ایک گائے اور بکری – علامه محمد اقبال

ایک گائے اور بکری
A Cow and a Goat
اک چراگہ ہری بھری تھی کہیں
There was a verdant pasture somewhere
تھی سراپا بہار جس کی زمیں
Whose land was the very picture of beauty
کیا سماں اُس بہار کا ہو بیاں
How can the beauty of that elegance be described
ہر طرف صاف ندّیاں تھیں رواں
Brooks of sparkling water were running on every side
تھے اناروں کے بے شمار درخت
Many were the pomegranate trees
اور پیپل کے سایہ دار درخت
And so were the shady pipal trees
ٹھنڈی ٹھنڈی ہوائیں آتی تھیں
Cool breeze flowed everywhere
طائروں کی صدائیں آتی تھیں
Birds were singing everywhere
کسی ندّی کے پاس اک بکری
A goat arrived at a brook’s bank from somewhere
چَرتے چَرتے کہیں سے آ نکلی
It came browsing from somewhere in the nearby land
جب ٹھہر کر اِدھر اُدھر دیکھا
As she stopped and looked around
پاس اک گائے کو کھڑے پایا
She noticed a cow standing by
پہلے جھُک کر اُسے سلام کیا
The goat first presented her compliments to the cow
پھر سلیقے سے یوں کلام کیا
Then respectfully started this conversation
کیوں بڑی بی! مزاج کیسے ہیں
“How are you! Madam Cow”?
گائے بولی کہ خیر اچھّے ہیں
The cow replied, “Not too well
کٹ رہی ہے بُری بھلی اپنی
“My life is a mere existence
ہے مصیبت میں زندگی اپنی
My life is a complete agony
جان پر آ بنی ہے، کیا کہیے
My life is in danger, what can I say?
اپنی قِسمت بُری ہے، کیا کہیے
My luck is bad, what can I say?
دیکھتی ہوں خدا کی شان کو مَیں
I am surprised at the state of affairs
رو رہی ہوں بُروں کی جان کو مَیں
I am cursing the evil people
زور چلتا نہیں غریبوں کا
The poor ones like us are powerless
پیش آیا لِکھا نصیبوں کا
Misfortunes surround the ones like us
آدمی سے کوئی بھلا نہ کرے
None should nicely deal with Man
اس سے پالا پڑے، خدا نہ کرے
May God protect us from Man!
دُودھ کم دوں تو بڑبڑاتا ہے
He murmurs if my milk declines
ہوں جو دُبلی تو بیچ کھاتا ہے
He sells me if my weight declines
ہتھکنڈوں سے غلام کرتا ہے
He subdues us with cleverness!
کِن فریبوں سے رام کرتا ہے
Alluring, he always subjugates us!
اس کے بچوں کو پالتی ہوں مَیں
I nurse his children with milk
دُودھ سے جان ڈالتی ہوں مَیں
I give them new life with milk
بدلے نیکی کے یہ بُرائی ہے
My goodness is repaid with evil
میرے اللہ! تری دُہائی ہے
My prayer to God is for mercy!”
سُن کے بکری یہ ماجرا سارا
Having heard the cow’s story like this
بولی، ایسا گِلہ نہیں اچھّا
The goat replied, “This complaint is unjust
بات سچّی ہے بے مزا لگتی
Though truth is always bitter
مَیں کہوں گی مگر خدا لگتی
I shall speak what is fair
یہ چراگہ، یہ ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا
This pasture, and this cool breeze
یہ ہری گھاس اور یہ سایا
This green grass and this shade
ایسی خوشیاں ہمیں نصیب کہاں
Such comforts, were beyond our lot!
یہ کہاں، بے زباں غریب کہاں!
They were a far cry for us speechless poor!
یہ مزے آدمی کے دَم سے ہیں
We owe these pleasures to Man
لُطف سارے اسی کے دَم سے ہیں
We owe all our happiness to Man
اس کے دَم سے ہے اپنی آبادی
We derive all our prosperity from him
قید ہم کو بھلی کہ آزادی!
What is better for us, freedom or bondage to him?
سَو طرح کا بَنوں میں ہے کھٹکا
Hundreds of dangers lurk in the wilderness
واں کی گُزران سے بچائے خُدا
May God protect us from the wilderness!
