ترانۂ ہندی – علامه محمد اقبال

ترانۂ ہندی
The Indian Anthem
سارے جہاں سے اچھّا ہندوستاں ہمارا
The best land in the world is our India;
ہم بُلبلیں ہیں اس کی، یہ گُلِستاں ہمارا
We are its nightingales; this is our garden.
غربت میں ہوں اگر ہم، رہتا ہے دل وطن میں
If we are in exile, our heart resides in our homeland.
سمجھو وہیں ہمیں بھی، دل ہو جہاں ہمارا
Understand that we are also where our heart is.
پربت وہ سب سے اونچا، ہمسایہ آسماں کا
That is the highest mountain, the neighbour of the sky;
وہ سنتری ہمارا، وہ پاسباں ہمارا
It is our sentry; it is our watchman.
گودی میں کھیلتی ہیں اس کی ہزاروں ندیاں
In its lap play thousands of streams,
گلشن ہے جن کے دم سے رشکِ جناں ہمارا
And the gardens that flourish because of them are the envy of Paradise.
اے آبِ رود گنگا! وہ دن ہیں یاد تجھ کو؟
Oh, waters of the river Ganges! Do you remember those days?
اُترا ترے کنارے جب کارواں ہمارا
Those days when our caravan halted on your bank?
مذہب نہیں سِکھاتا آپس میں بَیر رکھنا
Religion does not teach us to be enemies with each other:
ہندی ہیں ہم، وطن ہے ہندوستاں ہمارا
We are Indians, our homeland is our India.
یونان و مصر و روما سب مٹ گئے جہاں سے
Greece, Egypt and Byzantium have all been erased from the world.
اب تک مگر ہے باقی نام و نشاں ہمارا
But our fame and banner still remain.
کچھ بات ہے کہ ہستی مٹتی نہیں ہماری
It is something to be proud of that our existence is never erased,
صدیوں رہا ہے دشمن دورِ زماں ہمارا
Though the passing of time for centuries has always been our enemy.
اقبالؔ! کوئی محرم اپنا نہیں جہاں میں
Iqbal! No-one in this world has ever known your secret.
معلوم کیا کسی کو دردِ نہاں ہمارا
Does anyone know the pain I feel inside me?ترانۂ ہندی
The Indian Anthem
سارے جہاں سے اچھّا ہندوستاں ہمارا
The best land in the world is our India;
ہم بُلبلیں ہیں اس کی، یہ گُلِستاں ہمارا
We are its nightingales; this is our garden.
غربت میں ہوں اگر ہم، رہتا ہے دل وطن میں
If we are in exile, our heart resides in our homeland.
سمجھو وہیں ہمیں بھی، دل ہو جہاں ہمارا
Understand that we are also where our heart is.
پربت وہ سب سے اونچا، ہمسایہ آسماں کا
That is the highest mountain, the neighbour of the sky;
وہ سنتری ہمارا، وہ پاسباں ہمارا
It is our sentry; it is our watchman.
گودی میں کھیلتی ہیں اس کی ہزاروں ندیاں
In its lap play thousands of streams,
گلشن ہے جن کے دم سے رشکِ جناں ہمارا
And the gardens that flourish because of them are the envy of Paradise.
اے آبِ رود گنگا! وہ دن ہیں یاد تجھ کو؟
Oh, waters of the river Ganges! Do you remember those days?
اُترا ترے کنارے جب کارواں ہمارا
Those days when our caravan halted on your bank?
مذہب نہیں سِکھاتا آپس میں بَیر رکھنا
Religion does not teach us to be enemies with each other:
ہندی ہیں ہم، وطن ہے ہندوستاں ہمارا
We are Indians, our homeland is our India.
یونان و مصر و روما سب مٹ گئے جہاں سے
Greece, Egypt and Byzantium have all been erased from the world.
اب تک مگر ہے باقی نام و نشاں ہمارا
But our fame and banner still remain.
کچھ بات ہے کہ ہستی مٹتی نہیں ہماری
It is something to be proud of that our existence is never erased,
صدیوں رہا ہے دشمن دورِ زماں ہمارا
Though the passing of time for centuries has always been our enemy.
اقبالؔ! کوئی محرم اپنا نہیں جہاں میں
Iqbal! No-one in this world has ever known your secret.
معلوم کیا کسی کو دردِ نہاں ہمارا
Does anyone know the pain I feel inside me?
RumiBalkhi.Com
:: ADVERTISEMENTS ::
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.