دل بچہ ہےدل بچہ – زین شکیل

دل بچہ ہے
دل بچہ ہے!
دل اک چھوٹا سا بچہ ہے !
دل ازلوں سے معصوم صِفَت!
اسے دن کا غم اسے رات کا غم
اسے آنکھوں کی برسات کا غم
اسے چبھنے والی ہر اک چھوٹی سے چھوٹی سی بات کا غم
دل ساون ہے دل بادل ہے
دل آوارہ دل پاگل ہے
دل بات شعور کی کب مانا، دل پاگل جھّلا دیوانہ
دل یار، سجن، دل بیلی ہے
پر دل کی ذات اکیلی ہے
دل ہنستا ہے دل روتا ہے،دل کتنے خواب پروتا ہے
دل اس دنیا سے تنگ بہت
دل اپنا مست ملنگ بہت
غم کیونکر دل کے ساتھ آیا، دل کن لوگوں کے ہاتھ آیا
رہے کوئی نہ دل میں ڈر ڈھولا
دل پاک خدا کا گھر ڈھولا
دل ثور، حرا، دل طور سجن، دل مجنوں دل منصور، سجن
دل خاص عقیدت والا ہے
دل پاک محبت والا ہے
دل ازلوں سے معصوم صِفَت!
دل اک چھوٹا سا بچہ ہے !
زین شکیل
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.