آزاد غزلاُس نے اتنا – زین شکیل

آزاد غزل
اُس نے اتنا تو کر لیا ہوتا
بات بڑھنے سے روک لی ہوتی
تیری زلفیں نصیب تھیں ورنہ
میں کہیں اور الجھ گیا ہوتا
تجھ سے بچھڑے تو ہو گئی فرصت
وقت نے کتنی جلد بازی کی
میں، مرے زخم، میری تنہائی
تجھ سے کس نے کہا ادھورا ہوں
آئینے سے تمہارے بارے میں
بات کرنا عجیب لگتا ہے
بات بے بات چپ سا ہو جانا
روٹھنا ہے تو روٹھ جاؤ ناں
ہنس کے راتیں گزار دیتا ہوں
میرا رو کر بھی جی نہیں بھرتا
زینؔ میں اس کا نام لینے میں
آج بھی احتیاط کرتا ہوں
زین شکیل
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.