ہم پہ احسان ہے بڑا اس کا
We are heavily indebted to him
ہم کو زیبا نہیں گِلا اس کا
Unjust is our complaint against him
قدر آرام کی اگر سمجھو
If you appreciate the life’s comforts
آدمی کا کبھی گِلہ نہ کرو
You would never complain against Man”
گائے سُن کر یہ بات شرمائی
Hearing all this the cow felt embarrassed
آدمی کے گِلے سے پچھتائی
She was sorry for complaining against Man
دل میں پرکھا بھلا بُرا اُس نے
She mused over the good and the bad
اور کچھ سوچ کر کہا اُس نے
And thoughtfully she said this
یوں تو چھوٹی ہے ذات بکری کی
“Small though is the body of the goat
دل کو لگتی ہے بات بکری کی
Convincing is the advice of the goat!”ایک گائے اور بکری
A Cow and a Goat(ماخوذ)
(Adopted)بچوں کے لیے
for Children
اک چراگہ ہری بھری تھی کہیں
There was a verdant pasture somewhere
تھی سراپا بہار جس کی زمیں
Whose land was the very picture of beauty
کیا سماں اُس بہار کا ہو بیاں
How can the beauty of that elegance be described
ہر طرف صاف ندّیاں تھیں رواں
Brooks of sparkling water were running on every side
تھے اناروں کے بے شمار درخت
Many were the pomegranate trees
اور پیپل کے سایہ دار درخت
And so were the shady pipal trees
ٹھنڈی ٹھنڈی ہوائیں آتی تھیں
Cool breeze flowed everywhere
طائروں کی صدائیں آتی تھیں
Birds were singing everywhere
کسی ندّی کے پاس اک بکری
A goat arrived at a brook’s bank from somewhere
چَرتے چَرتے کہیں سے آ نکلی
It came browsing from somewhere in the nearby land
جب ٹھہر کر اِدھر اُدھر دیکھا
As she stopped and looked around
پاس اک گائے کو کھڑے پایا
She noticed a cow standing by
پہلے جھُک کر اُسے سلام کیا
The goat first presented her compliments to the cow
پھر سلیقے سے یوں کلام کیا
Then respectfully started this conversation
کیوں بڑی بی! مزاج کیسے ہیں
“How are you! Madam Cow”?
گائے بولی کہ خیر اچھّے ہیں
The cow replied, “Not too well
کٹ رہی ہے بُری بھلی اپنی
“My life is a mere existence
ہے مصیبت میں زندگی اپنی
My life is a complete agony
جان پر آ بنی ہے، کیا کہیے
My life is in danger, what can I say?
اپنی قِسمت بُری ہے، کیا کہیے
My luck is bad, what can I say?
دیکھتی ہوں خدا کی شان کو مَیں
I am surprised at the state of affairs
رو رہی ہوں بُروں کی جان کو مَیں
I am cursing the evil people
زور چلتا نہیں غریبوں کا
The poor ones like us are powerless
پیش آیا لِکھا نصیبوں کا
Misfortunes surround the ones like us
آدمی سے کوئی بھلا نہ کرے
None should nicely deal with Man
اس سے پالا پڑے، خدا نہ کرے
May God protect us from Man!
دُودھ کم دوں تو بڑبڑاتا ہے
He murmurs if my milk declines
ہوں جو دُبلی تو بیچ کھاتا ہے
He sells me if my weight declines
ہتھکنڈوں سے غلام کرتا ہے
He subdues us with cleverness!
کِن فریبوں سے رام کرتا ہے
Alluring, he always subjugates us!
اس کے بچوں کو پالتی ہوں مَیں
I nurse his children with milk
دُودھ سے جان ڈالتی ہوں مَیں
I give them new life with milk
بدلے نیکی کے یہ بُرائی ہے
My goodness is repaid with evil
میرے اللہ! تری دُہائی ہے
My prayer to God is for mercy!”
سُن کے بکری یہ ماجرا سارا
Having heard the cow’s story like this
بولی، ایسا گِلہ نہیں اچھّا
The goat replied, “This complaint is unjust
بات سچّی ہے بے مزا لگتی
Though truth is always bitter
مَیں کہوں گی مگر خدا لگتی
I shall speak what is fair
یہ چراگہ، یہ ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا
This pasture, and this cool breeze
یہ ہری گھاس اور یہ سایا
This green grass and this shade
ایسی خوشیاں ہمیں نصیب کہاں
Such comforts, were beyond our lot!
یہ کہاں، بے زباں غریب کہاں!
They were a far cry for us speechless poor!
یہ مزے آدمی کے دَم سے ہیں
We owe these pleasures to Man
لُطف سارے اسی کے دَم سے ہیں
We owe all our happiness to Man
اس کے دَم سے ہے اپنی آبادی
We derive all our prosperity from him
قید ہم کو بھلی کہ آزادی!
What is better for us, freedom or bondage to him?
سَو طرح کا بَنوں میں ہے کھٹکا
Hundreds of dangers lurk in the wilderness
واں کی گُزران سے بچائے خُدا
May God protect us from the wilderness!
ہم پہ احسان ہے بڑا اس کا
We are heavily indebted to him
ہم کو زیبا نہیں گِلا اس کا
Unjust is our complaint against him
قدر آرام کی اگر سمجھو
If you appreciate the life’s comforts
آدمی کا کبھی گِلہ نہ کرو
You would never complain against Man”
گائے سُن کر یہ بات شرمائی
Hearing all this the cow felt embarrassed
آدمی کے گِلے سے پچھتائی
She was sorry for complaining against Man
دل میں پرکھا بھلا بُرا اُس نے
She mused over the good and the bad
اور کچھ سوچ کر کہا اُس نے
And thoughtfully she said this
یوں تو چھوٹی ہے ذات بکری کی
“Small though is the body of the goat
دل کو لگتی ہے بات بکری کی
Convincing is the advice of the goat!”
:: ADVERTISEMENTS ::
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.