توڑ کے دل کو کیا – افتخار راغب

غزل
توڑ کے دل کو کیا ملتا ہے سچ بولو
دل کو تم نے سمجھا کیا ہے سچ بولو
تم کیا جانو وصل کی لذّت ہجر کا غم
تم نے کسی سے پیار کیا ہے سچ بولو
کس کے خواب سے آنکھیں روشن روشن ہیں
کون تصوّر میں رہتا ہے سچ بولو
کس کی غزلیں ذہن پہ چھائی رہتی ہیں
کس کے شعر کا دل شیدا ہے سچ بولو
تم کو کسی سے عشق نہیں یہ سچ ہے مگر
کون تمھیں اچھّا لگتا ہے سچ بولو
شاعر: افتخار راغبؔ
کتاب: لفظوں میں احساس

Hits: 3

:: ADVERTISEMENTS ::

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

You may use these <abbr title="HyperText Markup Language">HTML</abbr> tags and attributes: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.