تصویرِ درد – علامه محمد اقبال

تصویرِ درد
The Portrait of Anguish
نہیں منّت کشِ تابِ شنیدن داستاں میری
My story is not indebted to the patience of being heard
خموشی گفتگو ہے، بے زبانی ہے زباں میری
My silence is my talk, my speechlessness is my speech
یہ دستورِ زباں بندی ہے کیسا تیری محفل میں
Why does this custom of silencing exist in your assembly?
یہاں تو بات کرنے کو ترستی ہے زباں میری
My tongue is tantalized to talk in this assembly
اُٹھائے کچھ وَرق لالے نے، کچھ نرگس نے، کچھ گُل نے
Some leaves were picked up by the tulip, some by the narcissus, some by the rose
چمن میں ہر طرف بِکھری ہُوئی ہے داستاں میری
My story is scattered around everywhere in the garden
اُڑالی قُمریوں نے، طُوطیوں نے، عندلیبوں نے
The turtle-doves, parrots, and nightingales pilfered away
چمن والوں نے مِل کر لُوٹ لی طرزِ فغاں میری
The garden’s denizens jointly robbed away my plaintive way
ٹپک اے شمع آنسو بن کے پروانے کی آنکھوں سے
O Candle! Drip like tears from the eye of the moth
سراپا درد ہوں، حسرت بھری ہے داستاں میری
Head to foot pathos I am, full of longing is my story
الٰہی! پھر مزا کیا ہے یہاں دنیا میں رہنے کا
O God! What is the pleasure of living so in this world?
حیاتِ جاوداں میری، نہ مرگِ ناگہاں میری!
Neither the eternal life, nor the sudden death is mine
مرا رونا نہیں، رونا ہے یہ سارے گُلستاں کا
This is not only my wailing, but is that of the entire garden
وہ گُل ہوں مَیں، خزاں ہر گُل کی ہے گویا خزاں میری
I am a rose, to me every rose’ autumn is my autumn
“دریں حسرت سرا عمریست افسونِ جرس دارم
“In this grief-stricken land, in life-long spell of the caravan’s bell I am
ز فیضِ دل تپیدنہا خروشِ بے نفَس دارم”
From the palpitating heart’s bounties the silent clamor I have“
ریاضِ دہر میں ناآشنائے بزمِ عشرت ہوں
In the world’s garden unaware of pleasant company I am
خوشی روتی ہے جس کو، مَیں وہ محرومِ مسرّت ہوں
Whom happiness still mourns, that hapless person I am
مری بگڑی ہوئی تقدیر کو روتی ہے گویائی
Speech itself sheds tears at my ill luck
مَیں حرفِ زیرِ لب، شرمندۂ گوشِ سماعت ہوں
Silent word, longing for an eager ear I am
پریشاں ہوں میں مُشتِ خاک، لیکن کچھ نہیں کھُلتا
I am a mere handful of scattered dust but I do not know
سکندر ہوں کہ آئینہ ہوں یا گردِ کدُورت ہوں
Whether Alexander or a mirror or just dust and scum I am
یہ سب کچھ ہے مگر ہستی مری مقصد ہے قُدرت کا
Despite all this my existence is the Divine Purpose
سراپا نور ہو جس کی حقیقت، مَیں وہ ظلمت ہوں
Embodiment of light is whose reality, that darkness I am
خزینہ ہُوں، چھُپایا مجھ کو مُشتِ خاکِ صحرا نے
I am a treasure, concealed in the wilderness dust
کسی کو کیا خبر ہے مَیں کہاں ہوں کس کی دولت ہوں!
No one knows where I am, or whose wealth I am?
نظر میری نہیں ممنونِ سیرِ عرصۂ ہستی
My insight is not obligated to the stroll of existence
مَیں وہ چھوٹی سی دنیا ہوں کہ آپ اپنی ولایت ہوں
That small world I am whose sovereign myself I am
نہ صہباہوں نہ ساقی ہوں، نہ مستی ہوں نہ پیمانہ
Neither wine, nor cup-bearer, nor ecstasy, nor goblet I am
مَیں اس میخانۂ ہستی میں ہر شے کی حقیقت ہوں
But the truth of everything in the existence’ tavern I am
مجھے رازِ دو عالم دل کا آئینہ دِکھاتا ہے
My heart’s mirror shows me both world’s secrets
وہی کہتا ہوں جو کچھ سامنے آنکھوں کے آتا ہے
I relate exactly what I witness before my eyes
عطا ایسا بیاں مجھ کو ہُوا رنگیں بیانوں میں
I am bestowed with such speech among the elegant speakers
کہ بامِ عرش کے طائر ہیں میرے ہم زبانوں میں
That the birds of the ‘Arsh’s roof are concordant with me
اثر یہ بھی ہے اک میرے جُنونِ فتنہ ساماں کا
This also is an effect of my tumultuous love
مرا آئینۂ دل ہے قضا کے رازدانوں میں
That my heart’s mirrors are Destiny’s confidante
رُلاتا ہے ترا نظّارہ اے ہندوستاں! مجھ کو
Your spectacle makes me shed tears, O India!
