ترانۂ ملّی – علامه محمد اقبال

ترانۂ ملّی
The Anthem of the Islamic Community
چِین و عرب ہمارا، ہندوستاں ہمارا
China and Arabia are ours; India is ours.
مسلم ہیں ہم، وطن ہے سارا جہاں ہمارا
We are Muslims, the whole world is ours.
توحید کی امانت سینوں میں ہے ہمارے
God’s unity is held in trust in our breasts.
آساں نہیں مٹانا نام و نشاں ہمارا
It is not easy to erase our name and sign.
دنیا کے بُت‌کدوں میں پہلا وہ گھر خدا کا
Among the idol temples of the world the first is that house of God;
ہم اُس کے پاسباں ہیں، وہ پاسباں ہمارا
We are its keepers; it is our keeper.
تیغوں کے سائے میں ہم پل کر جواں ہوئے ہیں
Brought up in the shadow of the sword, we reached maturity;
خنجر ہلال کا ہے قومی نشاں ہمارا
The scimitar of the crescent moon is the emblem of our community.
مغرب کی وادیوں میں گونجی اذاں ہماری
In the valleys of the west our call to prayer resounded;
تھمتا نہ تھا کسی سے سیلِ رواں ہمارا
Our onward flow was never stemmed by anyone.
باطل سے دبنے والے اے آسماں نہیں ہم
We, oh heaven, are not to be suppressed by falsehood!
سَو بار کر چکا ہے تُو امتحاں ہمارا
A hundred times you have tested us.
اے گلِستانِ اندلس! وہ دن ہیں یاد تجھ کو
Oh garden of Andalusia! Do you remember those days,
تھا تیری ڈالیوں پر جب آشیاں ہمارا
When our nest was in your branches?
اے موجِ دجلہ! تُو بھی پہچانتی ہے ہم کو
Oh waves of the Tigris! You also recognize us;
اب تک ہے تیرا دریا افسانہ خواں ہمارا
Your river still relates our story.
اے ارضِ پاک! تیری حُرمت پہ کٹ مرے ہم
Oh land of purity! We fell and died for your honour;
ہے خُوں تری رگوں میں اب تک رواں ہمارا
Our blood still courses through your veins.
سالارِ کارواں ہے میرِ حجازؐ اپنا
The Lord of Hijaz is the leader of our community;
اس نام سے ہے باقی آرامِ جاں ہمارا
From this name comes the peace of our soul.
اقبالؔ کا ترانہ بانگِ درا ہے گویا
Iqbal’s song is like the bell of a caravan;
ہوتا ہے جادہ پیما پھر کارواں ہمارا
Once more our caravan measures the road.ترانۂ ملّی
The Anthem of the Islamic Community
چِین و عرب ہمارا، ہندوستاں ہمارا
China and Arabia are ours; India is ours.
مسلم ہیں ہم، وطن ہے سارا جہاں ہمارا
We are Muslims, the whole world is ours.
توحید کی امانت سینوں میں ہے ہمارے
God’s unity is held in trust in our breasts.
آساں نہیں مٹانا نام و نشاں ہمارا
It is not easy to erase our name and sign.
دنیا کے بُت‌کدوں میں پہلا وہ گھر خدا کا
Among the idol temples of the world the first is that house of God;
ہم اُس کے پاسباں ہیں، وہ پاسباں ہمارا
We are its keepers; it is our keeper.
تیغوں کے سائے میں ہم پل کر جواں ہوئے ہیں
Brought up in the shadow of the sword, we reached maturity;
خنجر ہلال کا ہے قومی نشاں ہمارا
The scimitar of the crescent moon is the emblem of our community.
مغرب کی وادیوں میں گونجی اذاں ہماری
In the valleys of the west our call to prayer resounded;
تھمتا نہ تھا کسی سے سیلِ رواں ہمارا
Our onward flow was never stemmed by anyone.
باطل سے دبنے والے اے آسماں نہیں ہم
We, oh heaven, are not to be suppressed by falsehood!
سَو بار کر چکا ہے تُو امتحاں ہمارا
A hundred times you have tested us.
اے گلِستانِ اندلس! وہ دن ہیں یاد تجھ کو
Oh garden of Andalusia! Do you remember those days,
تھا تیری ڈالیوں پر جب آشیاں ہمارا
When our nest was in your branches?
اے موجِ دجلہ! تُو بھی پہچانتی ہے ہم کو
Oh waves of the Tigris! You also recognize us;
اب تک ہے تیرا دریا افسانہ خواں ہمارا
Your river still relates our story.
اے ارضِ پاک! تیری حُرمت پہ کٹ مرے ہم
Oh land of purity! We fell and died for your honour;
ہے خُوں تری رگوں میں اب تک رواں ہمارا
Our blood still courses through your veins.
سالارِ کارواں ہے میرِ حجازؐ اپنا
The Lord of Hijaz is the leader of our community;
اس نام سے ہے باقی آرامِ جاں ہمارا
From this name comes the peace of our soul.
اقبالؔ کا ترانہ بانگِ درا ہے گویا
Iqbal’s song is like the bell of a caravan;
ہوتا ہے جادہ پیما پھر کارواں ہمارا
Once more our caravan measures the road.
RumiBalkhi.Com
:: ADVERTISEMENTS ::
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.