طارق کی دُعا – علامه محمد اقبال

طارق کی دُعا
Tariq’s Prayer(اندلس کے میدانِ جنگ میں)
(In the Battlefield of Andalusia)
یہ غازی، یہ تیرے پُر اسرار بندے
These warriors, victorious, these worshippers of Thine,
جنھیں تُو نے بخشا ہے ذوقِ خدائی
Whom Thou hast granted the will to win power in Thy name;
دونیم ان کی ٹھوکر سے صحرا و دریا
Who cleave rivers and woods in twain,
سِمٹ کر پہاڑ ان کی ہیبت سے رائی
Whose terror turns mountains into dust;
دو عالم سے کرتی ہے بیگانہ دل کو
They care not for the world; They care not for its pleasures;
عجب چیز ہے لذّتِ آشنائی
In their passion, in their zeal, In their love for Thee, O Lord,
شہادت ہے مطلوب و مقصودِ مومن
They aim at martyrdom,
نہ مالِ غنیمت نہ کِشور کشائی
Not the rule of the earth.
خیاباں میں ہے مُنتظر لالہ کب سے
Thou hast united warring tribes,
قبا چاہیے اس کو خُونِ عرب سے
In thought, in deed, in prayer.
کیا تُو نے صحرا نشینوں کو یکتا
The burning fire that life had sought
خبر میں، نظر میں، اذانِ سحَر میں
null
طلب جس کی صدیوں سے تھی زندگی کو
For centuries, was found in them at last.
وہ سوز اس نے پایا انھی کے جگر میں
null
کُشادِ درِ دل سمجھتے ہیں اس کو
null
ہلاکت نہیں موت ان کی نظر میں
They think of death, not as life’s end,
دلِ مردِ مومن میں پھر زندہ کر دے
But as the ennobling of the heart.
وہ بجلی کہ تھی نعرۂ ’لَاتَذَر‘ میں
null
عزائم کو سینوں میں بیدار کر دے
Awaken in them an iron will,
نگاہِ مسلماں کو تلوار کر دے!
And make their eye a sharpened sword.طارق کی دُعا
Tariq’s Prayer(اندلس کے میدانِ جنگ میں)
(In the Battlefield of Andalusia)
یہ غازی، یہ تیرے پُر اسرار بندے
These warriors, victorious, these worshippers of Thine,
جنھیں تُو نے بخشا ہے ذوقِ خدائی
Whom Thou hast granted the will to win power in Thy name;
دونیم ان کی ٹھوکر سے صحرا و دریا
Who cleave rivers and woods in twain,
سِمٹ کر پہاڑ ان کی ہیبت سے رائی
Whose terror turns mountains into dust;
دو عالم سے کرتی ہے بیگانہ دل کو
They care not for the world; They care not for its pleasures;
عجب چیز ہے لذّتِ آشنائی
In their passion, in their zeal, In their love for Thee, O Lord,
شہادت ہے مطلوب و مقصودِ مومن
They aim at martyrdom,
نہ مالِ غنیمت نہ کِشور کشائی
Not the rule of the earth.
خیاباں میں ہے مُنتظر لالہ کب سے
Thou hast united warring tribes,
قبا چاہیے اس کو خُونِ عرب سے
In thought, in deed, in prayer.
کیا تُو نے صحرا نشینوں کو یکتا
The burning fire that life had sought
خبر میں، نظر میں، اذانِ سحَر میں
null
طلب جس کی صدیوں سے تھی زندگی کو
For centuries, was found in them at last.
وہ سوز اس نے پایا انھی کے جگر میں
null
کُشادِ درِ دل سمجھتے ہیں اس کو
null
ہلاکت نہیں موت ان کی نظر میں
They think of death, not as life’s end,
دلِ مردِ مومن میں پھر زندہ کر دے
But as the ennobling of the heart.
وہ بجلی کہ تھی نعرۂ ’لَاتَذَر‘ میں
null
عزائم کو سینوں میں بیدار کر دے
Awaken in them an iron will,
نگاہِ مسلماں کو تلوار کر دے!
And make their eye a sharpened sword.
RumiBalkhi.Com
:: ADVERTISEMENTS ::
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.