تجھے اب تلک مری بے بسی – زین شکیل

تجھے اب تلک مری بے بسی کا ملال ہے
تجھے سچ کہوں مجھے اب بھی تیری ہی فکر ہے
تری خامشی مری الجھنوں کو بڑھا گئی
سو کبھی سکوت بھی توڑ دے کوئی بات کر
مجھے رات سے کسی اور طرح کا عشق ہے
مجھے دن میں رات کی عادتیں ہیں پڑی ہوئیں
مجھے مل بھی جاتا تو پھر زوال ہی جھیلتا
چلو اک طرح سے یہ ٹھیک ہے وہ ملا نہیں
مِرے ساتھ مقتلِ غم میں جانے کی ضد نہ کر
مِری بات سُن تجھے کون دے گا تسلیاں؟
ذرا ٹھیک سے تو سنا نہیں پہ یقین ہے
کہ تمہارے بارے میں بَک رہی تھی ہوا کہیں
زین شکیل
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.