کہ عبرت خیز ہے تیرا فسانہ سب فسانوں میں
Your tales are admonitory among all the tales
دیا رونا مجھے ایسا کہ سب کچھ دے دیا گویا
Conferring the wailing on me is like conferring everything
لِکھا کلکِ ازل نے مجھ کو تیرے نوحہ خوانوں میں
Since eternity Destiny’s pen has put me where all your mourners are
نشانِ برگِ گُل تک بھی نہ چھوڑ اس باغ میں گُلچیں!
O gardener do not leave even the rose-petals’ trace in this garden!
تری قسمت سے رزم آرائیاں ہیں باغبانوں میں
By your misfortune war preparations are afoot among the gardeners
چھُپا کر آستیں میں بجلیاں رکھی ہیں گردُوں نے
The sky has kept thunderbolts concealed up its sleeve
عنادِل باغ کے غافل نہ بیٹھیں آشیانوں میں
Garden’s nightingales should not slumber in their nests
سُن اے غافل صدا میری، یہ ایسی چیز ہے جس کو
Listen to my call, O imprudent one! This is something which
وظیفہ جان کر پڑھتے ہیں طائر بوستانوں میں
The birds in gardens are reciting like the daily prayers
وطن کی فکر کر ناداں! مصیبت آنے والی ہے
Think of the homeland, O ignorant one! Hard times are coming
تری بربادیوں کے مشورے ہیں آسمانوں میں
Conspiracies for your destruction are afoot in the heavens
ذرا دیکھ اس کو جو کچھ ہو رہا ہے، ہونے والا ہے
Pay attention to what is happening and what is going to happen
دھَرا کیا ہے بھلا عہدِ کُہن کی داستانوں میں
What good there is in repeating the tales of the old glories?
یہ خاموشی کہاں تک؟ لذّتِ فریاد پیدا کر
How long will you remain silent? Create taste for complaint!
زمیں پر تُو ہو اور تیری صدا ہو آسمانوں میں
You should be on the earth, so your cries be in the heavens!
نہ سمجھو گے تو مِٹ جاؤ گے اے ہندوستاں والو!
You will be annihilated if you do not understand, O people of India!
تمھاری داستاں تک بھی نہ ہو گی داستانوں میں
Even your tales will disappear from the world’s chronicles
یہی آئینِ قدرت ہے، یہی اسلوبِ فطرت ہے
This is the law of Nature, this is the order of Nature
جو ہے راہِ عمل میں گام زن، محبوبِ فطرت ہے
Those who tread dynamism’s path, are the darlings of Nature
ہوَیدا آج اپنے زخمِ پنہاں کر کے چھوڑوں گا
I will surely exhibit all my hidden wounds today
لہُو رو رو کے محفل کو گُلستاں کر کے چھوڑوں گا
I will surely change assembly to a garden with blood-mixed tears
جلانا ہے مجھے ہر شمعِ دل کو سوزِ پنہاں سے
I have to light every heart’s candle with hidden pathos
تری تاریک راتوں میں چراغاں کر کے چھوڑوں گا
I will surely create bright illumination in your darkness
مگر غنچوں کی صورت ہوں دلِ درد آشنا پیدا
So that love-cognizant hearts be created like rose-buds
چمن میں مُشتِ خاک اپنی پریشاں کر کے چھوڑوں گا
I will surely scatter around my handful of dust in the garden
پرونا ایک ہی تسبیح میں ان بکھرے دانوں کو
If stringing these scattered pearls in a single rosary
جو مشکل ہے، تو اس مشکل کو آساں کر کے چھوڑوں گا
Is difficult, I will surely make this difficult task easy
مجھے اے ہم نشیں رہنے دے شغلِ سینہ کاوی میں
O Companion! Leave me alone in the soul-searching effort
کہ مَیں داغِ محبّت کو نمایاں کر کے چھوڑوں گا
As I will surely exhibit this mark of the ardent Love
دِکھا دوں گا جہاں کو جو مری آنکھوں نے دیکھا ہے
I will show the world what my eyes have seen
تجھے بھی صورتِ آئینہ حیراں کر کے چھوڑوں گا
I will surely make you also bewildered like a mirror
جو ہے پردوں میں پنہاں، چشمِ بینا دیکھ لیتی ہے
The discerning eye sees every thing covered in veils
زمانے کی طبیعت کا تقاضا دیکھ لیتی ہے
It does see the exigencies of the nature of times
کِیا رفعت کی لذّت سے نہ دل کو آشنا تو نے
You have not acquainted your heart with pleasure of dignity
گزاری عمر پستی میں مثالِ نقشِ پا تو نے
You have passed your entire life in humility like foot-prints
رہا دل بستۂ محفل، مگر اپنی نگاہوں کو
