اکثر ایسا ہو جاتا – زین شکیل

اکثر ایسا ہو جاتا ہے
آنسو راہ بھٹک جاتے ہیں
آنکھیں بنجر ہو جاتی ہیں
سپنے مردہ ہو جاتے ہیں
نیندیں ماتم کر لیتی ہیں
اکثر ایسا ہو جاتا ہے
بھولی بسری یادیں آ کر
دل میں درد جگا دیتی ہیں
روح کو زخم لگا دیتی ہیں
بے چینی کے اس عالم میں
ساری رات گزر جاتی ہے
آنکھیں سرخ رہا کرتی ہیں
سر میں درد رہا کرتا ہے
اکثر ایسا ہو جاتا ہے
زین شکیل
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.