حُسن و عشق – علامه محمد اقبال

حُسن و عشق
The Beauty and the Love
جس طرح ڈُوبتی ہے کشتیِ سیمینِ قمر
Just as the moon’s silver boat is drowned
نورِ خورشید کے طوفان میں ہنگامِ سحَر
In the storm of sun’s light at the break of dawn
جیسے ہو جاتا ہے گُم نور کا لے کر آنچل
Just as the moon-like lotus disappears
چاندنی رات میں مہتاب کا ہم رنگ کنول
Behind the veil of light in the moon-lit night
جلوۂ طُور میں جیسے یدِ بیضائے کلیم
Just like the Kaleem’s radiant palm in the Tur’s effulgence
موجۂ نگہتِ گُلزار میں غنچے کی شمیم
And the flower bud’s fragrance in the wave of garden’s breeze
ہے ترے سیلِ محبّت میں یونہی دل میرا
Similar is my heart in the flood of Thy Love
تُو جو محفل ہے تو ہنگامۂ محفل ہوں میں
If Thou art the assembly, I am the assembly’s splendour
حُسن کی برق ہے تُو، عشق کا حاصل ہوں میں
If Thou art the Beauty’s thunder, I am the produce of Love
تُو سحَر ہے تو مرے اشک ہیں شبنم تیری
If Thou art the dawn, my tears are Thy dew
شامِ غربت ہوں اگر مَیں تو شفَق تُو میری
If I am traveller’s night, Thou art my twilight
مرے دل میں تری زُلفوں کی پریشانی ہے
My heart harbours Thy dishevelled hair locks
تری تصویر سے پیدا مری حیرانی ہے
My bewilderment is created by Thy picture
حُسن کامل ہے ترا، عشق ہے کامل میرا
Thy Beauty is Perfect, my Love is perfect
ہے مرے باغِ سخن کے لیے تُو بادِ بہار
Thou art the spring’s breeze for my poetry’s garden
میرے بیتاب تخیّل کو دیا تُو نے قرار
Thou gave tranquillity to my restless imagination
جب سے آباد ترا عشق ہوا سینے میں
Since Thy Love took residence in my breast
نئے جوہر ہوئے پیدا مرے آئینے میں
New lights have been added to my mirror
حُسن سے عشق کی فطرت کو ہے تحریکِ کمال
Love’s nature gets stimulation for Perfection from Beauty
تجھ سے سر سبز ہوئے میری اُمیدوں کے نہال
My hope’s trees flourished through Thy favour
قافلہ ہو گیا آسُودۂ منزل میرا
My caravan has reached its destination.حُسن و عشق
The Beauty and the Love
جس طرح ڈُوبتی ہے کشتیِ سیمینِ قمر
Just as the moon’s silver boat is drowned
نورِ خورشید کے طوفان میں ہنگامِ سحَر
In the storm of sun’s light at the break of dawn
جیسے ہو جاتا ہے گُم نور کا لے کر آنچل
Just as the moon-like lotus disappears
چاندنی رات میں مہتاب کا ہم رنگ کنول
Behind the veil of light in the moon-lit night
جلوۂ طُور میں جیسے یدِ بیضائے کلیم
Just like the Kaleem’s radiant palm in the Tur’s effulgence
موجۂ نگہتِ گُلزار میں غنچے کی شمیم
And the flower bud’s fragrance in the wave of garden’s breeze
ہے ترے سیلِ محبّت میں یونہی دل میرا
Similar is my heart in the flood of Thy Love
تُو جو محفل ہے تو ہنگامۂ محفل ہوں میں
If Thou art the assembly, I am the assembly’s splendour
حُسن کی برق ہے تُو، عشق کا حاصل ہوں میں
If Thou art the Beauty’s thunder, I am the produce of Love
تُو سحَر ہے تو مرے اشک ہیں شبنم تیری
If Thou art the dawn, my tears are Thy dew
شامِ غربت ہوں اگر مَیں تو شفَق تُو میری
If I am traveller’s night, Thou art my twilight
مرے دل میں تری زُلفوں کی پریشانی ہے
My heart harbours Thy dishevelled hair locks
تری تصویر سے پیدا مری حیرانی ہے
My bewilderment is created by Thy picture
حُسن کامل ہے ترا، عشق ہے کامل میرا
Thy Beauty is Perfect, my Love is perfect
ہے مرے باغِ سخن کے لیے تُو بادِ بہار
Thou art the spring’s breeze for my poetry’s garden
میرے بیتاب تخیّل کو دیا تُو نے قرار
Thou gave tranquillity to my restless imagination
جب سے آباد ترا عشق ہوا سینے میں
Since Thy Love took residence in my breast
نئے جوہر ہوئے پیدا مرے آئینے میں
New lights have been added to my mirror
حُسن سے عشق کی فطرت کو ہے تحریکِ کمال
Love’s nature gets stimulation for Perfection from Beauty
تجھ سے سر سبز ہوئے میری اُمیدوں کے نہال
My hope’s trees flourished through Thy favour
قافلہ ہو گیا آسُودۂ منزل میرا
My caravan has reached its destination.
RumiBalkhi.Com
:: ADVERTISEMENTS ::
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.