اس نے باتوں باتوں – زین شکیل

اس نے باتوں باتوں میں
تنہائی سے باتیں کیں
سارے آنسو رو دینا
ساون کی مجبوری تھی
ایک سمندر گہرا سا
آنکھوں میں بس جاتا ہے
یاد قضا ہو جائے تو
دکھ واجب ہو جاتے ہیں
یعنی میرے بارے میں
لوگ تمہیں بتلاتے ہیں
میں بھی تیرے بارے میں
لوگوں سے سن لیتا ہوں
زین شکیل
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.