حضورِ رسالت مآبؐ میں – علامه محمد اقبال

حضورِ رسالت مآبؐ میں
Before the Prophet’s Throne
گراں جو مجھ پہ یہ ہنگامۂ زمانہ ہُوا
Sick of this world and all this world’s tumult
جہاں سے باندھ کے رختِ سفر روانہ ہُوا
I who had lived fettered to dawn and sunset,
قیودِ شام و سحَر میں بسر تو کی لیکن
Yet never fathomed the planet’s hoary laws,
نظامِ کُہنۂ عالم سے آشنا نہ ہُوا
Taking provisions for my way set out
فرشتے بزمِ رسالتؐ میں لے گئے مجھ کو
From earth, and angels led me where the Prophet
حضورِ آیۂ رحمتؐ میں لے گئے مجھ کو
Holds audience, and before the mercy-seat.
کہا حضورؐ نے، اے عندلیبِ باغِ حجاز!
‘Nightingale of the gardens of Hijaz! each bud
کلی کلی ہے تری گرمیِ نوا سے گُداز
Is melting,’ said those Lips, ‘in your song’s passion-flood;
ہمیشہ سرخوشِ جامِ وِلا ہے دل تیرا
Your heart forever steeped in the wine of ecstasy,
فتادگی ہے تری غیرتِ سجودِ نیاز
Your reeling feet nobler than any suppliant knee.
اُڑا جو پستیِ دنیا سے تُو سُوئے گردُوں
But since, taught by these Seraphim to mount so high,
سِکھائی تجھ کو ملائک نے رفعتِ پرواز
You have soared up from nether realms towards the sky
نکل کے باغِ جہاں سے برنگِ بُو آیا
And like a scent comes here from the orchards of the earth—
ہمارے واسطے کیا تُحفہ لے کے تُو آیا؟
What do you bring for us, what is your offering worth?’
“حضورؐ! دہر میں آسُودگی نہیں مِلتی
‘Master! there is no quiet in that land of time and space,
تلاش جس کی ہے وہ زندگی نہیں مِلتی
Where the existence that we crave hides and still hides its face;
ہزاروں لالہ و گُل ہیں ریاضِ ہستی میں
Though all creation’s flowerbeds teem with tulip and red rose,
وفا کی جس میں ہو بُو، وہ کلی نہیں مِلتی
The flower whose perfume is true love—that flower no garden knows.
مگر میں نذر کو اک آبگینہ لایا ہوں
But I have brought this chalice here to make my sacrifice;
جو چیز اس میں ہے، جنّت میں بھی نہیں ملتی
The thing it holds you will not find in all your Paradise.
جھلکتی ہے تری اُمّت کی آبرو اس میں
See here, oh Lord, the honour of your people brimming up!
طرابلس کے شہیدوں کا ہے لہُو اس میں”
The martyred blood of Tripoli, oh Lord, is in this cup.’
حضورِ رسالت مآبؐ میں
Before the Prophet’s Throne
گراں جو مجھ پہ یہ ہنگامۂ زمانہ ہُوا
Sick of this world and all this world’s tumult
جہاں سے باندھ کے رختِ سفر روانہ ہُوا
I who had lived fettered to dawn and sunset,
قیودِ شام و سحَر میں بسر تو کی لیکن
Yet never fathomed the planet’s hoary laws,
نظامِ کُہنۂ عالم سے آشنا نہ ہُوا
Taking provisions for my way set out
فرشتے بزمِ رسالتؐ میں لے گئے مجھ کو
From earth, and angels led me where the Prophet
حضورِ آیۂ رحمتؐ میں لے گئے مجھ کو
Holds audience, and before the mercy-seat.
کہا حضورؐ نے، اے عندلیبِ باغِ حجاز!
‘Nightingale of the gardens of Hijaz! each bud
کلی کلی ہے تری گرمیِ نوا سے گُداز
Is melting,’ said those Lips, ‘in your song’s passion-flood;
ہمیشہ سرخوشِ جامِ وِلا ہے دل تیرا
Your heart forever steeped in the wine of ecstasy,
فتادگی ہے تری غیرتِ سجودِ نیاز
Your reeling feet nobler than any suppliant knee.
اُڑا جو پستیِ دنیا سے تُو سُوئے گردُوں
But since, taught by these Seraphim to mount so high,
سِکھائی تجھ کو ملائک نے رفعتِ پرواز
You have soared up from nether realms towards the sky
نکل کے باغِ جہاں سے برنگِ بُو آیا
And like a scent comes here from the orchards of the earth—
ہمارے واسطے کیا تُحفہ لے کے تُو آیا؟
What do you bring for us, what is your offering worth?’
“حضورؐ! دہر میں آسُودگی نہیں مِلتی
‘Master! there is no quiet in that land of time and space,
تلاش جس کی ہے وہ زندگی نہیں مِلتی
Where the existence that we crave hides and still hides its face;
ہزاروں لالہ و گُل ہیں ریاضِ ہستی میں
Though all creation’s flowerbeds teem with tulip and red rose,
وفا کی جس میں ہو بُو، وہ کلی نہیں مِلتی
The flower whose perfume is true love—that flower no garden knows.
مگر میں نذر کو اک آبگینہ لایا ہوں
But I have brought this chalice here to make my sacrifice;
جو چیز اس میں ہے، جنّت میں بھی نہیں ملتی
The thing it holds you will not find in all your Paradise.
جھلکتی ہے تری اُمّت کی آبرو اس میں
See here, oh Lord, the honour of your people brimming up!
طرابلس کے شہیدوں کا ہے لہُو اس میں”
The martyred blood of Tripoli, oh Lord, is in this cup.’
RumiBalkhi.Com
:: ADVERTISEMENTS ::
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.