You always remained entangled inside the assembly, but
کِیا بیرونِ محفل سے نہ حیرت آشنا تو نے
Have not acquainted yourself with the world outside the assembly
فدا کرتا رہا دل کو حَسینوں کی اداؤں پر
You have continued loving the charm of material beauties
مگر دیکھی نہ اس آئینے میں اپنی ادا تو نے
But you have never seen your own elegance in this mirror
تعصّب چھوڑ ناداں! دہر کے آئینہ خانے میں
Give up prejudice O imprudent one! In the world’s glass house
یہ تصویریں ہیں تیری جن کو سمجھا ہے بُرا تو نے
They are your own pictures which you have taken as evil ones
سراپا نالۂ بیدادِ سوزِ زندگی ہو جا
Become embodiment of the wail of tyranny of life’s pathos!
سپند آسا گرہ میں باندھ رکھّی ہے صدا تو نے
You have concealed sound in your pocket like the rue seed
صفائے دل کو کیا آرائشِ رنگِ تعلّق سے
Clarity of heart has nothing to do with external decorations
کفِ آئینہ پر باندھی ہے او ناداں حنا تو نے
O imprudent one! You have applied myrtle to mirror’s palm
زمیں کیا، آسماں بھی تیری کج بینی پہ روتا ہے
Not only the earth even the sky is bewailing your imprudence
غضب ہے سطرِ قرآں کو چلیپا کر دیا تو نے!
It is outrageous that you have twisted the Qur’an’s lines!
زباں سے گر کِیا توحید کا دعویٰ تو کیا حاصل!
To what purpose is your claim to monotheism!
بنایا ہے بُتِ پندار کو اپنا خدا تو نے
You have made the idol of self conceit your deity
کُنویں میں تُو نے یوسف کو جو دیکھا بھی تو کیا دیکھا
What did you see even if you saw Yusuf in the well?
ارے غافل! جو مطلق تھا مقیّد کر دیا تو نے
O imprudent one! You have made the Absolute confined
ہوس بالائے منبر ہے تجھے رنگیں بیانی کی
You are greedy of flowery style even at the pulpit
نصیحت بھی تری صورت ہے اک افسانہ خوانی کی
Your advice also is a form of story telling
دِکھا وہ حسنِ عالم سوز اپنی چشمِ پُرنم کو
Show that universally illuminating Beauty to your weeping eye
جو تڑپاتا ہے پروانے کو، رُلواتا ہے شبنم کو
Which renders the moth highly agitated, which makes the dew weep like eye
نِرا نظّارہ ہی اے بوالہوس مقصد نہیں اس کا
Mere seeing is not its purpose! O greedy one
بنایا ہے کسی نے کچھ سمجھ کر چشمِ آدم کو
Some One has made the human eye with some purpose
اگر دیکھا بھی اُس نے سارے عالم کو تو کیا دیکھا
Even if he viewed the whole world, what did he see?
نظر آئی نہ کچھ اپنی حقیقت جام سے جم کو
Jam could not see his own reality in the wine cup
شجر ہے فرقہ آرائی، تعصّب ہے ثمر اس کا
Sectarianism is the tree, prejudice is its fruit
یہ وہ پھل ہے کہ جنّت سے نِکلواتا ہے آدم کو
This fruit caused expulsion of S Adam from Paradise
نہ اُٹھّا جذبۂ خورشید سے اک برگِ گُل تک بھی
Not even a single rose-petal could rise by sun’s attraction
یہ رفعت کی تمنّا ہے کہ لے اُڑتی ہے شبنم کو
It is the longing for elegance which raises the dew
پھرا کرتے نہیں مجروحِ اُلفت فکرِ درماں میں
Those wounded by Love do not wander in search of cure
یہ زخمی آپ کر لیتے ہیں پیدا اپنے مرہم کو
These wounded ones themselves create their own cure
محبّت کے شرر سے دل سراپا نور ہوتا ہے
The heart gets complete illumination by the spark of Love
ذرا سے بیج سے پیدا ریاضِ طُور ہوتا ہے
The Tur’s flower bed is raised from the Love’s small seed
دوا ہر دُکھ کی ہے مجروحِ تیغِ آرزو رہنا
Every malady’s cure is to remain wounded with Longing’s sword
علاجِ زخم ہے آزادِ احسانِ رفو رہنا
Wound’s remedy is to remain free from obligation to stitching
شرابِ بے خودی سے تا فلک پرواز ہے میری
With the Bekhudi’s wine up to the celestial world is my flight
شکستِ رنگ سے سیکھا ہے مَیں نے بن کے بُو رہنا
From disappearance of color I have learnt to remain fragrance
تھمے کیا دیدۂ گریاں وطن کی نوحہ خوانی میں
How can the weeping eye refrain from homeland’s lamentation?
