اس طرح تیرے خیالوں میں – زین شکیل

اس طرح تیرے خیالوں میں رہا کرنا ہے
ہاتھ میرا ترے بالوں میں رہا کرنا ہے
اب کوئی داد و ستد بھی تو نہیں ہے ہم میں
تم نے کب تک یوں سوالوں میں رہا کرنا ہے
آبلہ پائی بھی منزل پہ ہی کام آئے گی
کوئی قصہ مرے چھالوں میں رہا کرنا ہے
تجھ کو خوشیوں نے بھی اک روز بھلا دینا ہے
میں نے ہر غم کے حوالوں میں رہا کرنا ہے
تو نے اب بھی مرے دن مجھ سے چرا لینے ہیں
میں نے اب بھی تری چالوں میں رہا کرنا ہے
زین شکیل
Share:

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.