بسم اللہ الرحمن الرحیم – علامه محمد اقبال

بسم اللہ الرحمن الرحیم
In the name of Allah, the Most Gracious and the Most Mercifulدُعا
A Prayer(مسجدِ قُرطُبہ میں لِکھّی گئی)
(Written in the Mosque of Cordoba)
ہے یہی میری نماز، ہے یہی میرا وضو
My invocations are sincere and true,
میری نواؤں میں ہے میرے جگر کا لہُو
They form my ablutions and prayers due.
صُحبتِ اہلِ صفا، نُور و حضور و سُرور
One glance of guide such joy and warmth can grant,
سر خوش و پُرسوز ہے لالہ لبِ آبُجو
On marge of stream can bloom the tulip plant.
راہِ محبّت میں ہے کون کسی کا رفیق
One has no comrade on Love’s journey long
ساتھ مرے رہ گئی ایک مری آرزو
Save fervent zeal, and passion great and strong.
میرا نشیمن نہیں درگہِ میر و وزیر
O God, at gates of rich I do not bow,
میرا نشیمن بھی تُو، شاخِ نشیمن بھی تُو
You are my dwelling place and nesting bough.
تجھ سے گریباں مرا مطلعِ صُبحِ نشور
Your Love in my breast burns like Doomsday morn,
تجھ سے مرے سینے میں آتشِ ’اللہ‌ھوٗ‘
The cry, He is God, on my lips is born.
تجھ سے مری زندگی سوز و تب و درد و داغ
Your Love, makes me God, fret with pain and pine,
تُو ہی مری آرزو، تُو ہی مری جُستجو
You are the only quest and aim of mine.
پاس اگر تُو نہیں، شہر ہے ویراں تمام
Without You town appears devoid of life,
تُو ہے تو آباد ہیں اُجڑے ہُوئے کاخ و کُو
When present, same town appears astir with strife.
پھر وہ شرابِ کُہن مجھ کو عطا کر کہ مَیں
For wine of gnosis I request and ask,
ڈھُونڈ رہا ہوں اُسے توڑ کے جام و سُبو
To get some dregs I break the cup and glass.
چشمِ کرم ساقیا! دیر سے ہیں منتظر
The mystics’ gourds and commons’ pitchers wait
جلوَتیوں کے سُبو، خلوَتیوں کے کُدو
For liquor of your Grace and Bounty great.
تیری خدائی سے ہے میرے جُنوں کو گِلہ
Against Your godhead I have a genuine plaint,
اپنے لیے لامکاں، میرے لیے چار سُو!
For You the Spaceless, while for me restraint.
فلسفہ و شعر کی اور حقیقت ہے کیا
Both verse and wisdom indicate the way
حرفِ تمنّا، جسے کہہ نہ سکیں رُو بُرو
Which longing face to face can not convey.بسم اللہ الرحمن الرحیم
In the name of Allah, the Most Gracious and the Most Mercifulدُعا
A Prayer(مسجدِ قُرطُبہ میں لِکھّی گئی)
(Written in the Mosque of Cordoba)
ہے یہی میری نماز، ہے یہی میرا وضو
My invocations are sincere and true,
میری نواؤں میں ہے میرے جگر کا لہُو
They form my ablutions and prayers due.
صُحبتِ اہلِ صفا، نُور و حضور و سُرور
One glance of guide such joy and warmth can grant,
سر خوش و پُرسوز ہے لالہ لبِ آبُجو
On marge of stream can bloom the tulip plant.
راہِ محبّت میں ہے کون کسی کا رفیق
One has no comrade on Love’s journey long
ساتھ مرے رہ گئی ایک مری آرزو
Save fervent zeal, and passion great and strong.
میرا نشیمن نہیں درگہِ میر و وزیر
O God, at gates of rich I do not bow,
میرا نشیمن بھی تُو، شاخِ نشیمن بھی تُو
You are my dwelling place and nesting bough.
تجھ سے گریباں مرا مطلعِ صُبحِ نشور
Your Love in my breast burns like Doomsday morn,
تجھ سے مرے سینے میں آتشِ ’اللہ‌ھوٗ‘
The cry, He is God, on my lips is born.
تجھ سے مری زندگی سوز و تب و درد و داغ
Your Love, makes me God, fret with pain and pine,
تُو ہی مری آرزو، تُو ہی مری جُستجو
You are the only quest and aim of mine.
پاس اگر تُو نہیں، شہر ہے ویراں تمام
Without You town appears devoid of life,
تُو ہے تو آباد ہیں اُجڑے ہُوئے کاخ و کُو
When present, same town appears astir with strife.
پھر وہ شرابِ کُہن مجھ کو عطا کر کہ مَیں
For wine of gnosis I request and ask,
ڈھُونڈ رہا ہوں اُسے توڑ کے جام و سُبو
To get some dregs I break the cup and glass.
چشمِ کرم ساقیا! دیر سے ہیں منتظر
The mystics’ gourds and commons’ pitchers wait
جلوَتیوں کے سُبو، خلوَتیوں کے کُدو
For liquor of your Grace and Bounty great.
تیری خدائی سے ہے میرے جُنوں کو گِلہ
Against Your godhead I have a genuine plaint,
اپنے لیے لامکاں، میرے لیے چار سُو!
For You the Spaceless, while for me restraint.
فلسفہ و شعر کی اور حقیقت ہے کیا
Both verse and wisdom indicate the way
حرفِ تمنّا، جسے کہہ نہ سکیں رُو بُرو
Which longing face to face can not convey.
RumiBalkhi.Com
:: ADVERTISEMENTS ::
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.