عبادت چشمِ شاعر کی ہے ہر دم باوضو رہنا
The ‘ibadah for the poet’s eye is to remain constantly with ablution
بنائیں کیا سمجھ کر شاخِ گُل پر آشیاں اپنا
To what purpose should we make our nest in the rose-branch
چمن میں آہ! کیا رہنا جو ہو بے آبرو رہنا
Ah! How can we live with constant disgrace in the garden
جو تُو سمجھے تو آزادی ہے پوشیدہ محبّت میں
If you understand, independence is veiled in Love
غلامی ہے اسیرِ امتیازِ ماوتو رہنا
Slavery is to remain imprisoned in the net of schism
یہ استغنا ہے، پانی میں نگوں رکھتا ہے ساغر کو
Contentment is what keeps the cup submerged in water
تجھے بھی چاہیے مثلِ حبابِ آبجو رہنا
You should also remain like the bubble in the stream
نہ رہ اپنوں سے بے پروا، اسی میں خیر ہے تیری
It is best for you not to remain indifferent to yours own
اگر منظور ہے دنیا میں او بیگانہ خو! رہنا
O apathetic person! If you want to remain alive in the world
شرابِ رُوح پرور ہے محبت نوعِ انساں کی
Soul-invigorating wine is the Love of the human race
سِکھایا اس نے مجھ کو مست بے جام و سبو رہنا
It has taught me to remain ecstatic without the wine cup and the pitcher
محبّت ہی سے پائی ہے شفا بیمار قوموں نے
Sick nations have been cured only through Love
کِیا ہے اپنے بختِ خُفتہ کو بیدار قوموں نے
Nations have warded off their adversity through Love
بیابانِ محبّت دشتِ غربت بھی، وطن بھی ہے
The expanse of Love is at once foreign land and homeland
یہ ویرانہ قفس بھی، آشیانہ بھی، چمن بھی ہے
This wilderness is the cage, the nest, as well as the garden
محبّت ہی وہ منزل ہے کہ منزل بھی ہے، صحرا بھی
Love is the only stage which is the stage as well as the wilderness
جرَس بھی، کارواں بھی، راہبر بھی، راہزن بھی ہے
It is the bell, the caravan, the leader as well as the robber
مرَض کہتے ہیں سب اس کو، یہ ہے لیکن مرَض ایسا
Everybody calls it an illness, but it is such an illness
چھُپا جس میں علاجِ گردشِ چرخِ کُہن بھی ہے
In which the cure for all ills and misfortunes is concealed
جَلانا دل کا ہے گویا سراپا نُور ہو جانا
The heart’s pathos in a way is to become embodiment of Light
یہ پروانہ جو سوزاں ہو تو شمعِ انجمن بھی ہے
If this moth burns it is also the assembly’s candle
وہی اک حُسن ہے، لیکن نظر آتا ہے ہر شے میں
The Beauty is just one but appears in everything
یہ شیریں بھی ہے گویا، بیستوُں بھی، کوہکن بھی ہے
It is Shirin, the sky, as well as the mountain digger
اُجاڑا ہے تمیزِ ملّت و آئِیں نے قوموں کو
Distinction of sects and governments has destroyed nations
مرے اہلِ وطن کے دل میں کچھ فکرِ وطن بھی ہے؟
Is there any concern for the homeland in my compatriot’s hearts?
سکُوت آموز طولِ داستانِ درد ہے ورنہ
Prolonging the tale of my woes calls for silence, otherwise
زباں بھی ہے ہمارے مُنہ میں اور تابِ سخن بھی ہے
The tongue in my mouth as well as the ability to speak is
“نمیگردید کوتہ رشتۂ معنی رہا کردم
“Take not this meaningful tale as related by me is
حکایت بود بے پایاں، بخاموشی ادا کردم”
The story was endless, but related with silence is.”تصویرِ درد
The Portrait of Anguish
نہیں منّت کشِ تابِ شنیدن داستاں میری
My story is not indebted to the patience of being heard
خموشی گفتگو ہے، بے زبانی ہے زباں میری
My silence is my talk, my speechlessness is my speech
یہ دستورِ زباں بندی ہے کیسا تیری محفل میں
Why does this custom of silencing exist in your assembly?
