درد سوغات تھی اداسی – زین شکیل

درد سوغات تھی اداسی کی
چاندنی رات تھی اداسی کی
آج چہرہ نہیں تھا پہلے سا
کوئی تو بات تھی اداسی کی
آئینہ دیکھ کر کھلا یارو
یہ ملاقات تھی اداسی کی
خواہ مخواہ اشکبار ہو بیٹھے
سرسری بات تھی اداسی کی
زینؔ! مصروف ہو گئے اب تو
یار کیا بات تھی اداسی کی!
زین شکیل
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.