ایک نوجوان کے نام – علامه محمد اقبال

ایک نوجوان کے نام
To a Young Man
ترے صوفے ہیں افرنگی، ترے قالیں ہیں ایرانیِ
Thy sofas are from Europe, thy carpets from Iran;
لہُو مجھ کو رُلاتی ہے جوانوں کی تن آسانی
This slothful opulence evokes my sigh of pity.
امارت کیا، شکوہِ خسروی بھی ہو تو کیا حاصل
In vain if thou possessest Khusroe’s imperial pomp,
نہ زورِ حیدری تجھ میں، نہ استغنائے سلمانی
If thou dost not possess prowess or contentment.
نہ ڈھُونڈ اس چیز کو تہذیبِ حاضر کی تجلّی میں
Seek not thy joy or greatness in the glitter of Western life,
کہ پایا مَیں نے استغنا میں معراجِ مسلمانی
For in contentment lies a Muslim’s joy and greatness.
عقابی رُوح جب بیدار ہوتی ہے جوانوں میں
When an eagle’s spirit awakens in youthful hearts,
نظر آتی ہے اس کو اپنی منزل آسمانوں میں
It sees its luminous goal beyond the starry heavens.
نہ ہو نومید، نومیدی زوالِ علم و عرفاں ہے
Despair not, for despair is the decline of knowledge and gnosis:
اُمیدِ مردِ مومن ہے خدا کے راز دانوں میں
The Hope of a Believer is among the confidants of God.
نہیں تیرا نشیمن قصرِ سُلطانی کے گُنبد پر
Thy abode is not on the dome of a royal palace;
تو شاہیں ہے، بسیرا کر پہاڑوں کی چٹانوں میں
Thou art an eagle and shouldst live on the rocks of mountains.ایک نوجوان کے نام
To a Young Man
ترے صوفے ہیں افرنگی، ترے قالیں ہیں ایرانیِ
Thy sofas are from Europe, thy carpets from Iran;
لہُو مجھ کو رُلاتی ہے جوانوں کی تن آسانی
This slothful opulence evokes my sigh of pity.
امارت کیا، شکوہِ خسروی بھی ہو تو کیا حاصل
In vain if thou possessest Khusroe’s imperial pomp,
نہ زورِ حیدری تجھ میں، نہ استغنائے سلمانی
If thou dost not possess prowess or contentment.
نہ ڈھُونڈ اس چیز کو تہذیبِ حاضر کی تجلّی میں
Seek not thy joy or greatness in the glitter of Western life,
کہ پایا مَیں نے استغنا میں معراجِ مسلمانی
For in contentment lies a Muslim’s joy and greatness.
عقابی رُوح جب بیدار ہوتی ہے جوانوں میں
When an eagle’s spirit awakens in youthful hearts,
نظر آتی ہے اس کو اپنی منزل آسمانوں میں
It sees its luminous goal beyond the starry heavens.
نہ ہو نومید، نومیدی زوالِ علم و عرفاں ہے
Despair not, for despair is the decline of knowledge and gnosis:
اُمیدِ مردِ مومن ہے خدا کے راز دانوں میں
The Hope of a Believer is among the confidants of God.
نہیں تیرا نشیمن قصرِ سُلطانی کے گُنبد پر
Thy abode is not on the dome of a royal palace;
تو شاہیں ہے، بسیرا کر پہاڑوں کی چٹانوں میں
Thou art an eagle and shouldst live on the rocks of mountains.
RumiBalkhi.Com
:: ADVERTISEMENTS ::
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.