یہاں تو بات کرنے کو ترستی ہے زباں میری
My tongue is tantalized to talk in this assembly
اُٹھائے کچھ وَرق لالے نے، کچھ نرگس نے، کچھ گُل نے
Some leaves were picked up by the tulip, some by the narcissus, some by the rose
چمن میں ہر طرف بِکھری ہُوئی ہے داستاں میری
My story is scattered around everywhere in the garden
اُڑالی قُمریوں نے، طُوطیوں نے، عندلیبوں نے
The turtle-doves, parrots, and nightingales pilfered away
چمن والوں نے مِل کر لُوٹ لی طرزِ فغاں میری
The garden’s denizens jointly robbed away my plaintive way
ٹپک اے شمع آنسو بن کے پروانے کی آنکھوں سے
O Candle! Drip like tears from the eye of the moth
سراپا درد ہوں، حسرت بھری ہے داستاں میری
Head to foot pathos I am, full of longing is my story
الٰہی! پھر مزا کیا ہے یہاں دنیا میں رہنے کا
O God! What is the pleasure of living so in this world?
حیاتِ جاوداں میری، نہ مرگِ ناگہاں میری!
Neither the eternal life, nor the sudden death is mine
مرا رونا نہیں، رونا ہے یہ سارے گُلستاں کا
This is not only my wailing, but is that of the entire garden
وہ گُل ہوں مَیں، خزاں ہر گُل کی ہے گویا خزاں میری
I am a rose, to me every rose’ autumn is my autumn
“دریں حسرت سرا عمریست افسونِ جرس دارم
“In this grief-stricken land, in life-long spell of the caravan’s bell I am
ز فیضِ دل تپیدنہا خروشِ بے نفَس دارم”
From the palpitating heart’s bounties the silent clamor I have“
ریاضِ دہر میں ناآشنائے بزمِ عشرت ہوں
In the world’s garden unaware of pleasant company I am
خوشی روتی ہے جس کو، مَیں وہ محرومِ مسرّت ہوں
Whom happiness still mourns, that hapless person I am
مری بگڑی ہوئی تقدیر کو روتی ہے گویائی
Speech itself sheds tears at my ill luck
مَیں حرفِ زیرِ لب، شرمندۂ گوشِ سماعت ہوں
Silent word, longing for an eager ear I am
پریشاں ہوں میں مُشتِ خاک، لیکن کچھ نہیں کھُلتا
I am a mere handful of scattered dust but I do not know
سکندر ہوں کہ آئینہ ہوں یا گردِ کدُورت ہوں
Whether Alexander or a mirror or just dust and scum I am
یہ سب کچھ ہے مگر ہستی مری مقصد ہے قُدرت کا
Despite all this my existence is the Divine Purpose
سراپا نور ہو جس کی حقیقت، مَیں وہ ظلمت ہوں
Embodiment of light is whose reality, that darkness I am
خزینہ ہُوں، چھُپایا مجھ کو مُشتِ خاکِ صحرا نے
I am a treasure, concealed in the wilderness dust
کسی کو کیا خبر ہے مَیں کہاں ہوں کس کی دولت ہوں!
No one knows where I am, or whose wealth I am?
نظر میری نہیں ممنونِ سیرِ عرصۂ ہستی
My insight is not obligated to the stroll of existence
مَیں وہ چھوٹی سی دنیا ہوں کہ آپ اپنی ولایت ہوں
That small world I am whose sovereign myself I am
نہ صہباہوں نہ ساقی ہوں، نہ مستی ہوں نہ پیمانہ
Neither wine, nor cup-bearer, nor ecstasy, nor goblet I am
مَیں اس میخانۂ ہستی میں ہر شے کی حقیقت ہوں
But the truth of everything in the existence’ tavern I am
مجھے رازِ دو عالم دل کا آئینہ دِکھاتا ہے
My heart’s mirror shows me both world’s secrets
وہی کہتا ہوں جو کچھ سامنے آنکھوں کے آتا ہے
I relate exactly what I witness before my eyes
عطا ایسا بیاں مجھ کو ہُوا رنگیں بیانوں میں
I am bestowed with such speech among the elegant speakers
کہ بامِ عرش کے طائر ہیں میرے ہم زبانوں میں
That the birds of the ‘Arsh’s roof are concordant with me
اثر یہ بھی ہے اک میرے جُنونِ فتنہ ساماں کا
This also is an effect of my tumultuous love
مرا آئینۂ دل ہے قضا کے رازدانوں میں
That my heart’s mirrors are Destiny’s confidante
رُلاتا ہے ترا نظّارہ اے ہندوستاں! مجھ کو
Your spectacle makes me shed tears, O India!
