمۂ عشرت بھی اپنے نالۂ ماتم میں ہے
Our dirge is also a celebration song.
رقص تیری خاک کا کتنا نشاط انگیز ہے
How thrilling is the dance of your dust,
ذرّہ ذرّہ زندگی کے سوز سے لبریز ہے
Every atom of which is charged with life.
ہے کوئی ہنگامہ تیری تُربتِ خاموش میں
There is stirring in your quiet grave:
پل رہی ہے ایک قومِ تازہ اس آغوش میں
Within it a new nation is being reared.
بے خبر ہوں گرچہ اُن کی وسعتِ مقصد سے میں
Though I know nothing of the range of its ambition,
آفرینش دیکھتا ہوں اُن کی اس مرقد سے میں
I see them spring to life from this tomb.
تازہ انجم کا فضائے آسماں میں ہے ظہور
New stars are appearing in the sky above, stars whose rolling waves of light
دیدۂ انساں سے نامحرم ہے جن کی موجِ نور
Have not been seen by the eyes of man;
جو ابھی اُبھرے ہیں ظُلمت خانۂ ایّام سے
Stars just risen out of the dark dungeon of time,
جن کی ضَو ناآشنا ہے قیدِ صبح و شام سے
Stars whose light is not hostage to day and night;
جن کی تابانی میں اندازِ کُہن بھی، نَو بھی ہے
Stars whose radiance is both old and new,
اور تیرے کوکبِ تقدیر کا پرتَو بھی ہے
And partakes of the splendour of the star of your destiny too.فاطمہ بنت عبداللہ
Fatima Bint ‘Abdullahعرب لڑکی جو طرابلس کی جنگ میں غازیوں کو پانی پِلاتی ہوئی شہید ہُوئی
An Arab Girl who was martyred while Serving Water to the Fighters against Infidels in the Battle of Tripoli۱۹۱۲ء
(1912)
فاطمہ! تُو آبرُوئے اُمّتِ مرحوم ہے
Fatima, you are the pride of the Community ‑God bless it!
ذرّہ ذرّہ تیری مُشتِ خاک کا معصوم ہے
Your dust is holy, every particle of it.
یہ سعادت، حُورِ صحرائی! تری قسمت میں تھی
You, houri of the desert, were fated to win such merit!
غازیانِ دیں کی سقّائی تری قسمت میں تھی
To give the soldiers of Islam water to drink qas to be your good fortune.
یہ جہاد اللہ کے رستے میں بے تیغ و سِپَر
A jihad in the way of God, waged without sword or shield!
ہے جسارت آفریں شوقِ شہادت کس قدر
What courage the love of martyrdom gives!
یہ کلی بھی اس گُلستانِ خزاں منظر میں تھی
that in our autumn‑stricken garden there were flower‑buds like this!
ایسی چنگاری بھی یا رب، اپنی خاکستر میں تھی!
that a spark like this, dear Lord, could be found in our ashes!
اپنے صحرا میں بہت آہُو ابھی پوشیدہ ہیں
In our desert many deer still hide!
بجلیاں برسے ہُوئے بادل میں بھی خوابیدہ ہیں!
And in the spent clouds many flashes of lightning still lie dormant!
فاطمہ! گو شبنم افشاں آنکھ تیرے غم میں ہے
Fatima, though our grieving eyes weep tears like dew over you,
نغمۂ عشرت بھی اپنے نالۂ ماتم میں ہے
Our dirge is also a celebration song.
رقص تیری خاک کا کتنا نشاط انگیز ہے
How thrilling is the dance of your dust,
ذرّہ ذرّہ زندگی کے سوز سے لبریز ہے
Every atom of which is charged with life.
ہے کوئی ہنگامہ تیری تُربتِ خاموش میں
There is stirring in your quiet grave:
پل رہی ہے ایک قومِ تازہ اس آغوش میں
Within it a new nation is being reared.
بے خبر ہوں گرچہ اُن کی وسعتِ مقصد سے میں
Though I know nothing of the range of its ambition,
آفرینش دیکھتا ہوں اُن کی اس مرقد سے میں
I see them spring to life from this tomb.
تازہ انجم کا فضائے آسماں میں ہے ظہور
New stars are appearing in the sky above, stars whose rolling waves of light
دیدۂ انساں سے نامحرم ہے جن کی موجِ نور
Have not been seen by the eyes of man;
جو ابھی اُبھرے ہیں ظُلمت خانۂ ایّام سے
Stars just risen out of the dark dungeon of time,
جن کی ضَو ناآشنا ہے قیدِ صبح و شام سے
Stars whose light is not hostage to day and night;
جن کی تابانی میں اندازِ کُہن بھی، نَو بھی ہے
Stars whose radiance is both old and new,
اور تیرے کوکبِ تقدیر کا پرتَو بھی ہے
And partakes of the splendour of the star of your destiny too.
RumiBalkhi.Com
:: ADVERTISEMENTS ::
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.