آزاد غزلتیرے نام کا – زین شکیل

آزاد غزل
تیرے نام کا ورد پِیا
ہونٹوں کی مجبوری ہے
میرے وقت کی دلہن نے
چپ کا زیور پہنا ہے
ہجر زدہ دیوانوں کو
موسم راس نہیں آتے
میں اپنی تنہائی سے
سب کچھ ٹھیک نہیں کہتا
آپ کبھی خاموشی سے
باتیں کر کے دیکھو نا!
میری آنکھ میں ساون کے
بادل چھائے رہتے ہیں
خواب خفا ہو جاتے ہیں
محرومی رہ جاتی ہے
بے ہوشی کے عالم میں
ہوش محبت کیا کرتے
زین شکیل
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.