کہ عبرت خیز ہے تیرا فسانہ سب فسانوں میں
Your tales are admonitory among all the tales
دیا رونا مجھے ایسا کہ سب کچھ دے دیا گویا
Conferring the wailing on me is like conferring everything
لِکھا کلکِ ازل نے مجھ کو تیرے نوحہ خوانوں میں
Since eternity Destiny’s pen has put me where all your mourners are
نشانِ برگِ گُل تک بھی نہ چھوڑ اس باغ میں گُلچیں!
O gardener do not leave even the rose-petals’ trace in this garden!
تری قسمت سے رزم آرائیاں ہیں باغبانوں میں
By your misfortune war preparations are afoot among the gardeners
چھُپا کر آستیں میں بجلیاں رکھی ہیں گردُوں نے
The sky has kept thunderbolts concealed up its sleeve
عنادِل باغ کے غافل نہ بیٹھیں آشیانوں میں
Garden’s nightingales should not slumber in their nests
سُن اے غافل صدا میری، یہ ایسی چیز ہے جس کو
Listen to my call, O imprudent one! This is something which
وظیفہ جان کر پڑھتے ہیں طائر بوستانوں میں
The birds in gardens are reciting like the daily prayers
وطن کی فکر کر ناداں! مصیبت آنے والی ہے
Think of the homeland, O ignorant one! Hard times are coming
تری بربادیوں کے مشورے ہیں آسمانوں میں
Conspiracies for your destruction are afoot in the heavens
ذرا دیکھ اس کو جو کچھ ہو رہا ہے، ہونے والا ہے
Pay attention to what is happening and what is going to happen
دھَرا کیا ہے بھلا عہدِ کُہن کی داستانوں میں
What good there is in repeating the tales of the old glories?
یہ خاموشی کہاں تک؟ لذّتِ فریاد پیدا کر
How long will you remain silent? Create taste for complaint!
زمیں پر تُو ہو اور تیری صدا ہو آسمانوں میں
You should be on the earth, so your cries be in the heavens!
نہ سمجھو گے تو مِٹ جاؤ گے اے ہندوستاں والو!
You will be annihilated if you do not understand, O people of India!
تمھاری داستاں تک بھی نہ ہو گی داستانوں میں
Even your tales will disappear from the world’s chronicles
یہی آئینِ قدرت ہے، یہی اسلوبِ فطرت ہے
This is the law of Nature, this is the order of Nature
جو ہے راہِ عمل میں گام زن، محبوبِ فطرت ہے
Those who tread dynamism’s path, are the darlings of Nature
ہوَیدا آج اپنے زخمِ پنہاں کر کے چھوڑوں گا
I will surely exhibit all my hidden wounds today
لہُو رو رو کے محفل کو گُلستاں کر کے چھوڑوں گا
I will surely change assembly to a garden with blood-mixed tears
جلانا ہے مجھے ہر شمعِ دل کو سوزِ پنہاں سے
I have to light every heart’s candle with hidden pathos
تری تاریک راتوں میں چراغاں کر کے چھوڑوں گا
I will surely create bright illumination in your darkness
مگر غنچوں کی صورت ہوں دلِ درد آشنا پیدا
So that love-cognizant hearts be created like rose-buds
چمن میں مُشتِ خاک اپنی پریشاں کر کے چھوڑوں گا
I will surely scatter around my handful of dust in the garden
پرونا ایک ہی تسبیح میں ان بکھرے دانوں کو
If stringing these scattered pearls in a single rosary
جو مشکل ہے، تو اس مشکل کو آساں کر کے چھوڑوں گا
Is difficult, I will surely make this difficult task easy
مجھے اے ہم نشیں رہنے دے شغلِ سینہ کاوی میں
O Companion! Leave me alone in the soul-searching effort
کہ مَیں داغِ محبّت کو نمایاں کر کے چھوڑوں گا
As I will surely exhibit this mark of the ardent Love
دِکھا دوں گا جہاں کو جو مری آنکھوں نے دیکھا ہے
I will show the world what my eyes have seen
تجھے بھی صورتِ آئینہ حیراں کر کے چھوڑوں گا
I will surely make you also bewildered like a mirror
جو ہے پردوں میں پنہاں، چشمِ بینا دیکھ لیتی ہے
The discerning eye sees every thing covered in veils
زمانے کی طبیعت کا تقاضا دیکھ لیتی ہے
It does see the exigencies of the nature of times
کِیا رفعت کی لذّت سے نہ دل کو آشنا تو نے
You have not acquainted your heart with pleasure of dignity
گزاری عمر پستی میں مثالِ نقشِ پا تو نے
You have passed your entire life in humility like foot-prints
رہا دل بستۂ محفل، مگر اپنی نگاہوں کو
You always remained entangled inside the assembly, but
کِیا بیرونِ محفل سے نہ حیرت آشنا تو نے
Have not acquainted yourself with the world outside the assembly
فدا کرتا رہا دل کو حَسینوں کی اداؤں پر
You have continued loving the charm of material beauties
مگر دیکھی نہ اس آئینے میں اپنی ادا تو نے
But you have never seen your own elegance in this mirror
تعصّب چھوڑ ناداں! دہر کے آئینہ خانے میں
Give up prejudice O imprudent one! In the world’s glass house
یہ تصویریں ہیں تیری جن کو سمجھا ہے بُرا تو نے
They are your own pictures which you have taken as evil ones
سراپا نالۂ بیدادِ سوزِ زندگی ہو جا
Become embodiment of the wail of tyranny of life’s pathos!
سپند آسا گرہ میں باندھ رکھّی ہے صدا تو نے
You have concealed sound in your pocket like the rue seed
صفائے دل کو کیا آرائشِ رنگِ تعلّق سے
Clarity of heart has nothing to do with external decorations
کفِ آئینہ پر باندھی ہے او ناداں حنا تو نے
O imprudent one! You have applied myrtle to mirror’s palm
زمیں کیا، آسماں بھی تیری کج بینی پہ روتا ہے
Not only the earth even the sky is bewailing your imprudence
غضب ہے سطرِ قرآں کو چلیپا کر دیا تو نے!
It is outrageous that you have twisted the Qur’an’s lines!
زباں سے گر کِیا توحید کا دعویٰ تو کیا حاصل!
To what purpose is your claim to monotheism!
بنایا ہے بُتِ پندار کو اپنا خدا تو نے
You have made the idol of self conceit your deity
کُنویں میں تُو نے یوسف کو جو دیکھا بھی تو کیا دیکھا
What did you see even if you saw Yusuf in the well?
ارے غافل! جو مطلق تھا مقیّد کر دیا تو نے
O imprudent one! You have made the Absolute confined
ہوس بالائے منبر ہے تجھے رنگیں بیانی کی
You are greedy of flowery style even at the pulpit
نصیحت بھی تری صورت ہے اک افسانہ خوانی کی
Your advice also is a form of story telling
دِکھا وہ حسنِ عالم سوز اپنی چشمِ پُرنم کو
Show that universally illuminating Beauty to your weeping eye
جو تڑپاتا ہے پروانے کو، رُلواتا ہے شبنم کو
Which renders the moth highly agitated, which makes the dew weep like eye
نِرا نظّارہ ہی اے بوالہوس مقصد نہیں اس کا
Mere seeing is not its purpose! O greedy one
بنایا ہے کسی نے کچھ سمجھ کر چشمِ آدم کو
Some One has made the human eye with some purpose
اگر دیکھا بھی اُس نے سارے عالم کو تو کیا دیکھا
Even if he viewed the whole world, what did he see?
نظر آئی نہ کچھ اپنی حقیقت جام سے جم کو
Jam could not see his own reality in the wine cup
شجر ہے فرقہ آرائی، تعصّب ہے ثمر اس کا
Sectarianism is the tree, prejudice is its fruit
یہ وہ پھل ہے کہ جنّت سے نِکلواتا ہے آدم کو
This fruit caused expulsion of S Adam from Paradise
نہ اُٹھّا جذبۂ خورشید سے اک برگِ گُل تک بھی
Not even a single rose-petal could rise by sun’s attraction
یہ رفعت کی تمنّا ہے کہ لے اُڑتی ہے شبنم کو
It is the longing for elegance which raises the dew
پھرا کرتے نہیں مجروحِ اُلفت فکرِ درماں میں
Those wounded by Love do not wander in search of cure
یہ زخمی آپ کر لیتے ہیں پیدا اپنے مرہم کو
These wounded ones themselves create their own cure
محبّت کے شرر سے دل سراپا نور ہوتا ہے
The heart gets complete illumination by the spark of Love
ذرا سے بیج سے پیدا ریاضِ طُور ہوتا ہے
The Tur’s flower bed is raised from the Love’s small seed
دوا ہر دُکھ کی ہے مجروحِ تیغِ آرزو رہنا
Every malady’s cure is to remain wounded with Longing’s sword
علاجِ زخم ہے آزادِ احسانِ رفو رہنا
Wound’s remedy is to remain free from obligation to stitching
شرابِ بے خودی سے تا فلک پرواز ہے میری
With the Bekhudi’s wine up to the celestial world is my flight
شکستِ رنگ سے سیکھا ہے مَیں نے بن کے بُو رہنا
From disappearance of color I have learnt to remain fragrance
تھمے کیا دیدۂ گریاں وطن کی نوحہ خوانی میں
How can the weeping eye refrain from homeland’s lamentation?
عبادت چشمِ شاعر کی ہے ہر دم باوضو رہنا
The ‘ibadah for the poet’s eye is to remain constantly with ablution
بنائیں کیا سمجھ کر شاخِ گُل پر آشیاں اپنا
To what purpose should we make our nest in the rose-branch
چمن میں آہ! کیا رہنا جو ہو بے آبرو رہنا
Ah! How can we live with constant disgrace in the garden
جو تُو سمجھے تو آزادی ہے پوشیدہ محبّت میں
If you understand, independence is veiled in Love
غلامی ہے اسیرِ امتیازِ ماوتو رہنا
Slavery is to remain imprisoned in the net of schism
یہ استغنا ہے، پانی میں نگوں رکھتا ہے ساغر کو
Contentment is what keeps the cup submerged in water
تجھے بھی چاہیے مثلِ حبابِ آبجو رہنا
You should also remain like the bubble in the stream
نہ رہ اپنوں سے بے پروا، اسی میں خیر ہے تیری
It is best for you not to remain indifferent to yours own
اگر منظور ہے دنیا میں او بیگانہ خو! رہنا
O apathetic person! If you want to remain alive in the world
شرابِ رُوح پرور ہے محبت نوعِ انساں کی
Soul-invigorating wine is the Love of the human race
سِکھایا اس نے مجھ کو مست بے جام و سبو رہنا
It has taught me to remain ecstatic without the wine cup and the pitcher
محبّت ہی سے پائی ہے شفا بیمار قوموں نے
Sick nations have been cured only through Love
کِیا ہے اپنے بختِ خُفتہ کو بیدار قوموں نے
Nations have warded off their adversity through Love
بیابانِ محبّت دشتِ غربت بھی، وطن بھی ہے
The expanse of Love is at once foreign land and homeland
یہ ویرانہ قفس بھی، آشیانہ بھی، چمن بھی ہے
This wilderness is the cage, the nest, as well as the garden
محبّت ہی وہ منزل ہے کہ منزل بھی ہے، صحرا بھی
Love is the only stage which is the stage as well as the wilderness
جرَس بھی، کارواں بھی، راہبر بھی، راہزن بھی ہے
It is the bell, the caravan, the leader as well as the robber
مرَض کہتے ہیں سب اس کو، یہ ہے لیکن مرَض ایسا
Everybody calls it an illness, but it is such an illness
چھُپا جس میں علاجِ گردشِ چرخِ کُہن بھی ہے
In which the cure for all ills and misfortunes is concealed
جَلانا دل کا ہے گویا سراپا نُور ہو جانا
The heart’s pathos in a way is to become embodiment of Light
یہ پروانہ جو سوزاں ہو تو شمعِ انجمن بھی ہے
If this moth burns it is also the assembly’s candle
وہی اک حُسن ہے، لیکن نظر آتا ہے ہر شے میں
The Beauty is just one but appears in everything
یہ شیریں بھی ہے گویا، بیستوُں بھی، کوہکن بھی ہے
It is Shirin, the sky, as well as the mountain digger
اُجاڑا ہے تمیزِ ملّت و آئِیں نے قوموں کو
Distinction of sects and governments has destroyed nations
مرے اہلِ وطن کے دل میں کچھ فکرِ وطن بھی ہے؟
Is there any concern for the homeland in my compatriot’s hearts?
سکُوت آموز طولِ داستانِ درد ہے ورنہ
Prolonging the tale of my woes calls for silence, otherwise
زباں بھی ہے ہمارے مُنہ میں اور تابِ سخن بھی ہے
The tongue in my mouth as well as the ability to speak is
“نمیگردید کوتہ رشتۂ معنی رہا کردم
“Take not this meaningful tale as related by me is
حکایت بود بے پایاں، بخاموشی ادا کردم”
The story was endless, but related with silence is.”
RumiBalkhi.Com
:: ADVERTISEMENTS ::
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.